• صارفین کی تعداد :
  • 5644
  • 3/4/2014
  • تاريخ :

حضرت زينب س کي عظيم شخصيت

امام سجاد (ع) کو حضرت زینب کبری (س) کی  تسلی

زينب اس باعظمت خاتون کا نام هے جن کا طفوليت فضيلتوں کے ايسے پاکيزہ ماحول ميں گذرا هے جو اپني تمام جہتوں سے کمالات ميں گھرا هوا تھا جس کي طفوليت پر نبوت و امامت کاسايہ ہر وقت موجود تھا اور اس پر ہر سمت نوراني اقدار محيط تھيں رسول اسلام (ص)نے انھيں اپني روحاني عنايتوں سے نوازا اور اپنے اخلاق کريمہ سے زينب کي فکري تربيت کي بنياديں مضبوط و مستحکم کيں نبوت کے بعد امامت کے وارث مولائے کائنات نے انھيں علم و حکمت کي غذا سے سير کيا عصمت کبريٰ فاطمہ زہرا نے انھيں فضيلتوں اور کمالات کي ايسي گھٹي پلائي جس سے زينب کي تطهير و تزکيہ نفس کا سامان فراہم هوگيا اسي کے ساتھ ساتھ حسنين شريفين نے انھيں بچپن هي سے اپني شفقت آميز مرافقت کا شرف بخشا يہ تھي زينب کے پاکيزہ تربيت کي وہ پختا بنياديں جن سے اس مخدومہ اعليٰ کا عہد طفوليت تکامل انساني کي ايک مثال بن گيا. صلوات [3]

وہ زينب جو قرة عين المرتضيٰ جو علي مرتضيٰ کي آنکھوں کي ٹھنڈک هو جو علي مرتضيٰ کي آنکھوں کانور هو وہ زينب جو علي مرتضيٰ کي قربانيوں کو منزل تکميل تک پہنچانے والي هو وہ زينب جو”‌عقيلة القريش“هو جو قريش کي عقيلہ و فاضلہ هو وہ زينب جو امين اللہ هو اللہ کي امانتدار هو گھر لٹ جائے سر سے چادر چھن جائے بے گھر هو جائے ليکن اللہ کي امانت اسلام پر حرف نہ آئے، قرآن پر حرف نہ آئے،انسانيت بچ جائے، خدا کي تسبيح و تہليل کي امانتداري ميں خيانتداري نہ پيدا هو، وہ هے زينب جو ”‌آية من آيات اللہ“آيات خدا ميں ہم اہلبيت خدا هيں ہم اللہ کي نشانيوں ميں سے ہم اللہ کي ايک نشاني هيں وہ زينب جومظلومہ وحيدہ بے مثل مظلومہ جس کي وضاحت آپ کے مصائب ميں هوگي جو مظلوموں ميں سے ايک مظلومہ ”‌مليکة الدنيا“وہ زينب جو جہان کي ملکہ هے جو ہماري عبادتوں کي ضامن هے جو ہماري زينب اس بلند پائے کي بي بي کا نام جس کا احترام وہ کرتا جس کا احترام انبياء ما سبق نے کيا هے جس کو جبرائيل نے لورياں سنائي هيں کيو نکہ يہ بي بي زينب ثاني زہرا سلام اللہ عليہا هے اور زہرا کا حترام وہ کرتا تھا جس کا احترام ايک لاکھ چو بيس ہزار انبياء کرتے تھے ميں جملہ حوالہ کررہا هو ں اگر بيدار هو کر آپ نے غور کيا تو بہت محظوظ هو نگے جس رحمة للعالمين کے احترام ميں ايک لاکھ انبياء کھڑے هوتے هو ئے نظر آئے عيسيٰ نے انجيل ميں نام محمد ديکھا احترام رحمة للعالمين ميں کھڑے هوگئے موسيٰ نے توريت ميں ديکھا ايک بار اس نبي کے اوپر درود پڑھنے لگے تو مددکے لئے پکارا احترام محمد ميں سفينہ ساحل پہ جا کے کھڑاهوگيا (يعني رک گيا )عزيزوں غور نهيں کيا جس رحمت للعالمين کے احترام ميں ايک کم ايک لا کھ چوبيس ہزار انبيا ء کا، کارواں کھڑا هو جائے تووہ رحمت للعالمين بھي تو کسي کے احترا م ميں کھڑا هوتا هو گا اب تاريخ بتاتي هے کہ جب بھي فاطمہ سلام اللہ عليہا محمد (ص) کے پاس آئيں محمد کھڑے هو گئے تو اب مجھے کہنے ديجيئے کہ يہ کيسے هو سکتا هے کہ استاد کھڑا هو اور شاگرد بيٹھا رهے سردار کھڑا هو سپاهي بيٹھے رهيں تو اب بات واضح هو گئي کہ محمد(ص)اکيلے نهيں فاطمہ کے احترام ميں کھڑے هوئے بلکہ يوں کہہ دوں ايک لاکھ چوبيس ہزار انبياء کا کارواں احترام فاطمة الزہرا سلام اللہ عليہاميں کھڑا هوااب زينب هيں ثاني زہرا اگران کے تابوت و ان کے حرم کے سامنے احترام ميں اگر شيعہ کھڑا هو جائے تو سمجھ لنيا کہ وہ سنت پيغمبر ادا کررہا هے -صلوات ( جاري ہے )

 


متعلقہ تحریریں: