• صارفین کی تعداد :
  • 2057
  • 1/27/2014
  • تاريخ :

اردو ادب ميں مرثيہ نگاري  ( حصّہ ششم )

قمہ زنی 2

البتہ محقيقين جوش کے ساتھ نجم آفندي کي ادبي خدمات کے بھي معترف ہيں کہ انہوں نے بھي مرثيے کے روايتي خدوخال کو جديد اسلوب ميں ڈھالنے ميں اہم کردار ادا کيا ہے اور يوں تاريخ مرثيہ جب اپنے ارتقائي مراحل طے کرتے ہوئے پاکستان ميں داخل ہوتي ہے تو محقيقين سيد آل رضا کو پاکستان کا پہلا مرثيہ نگار قرار ديتے ہيں- البتہ اُن کے ہم عصر شعراء ياور عباس، نسيم امروہوي اور صبا اکبر آبادي نے بھي مرثيے کي دنيا ميں گرانقدر خدمات انجام دي ہيں- پاکستان کے سياسي و مذہبي حالات پاکستان ميں مرثيہ نگاري پر بھي مرتب ہوئے اور يوں پاکستان ميں فن مرثيہ نگاري کو خاطر خواہ فروغ حاصل نہ ہوسکا، ليکن اس کے باوجود پاکستان ميں کئي نامور مرثيہ نگار منظر عام پر آئے ہيں- جن ميں سے صرف چند ايک کے نام نذر قارئيں ہيں-

ڈاکٹر ہلال نقوي، سيد محسن نقوي، قيصر بارہوي، جوہر نظامي، اثر جليلي، ظہير الدين حيدر، اثر ترابي، ظفر شارب، مسعود رضا خاکي، علامہ طالب جوہري، مولانا افسر عباس زيدي (افسر دہلوي) وحيد الحسن ہاشمي وغيرہ- اگرچہ حکومت پاکستان نے کسي بھي دور ميں مرثيہ نگاري کي سرپرستي نہيں کي، ليکن اس کے باوجود حضرت امام حسين عليہ السلام سے منسوب ہونے کے باعث مرثيہ نگاري اور مرثيہ گوئي کو پاکستان کے عوامي حلقوں ميں مقبوليت ِ عام حاصل ہے- اسي ليئے پاکستان کے جتنے بھي نامور خطيب اور شعراء ہيں، اُن کے کلام ميں مرثيہ شناسي کي جھلک نماياں طور پر نظر آتي ہے-

بيسويويں صدي ميں اردو مرثيہ از ہلال نقوي

انيس شناسي از پروفيسر گوپي چند نارنگ

اردو ادب کي تاريخ ميں دکني مرثيہ کو نظر انداز نہيں کيا جا سکتا- اردو زبان جو صرف رابطہ کي زبان تھي دکھني غزل اور دکھني مرثيہ کے حوالے سے عوامي زبان ہو کر دکھني تہذيب و تمدن کي ترجمان بني‘يہ اعزاز کسي مقامي بولي يا فارسي زبان کو نہيں مل سکتا تھا کہ دکن کي گنگا مبني تہذيب و تمدن کي ترجمان بن سکے- ہندو مسلمان‘ امير و غريب سبھي دکھني مراثي کو‘ غزل کي طرح‘ بطور تہذيبي ورثہ قبول کرتے تھے غواصي کہتا ہے کہ عزاداري کي تقاريب ميں سب ہندو مسلمان برابر شريک ہوتے تھے- رسومات عزاداري ہندۆں خصوصاً مرہٹوں نے اپنا لي تھيں-

دکھني سلاطين اکثر و پيشتر مسلک‘ اثنا عشري رکھتے تھے- اہل ايران کے ليے سفر دکن آسان تھا - دابل اور گواکي بندرگاہوں پر سياح‘ اہل مصرفہ‘ صاحباں علم و دانش اترتے تھے- ايراني اہل علم و دانش اپني ذہانت خداداد تدابير‘ مصالح سلطنت ميں درک و ادراک کے باعث اعليٰ عہدوں پر فائز ہو جاتے تھے جس کي وجہ سے رفتہ رفتہ دربار سلاطين بہمني ميں شيعہ عمائدين کي بڑي تعداد جمع ہوتي گئي-

فضل اللہ انجو‘ وزير‘ صدر جہاں‘ وزارت امور مذہبي کا سربراہ سعد الدين تفتا زاني مشہور شيعي عالم کا شاگرد تھا وزير السلطنت محمود گاوان خواجہ جہاں ايراني نژاد تھا-

يوسف عادل شاہ بيچاپور کا خود مختار سلطان ہوا يہ محمور گاوان سے تربيت يافتہ تھا- بيچاپور کي جامع مسجد ميں نقيب خان نے نماز جمعہ کے لئے لوگوں کوبلايا اورشيعہ مسلمانوں کے طريقہ کے مطابق اذان کہلوائي-

شيعت سرکاري مذہب ہوا‘ ايران‘ عراق سے شيعہ مجتہدين کو طلب فرمايا گيا- اور درس و تدريس رعايا کا انتظام کيا گيا و جے نگر کے مہاراجہ نے تخت فيروز محمد شاہ بہمني کو بھيجا اس کي سرکاري تقريب جشن نوروز کے موقع پر ہوئي نوروز ايرانيوں کے لئے مبارک دن ہے اسي دن علي ابن ابي طالب عليہ السلام پر خلافت نصب ہوئي- ( جاري ہے )

 


متعلقہ تحریریں:

زيارت کا عظيم مقام

کربلا کي بلندي