• صارفین کی تعداد :
  • 5448
  • 3/5/2014
  • تاريخ :

عظمت صديقہ طاہرہ زينب کبريٰ ( حصّہ سوّم )

حضرت زینب کبری (س) نے حضرت امام سجاد (ع) کی حفاظت کی

زينب نے جب اپنے بھائي کو صحرائے کربلا ميں تڑپتا ديکھا تو کہا ہائے ميرے نانا محمد ہائے ميرے بابا علي(ع)ہائے ميرے چچا جعفر ہائے حمزہ سيد الشہداء ديکھو ميراغريب حسين(ع) صحرائے کربلا پر خون ميں لت پت پڑا هے کاش آج آسمان گر جاتا يہ منظر زينب نہ ديکھتي ليکن ايک بار راوي کہتا هے کہ زينب نے کليجے کو سنبھالا اور اس کے بعد بھائي کا کٹا هوا گلا چوم کر صبرو رضا کا دامن تھامے هو ئے خيام کي طرف چليں زينب نے اتني عظيم مصيبت پر صبرو استقامت اختيار کرکے عظمت انسانيت کو معراج بخشي اور پيام حسيني کي ہدايت نواز تاثير سے دنيا ئے بشريت کو حيات جاويداں کا راستہ دکھايا يهي وجہ هے کہ آج تک ہر صاحب بصيرت انسان زينب کے جذبہ استقامت کے سامنے سر ے ادب خم کئے هوئے هے کربلا کي شير دل خاتون زينب کبريٰ نے مصيبت دائم کي گھڑي ميں صبرو تحمل کے ايسے نمونے پيش کئے جو آج تک ہر اہل درد کے لئے مثال بن چکے هيں حضرت علي عليہ السلام کي باعظمت بيٹي نے اپني ہر مصيبت ميں رضائے الٰهي کو مد ے نظر رکھا اور اپنے صبرکا اجر بار گاہ خدا سے طلب کيا يهي وجہ هے کہ بھائي کي لاش پر آ کر خد ا کے حضور ميں قرباني آل محمد عليہمالسلام کي قبوليت کي دعا کرنا زينب کے مقام تقويٰ کا بے مثال نمو نہ سمجھا جاتا هے اور حقيقت بھي يهي هے کہ اتنے عظيم بھائي کي لاش پر بہنيں عموماً اپنے حواس کھو بيٹھتي هيں ليکن زينب کے اخلاص صبر کي عظمتيں نماياں هوئيں اور غم و اندو ہ کي اس حالت ميں رضائے الٰهي کے حصول کي دعا ئيں مانگتي رهيں عقيلہ بني ہاشم زينب کبريٰ نے کربلا کي غم واندو ہ فضاء ميں عظمت و کردار کے جو نمونے پيش کئے وہ نہ فقط يہ کہ پوري کائنات کے لئے معيار عمل بنے بلکہ شہادت امام کے عظيم مقصد کي تکميل بھي هوئي اور رہتي دنيا تک فطرت کي اعليٰ اقدار کے تحفظ کي ضمانت بھي فراہم هو گئي حق وباطل کي پہچان کے راستے واضح هوگئے اور شہدائے کربلا کي عظيم قربانيوں کے پاکيزہ اسرار بھي نماياں هو گئے-

سيدہ زينب نے اپنے پر جوش خطاب ميں اموي خاندان کي بربريت اور ارباب اقتدار کي طاغوتيت کو بے نقاب کرديا اور لوگوں کو ان کے جرائم کے خلاف قيام کرنے پر آمادہ کيا -

اے زينب کبريٰ تيرے خطبوں کے ذريعہ

شبير کا پيغام زمانہ نے سنا هے

ديتے هيں جو ہر روز مسلمان آذانيں

در اصل تيرے درد بھرے دل کي صدا هے

شاعر نے زينب کے خطبو کي حقيقت پر يو ں روشني ڈالي هے کہ:

ايمان کي منزل کف پاچوم رهي هے

ملت کي جبيں نقش وفاچوم رهي هے

اے بنت علي عارفہ لہجہ قرآں

خطبوں کو تيرے وحي خدا چوم رهي هے  ( جاري ہے )


متعلقہ تحریریں: