• صارفین کی تعداد :
  • 2965
  • 1/7/2014
  • تاريخ :

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ ہشتم )

شہادت امام رضا علیہ السلام کے بارے میں مختلف آراء ( حصّہ ہشتم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء (حصّہ اوّل)

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ دوّم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ سوّم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ چہارم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ پنجم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ ششم )

شہادت امام رضا عليہ السلام کے بارے ميں مختلف آراء ( حصّہ ہفتم )

احمد امين المصري کا بھي يہي خيال ہے اور اس کي دليل بھي يہ ہے کہ مأمون جب بغداد واپس آيا اس وقت بھي علويوں کي طرح سبز جامہ پہنتا تھا اور علماء کے ساتھ علي عليہ السلام کي برتري کے بارے ميں مباحثے کيا کرتا تھا- - (8) عجيب يہ ہے کہ اتنے مشہور لکھاريوں کي دليليں اتني سست کيوں ہيں؟

ڈاكٹر احمد محمود صبحى نے بھي گمان کيا ہے کہ امام رضا عليہ السلام کي مسموميت اہل تشيع کا بنا بنايا الزام ہے اور شيعہ مۆرخين اور تاريخي تجزيہ نگار مأمون کے نزديک امام عليہ السلام کے مقام و منزلت اور مأمون کے ہاتھوں آپ (ع) کي مسموميت کے درميان تضاد کا احساس کيوں نہيں کرتے! (9(

انھوں نےالبتہ اس حقيقت کي طرف اشارہ نہيں کيا ہے کہ جب منشي حضرات بادشاہوں کي تاريخ لکھتے تھے شيعہ علماء حالات پرپوري طرح نظر رکھے ہوئے تھے اور کبھي بھي حق کو باطل کے بطن ميں ہضم ہونے نہيں دے رہے تھے؛ بات صرف اتني سي ہے کہ اہل تشيع ظاہري نعروں اور وابستگي و محبت کے اظہار کو محبت اوروفاداري کي دليل نہيں سمجھتے-

جن لوگوں نے مأمون کو امام رضا عليہ السلام کو زہر خوراني کے الزام سے بري الذمہ قرار دينے کي کوشش کي ہے ان کي دليلوں کا خلاصہ کچھ يوں ہے:

1- مأمون اور امام عليہ السلام کے درميان وليعہدي کي ميثاق موجود تھي جس کے تحت امام کو مأمون کي موت کے بعد خلافت کا عہدہ سنبھالنا تھا-

2- مأمون امام عليہ السلام کي شان و منزلت کي تعظيم کرتا اور آپ (ع) کے شرف و علم و فضيلت اور آپ (ع) کي خانداني عظمت کا معترف تھا؛

3- مأمون نے اپني بيٹي کا نکاح امام عليہ السلام سے کرايا تھا اور يہ خود ان کے درميان محبت و اخلاص کے استحکام کا سبب تھا-

4- مأمون علماء کے سامنے علي عليہ السلام کي برتري پر استدلال کيا کرتا تھا-

5- امام (ع) کا وصال ہوا تو مأمون بہت بے چين اور مغموم ہوا اور اس نے کئي روز تک کھانے پينے اور ديگر دنياوي لذتوں سے اجتناب کيا-

6- مأمون نے امام عليہ السلام کو اپنے باپ کے پہلو ميں دفنا ديا اور آپ (ع) کي ميت پر خود ہي نماز پڑھي-

7- امام کا وصال ہوا تو وہ بدستور سبز لباس ميں ملبوس رہا حتي کہ بغداد ميں لوٹ کررہائش پذير ہوا-

8- علوي اس کے خلاف مختلف اقدامات کيا کرتے تھے مگر وہ علويوں پر مہربان تھا- 

9- مأمون کے اخلاق اورعادات و اطوار کے پيش نظر وہ ايسا قدم اٹھا نہيں سکتا تھا ( البتہ اس نے اپنے بھائي امين کو بھي شايد غلطي سے قتل کروايا تھا اور اس کا سر اپنے محل ميں ايک نيزے کے نوک پر ايک عرصے تک نصب کررکھا تھا ورنہ وہ کہاں اور کسي کا قتل کہاں!!! (()))-

10- امام عليہ السلام کي مسموميت کي داستان شيعہ جعليات کا حصہ ہے - ( جاري ہے  )


متعلقہ تحریریں:

شہادت امام رضا عليہ السلام کے اہم نکات

امام رضا (عليہ السلام) کي زيارت کي فضيلت