• صارفین کی تعداد :
  • 2667
  • 1/13/2014
  • تاريخ :

 

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ چہاردھم )

شہادت امام رضا علیہ السلام کے بارے میں مختلف آراء ( حصّہ چہاردھم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء (حصّہ اوّل)

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ دوّم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ سوّم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ چہارم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ پنجم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ ششم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ ہفتم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ ہشتم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ نہم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ دہم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ يازدھم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ دوازدھم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ سيزدھم )

يا يوں کہئے کہ مأمون کي مبينہ شرافت کا يہ حال تھا کہ اس نے اہل بيت عليہم السلام کي خواتين تک کو قتل کروايا! جبکہ عرب عورت کا قتل اپنے لئے ننگ و عار سمجھتے ہيں-

ان کے علاوہ مأمون نے امام عليہ السلام کے ايک بھائي حمزہ بن موسي کو بھي قتل کروايا-

امام عليہ السلام کي شہادت کے سلسلے ميں آپ (ع) اور آپ (ع) کے آباء و اجداد عليہم صلوات اللہ و سلامہ، کي پيشين گوئياں

تاريخي تجزيئے سے ثابت ہوگيا کہ امام عليہ السلام کومأمون نے زہر کے ذريعے شہيد کرديا تھا؛ علاوہ ازيں امام عليہ السلام نے بارہا فرمايا تھا کہ آپ (ع) کو مسموم کرکے قتل کيا جائے گا- اور آپ (ع) کے اجداد طاہرين عليہم السلام نے بھي آپ (ع) کي ولادت سے برسوں قبل اس امر کي پيشين گوئي فرمائي تھي-

اس سلسلے ميں ذيل کي روايات خاص طور پر قابل ذکر ہيں:

1- رسول اللہ صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم سے پانچ حديثيں منقول ہيں جن ميں حضور (ص) نے پيشين گوئي فرمائي ہے کہ امام رضا عليہ السلام طوس ميں زہر کے ذريعے شہيد کئے جائيں گے-

2- امام رضا عليہ السلام نے متعدد بار فرمايا تھا کہ آپ طوس ميں ہي شہيد کئے جائيں گے اور قبر ہارون کے پہلو ميں دفنا ديئے جائيں گے-

شاعر اہل بيت (ع) دعبل خزاعي (رحمةاللہ عليہ) نے قصيدہ پرھا اور جب اس بيت پر پہنچے کہ:

اور قبر نفس زکيہ يعني امام موسي کاظم عليہ السلام بغداد ميں ہے اور اللہ تعالي نے امام (ع) کو اعلي ترين غرفوں (کمروں) اور اخروي مقامات ومنازل ميں جگہ دي ہے؛ تو امام رضا عليہ السلام نے ارشاد فرمايا: کيا آپ حاضر ہيں کہ ميں بھي آپ کے قصيدے ميں دو بندوں کا اضافہ کروں:

دعبل نے عرض کيا: کيوں نہيں يابن رسول اللہ (ص)!

چنانچہ امام (ع) نے فرمايا:

اور ايک اور قبر طوس ميں ہوگي جس نے کتنے مصائب برداشت کئے ہيں اور کتني صعوبتيں جھيلي ہيں اور اس کے باطن کو زہر جفا کے ذريعے جلا ديا گيا ہے جو روز محشر تک سوزاں ہے-

اور خداوند متعال اپني حجت يعني امام مہدي آخر الزمان عجَلَ اللہ فَرَجَہ الشريف کو بھيج دے گا اور وہ ہم اہل بيت (ع) کے ہر غم و حزن کو برطرف کرديں گے-  ( جاري ہے )


متعلقہ تحریریں:

امام رضا (ع) کي شخصيت سياسي

امام رضا (ع) کي شخصيت علمي