• صارفین کی تعداد :
  • 2114
  • 2/9/2014
  • تاريخ :

اردو ادب ميں مرثيہ نگاري  ( حصّہ يازدھم  )

زیارت کا عظیم مقام

اب آصف شاہي حکومت قائم ہوئي اس کي بنياد رکھنے والا نواب قمرالدين خان‘ نظام الملک تھا جو سادات بارہہ سے دشمني ميں خصوصاً بدنام تھا- دوسرے اس کا ذوق دہلي کے مغل امرا سے مختلف نہيں تھا نظام الملک فارسي دان اور فارسي خوان تھا ‘ ناصر جنگ‘ صلابت خان --- نے البتہ اردو کي سرپرستي کي اردو کي سرپرستي غزل کے ساتھ مرثيہ کي سرپرستي سے منسلک تھي آصف جاہ ثاني نے سرکاري زبان فارسي رکھي مگر دکھني عوام کي ترجيہات کے حوالے سے اردو زبان سے منہ موڑنا بھي ممکن نہيں تھا-

اردو بدستور بولي اور لکھي جاتي رہي ---- مرثيہ گو شعرا ميں رضي‘ قادر‘ روحي ‘ چندو‘ لال مہاراجہ‘ پيش کار کے دربار سے وابستہ مشہور مراثي نگار تھے دوسرے مرثيہ گو شعرا اس دور ميں فدوي‘ کمتر‘ ماکھن‘ عقلان تھے-

آصف جاہ اول کے زمانہ سے شعرا شمالي ہندوستان سے دکن آنے جانے لگے ارسطو جاہ کے زمانہ ميں سکندر اور بيان آئے چند ولال کے زمانہ ميں مشتاق -- آئے‘ سالار جنگ کے زمانہ ميں لکھنو سے مير ذکي‘ شاگرد ميرزا دبير آئے پھر‘ انيس اعلي اللہ مقامہ دکن آئے- اس دور ميں ناجي‘ اشعر‘ دانش‘ مرثيہ گوئي ميں زبان‘ محاورہ‘ روزمرہ کا خيال رکھتے تھے- مير انس‘ مير نفيس‘ مير سليس‘ عارف ‘ رشيد‘ اوج‘ حيدر آباد آتے رہے مقامي شعرا ميں عابد شاگرد انيس ہوئے‘ سرفراز‘ مہدي‘ سفير‘ الم‘ مرزا علي نے مرثيہ گوئي ميں نام پايا-

سرفراز، مير انيس کے شاگرد تھے واقعات نگاري ان کا ميدان تھا‘ مير مہدي منظر نگاري اچھي کرتے تھے‘ الم بسيار گوتھے‘ مراثي ميں رزم‘ بين و بکا سے غرض رکھتے تھے سفير کے ديوان ميں نعت سلام اور مراثي موجود ہيں شہر کے صاحب ! زادے نے بچپن سے مرثيہ گوئي کا آغاز کيا تھا-

حيدر آباد سے عزاداري‘ ميسور‘ مدراس‘ بمبئي‘ پہنچي حيدر علي اور ٹيپو سلطان کے دربار ميں ايراني امراء‘ وزرا تھے ان کي بڑي قدر داني کي جاتي تھي ميسور ميں عزاخانے تعمير ہوئے جہاں باقاعدگي سے مجالس عزا جنہيں ”‌روضہ خواني‘ کہتے تھے برپا ہوتي تھيں ”‌سبيل“ کے مراثي ميسور سے خلاص تھے‘ ايراني شہادت نامے پڑھتے تھے‘ تحفہ درود و سلام کے ساتھ حيدر علي اور ٹيپو سلطان دربارشاہي ميں صدر نشين ہوتے تھے- ( جاري ہے )


متعلقہ تحریریں:

زيارت کا عظيم مقام

کربلا کي بلندي