• صارفین کی تعداد :
  • 3743
  • 10/11/2013
  • تاريخ :

حج کے متعلق پوشيدہ باتيں

حج کے متعلق پوشیدہ باتیں

امام :جب تم مشعر الحرام سے گذرے تو کيا يہ نيت کي تھي کہ اپنے دل کو اھل خدا کے تصور اور خدا کے خوف سے آراستہ کرو؟شبلي:نھيں

امام :پھر نہ تم دو پھاڑوں کے درميان سے گذرےهو، نہ دو رکعت نماز ادا کي ھے ،نہ مذدلفہ گئےهو ،نہ سنگريزے چنے ھيں اور نہ مشعر الحرام سے گذرےهو“-

ثُمَّ قَالَ لَہُ:وَصَلَّتَ مِنٰي،وَرَمَيْتَ الْجَمْرَةَ، وَحَلَقْتَ رَاْسَکَ، وَذَبَحْتَ ھَدْيَکَ،وَصَلَّيْتَ فِي مَسْجِدِ الْخَيْفِ،وَرَجَعْتَ اظ•ِلَي مَکَّةَ،وَطُفْتَ طَوَافَ الْاظ•ِفَاضَةِ؟قَالَ:نَعَمْ،قَالَ:فَنَوَيْتَ عِنْدَ مَا وصَلْتَ مِنًي وَرَمَيْتَ الْجِمَارَ،اَنَّکَ بَلَغْتَ اظ•لَي مَطْلَبِکَ،وَقَدْ قَضَي رَبُّکَ لَکَ کُلَّ حَاجَتِکَ؟قَالَ:لاٰ، قَالَ:فَعِنْدَ مَا رَمَيْتَ الْجِمَارَنَوَيْتَ اَنَّکَ رَمَيْتَ عَدُوَّکَ اظ•ِبْلِيسَ وَغَضِبْتَہُ بِتَمَامِ حَجِّکَ النَّفِيسِ؟قَالَ:لاٰ،قَالَ:فَعِنْدَ مَا حَلَقْتَ رَاْسَکَ نَوَيْتَ اَنَّکَ تَطَھَّرْتَ مِنَ الْاَدْنَاسِ، وَمِنْ تَبِعَةِ بَنْي آدمَ،وَخَرَجْتَ مِنَ الذَّنُوبِ کَمَا وَلَدَتْکَ اُمُّکَ؟ قَالَ: لاٰ،قَالَ:فَعِنْدَ مَا صَلِّيْتَ فِي مَسْجِدِ الْخَيْفِ نَوَيْتَ اَنَّکَ لاٰ تَخَافُ اظ•ِلاَّ اللّٰہَ عَزَّوَجَلَّ وَذَنْبَکَ،وَلاٰ تَرْجُو اظ•ِلاَّ رَحْمَةَ اللّٰہِ تَعَاليَ؟ قَالَ:لاٰ،قَالَ:فَعِنْدَ مَا ذَبَحْتَ ھَدْيَکَ نَوَيْتَ اَنَّکَ ذَبَحْتَ حَنْجَرَةَ الطَّمَع بِمَا تَمَسَّکْتَ بِہِ مِنْ حَقِِيقَةِالْوَرَعِ،وَاَنَّکَ اتَّبَعْتَ سُنَّةَ اظ•ِبرَاہِيمَ بِذَبْحِ وَلَدِہِ،وَثَمَرَةِ فُوَادِہِ وَرَيْحَانِ قَلْبِہِ،وَحاَجَّہُ سُنَّتُہُ لِمَنْ بَعْدَہُ، وَقَرَّبَہُ اظ•ِلَي اللّٰہِ تَعَاليٰ؟لِمَنْ خَلْفَہُ قَالَ:لاٰ، قَالَ: فَعِنْدَمَا رَجَعْتَ اظ•ِلَي مَکَّةَ وَطُفْتَ طَوَافَ الْاظ•ِ فَاضَةِ نَوَيْتَ اَنَّکَ اَفِضْتَ مِنْ رَحْمَةِ1للّٰہِ تَعَالَي،وَرَجَعْتَ اظ•ِلَي طَاعَتِہِ وَتَمَسَّکْتَ بِوُدِّہِ وَاَدَّيْتَ فَرَائِضہ،وَتَقَرَّبَتَ اظ•ِلَي اللّٰہِ تَعَاليٰ؟قَالَ:لاٰ،قَالَ: لَہُ زَيْنُ العابدين(ع) فَمَا وَصَلْتَ مِنًي وَلاٰرَمْيَتَ الْجِمَارَ،وَلاٰحَلَقْتَ رَاْسَکَ، وَلاٰ اَدَّيْتَ نُسُکَکَ،وَلاٰ صَلَّيْتَ فِي مَسْجِدِ الْخَيْفِ، وَلاٰ طُفْتَ طَوَافَ الْاظ•ِ فَاضَةِ،وَلاٰ تَقَرَّبْتَ-اْرجِعْ فَاظ•ِنَّکَ لَمْ تَحُجَّ-

”‌پھر امام (ع)نے پوچھا کيا تم منيٰ پہنچے اور جمرہ کو کنکرياں ماري ،سر کے بال اتارے،اور اپني قرباني انجام دي؟ نيز مسجد خيف ميں نماز ادا کي ، اور مکہ واپس آ کر ”‌طواف افاضہ انجام ديا “؟شبلي:ھاں

امام (ع)نے فرمايا:جب تم منيٰ پہنچے اور رمي جمرات انجام دي تو کيا يہ محسوس کيا کہ تمھاري تمنا پوري هو گئي اور خدا وند عالم نے تمھاري تمام حاجتيں پوري کرديں ؟شبلي:نھيں

امام (ع):جب جمرات کو کنکرياں ماريں تو کيا يہ نيت تھي کہ اپنے دشمن ابليس کو کنکري ماررھےهواور اپنے قيمتي حج کو مکمل کرنے کے ساتھ تم نے اسے غضب ناک کر ديا ھے؟شبلي:نھيں

امام(ع):جب تم نے اپنے سر کے بال اتارے تو کيا يہ نيت کي تھي کہ بني آدم کے گناہوں اور آلودگيوں سے پاک هو گئے اور اپنے گناہوں سے يوں باھر آ گئے جيسے تمھيں تمھاري ماں نے ابھي پيدا کيا ھے؟ شبلي:نھيں

امام (ع):جب تم نے مسجد خيف ميں نماز ادا کي تو کيا تمھاري يہ نيت تھي کہ خدا ئے متعال اور گناہوں کے علاوہ کسي چيز سے نھيں ڈرتے اور خدا کي رحمت کے علاوہ کسي اور سے اميدوار نھيں هو؟شبلي:نھيں

امام(ع):جب تم نے اپني قرباني کو ذبح کيا تو کيا يہ نيت تھي کہ حقيقي تقويٰ و پرھيز گاري کے ذريعہ تم نے اپني لالچ کا گلا کاٹ ديا ھے اور جناب ابراھيم (ع)کہ جنھوں نے اپنے ميوہ دل اور لخت جگر بيٹے کو قربان گاہ ميں لا کر خدا سے قرب حاصل کرنے کا ايک وسيلہ اپنے بعد کي نسلوں کے لئے سنت کے طور پر قائم کيا تھا،ان کي پيروي کر رھےهو؟ شبلي: نھيں

امام(ع) :جب تم مکہ واپس هوئے اور ”‌طواف افاضہ“ انجام ديا تو کيا يہ نيت کي تھي کہ خدا کي رحمت سے کوچ کر کے اس کي اطاعت کي طرف پلٹ رھےهو،اس کي محبت حاصل کر لي ھے الٰھي واجبات ادا کئے ھيں اور خدا سے نزديک هو گئےهو؟ شبلي: نھيں

امام :پھر نہ تم منيٰ پہنچے ،نہ شيطانوں کو سنگريزے مارے ھيں،نہ اپنے سر کے بال اتارے ھيں،نہ اپنے حج کے اعمال انجام ديئے ھيں،نہ مسجد خيف ميں نماز ادا کي ھے،نہ طواف بجا لائےهو اور نہ خدا کے قرب ميں پہنچےهو واپس جاو کہ تم نے حج انجام نھيں ديا ھے -

فَطَفِقَ الشِّبْلِيُّ يَبْکِي عَلَي مَافَرَّطَہُ فِي حَجِّہِ،وَمٰا زَالَ يَتَعَلَّمُ حَتَّي حَجَّ مِنْ قَابِلٍ بِمَعْرِفَةٍ وَيَقينٍ-

”‌جناب شبلي اس با ت پر بُري طرح رونے لگے کہ جيسا حج کرنا چاہئے تھا انجام نھيں ديا اور مناسک حج آگاھي کے ساتھ ادا نھيں کئے آپ اپني حالت پر شدت سے غم زدہ تھے اور اس کے بعد سے حج کے اسرار ومعارف ياد کرنے ميں مشغول هوئے تاکہ اگلے سال پوري شناخت اور يقين کے ساتھ حج بجا لائيں“ -

 

کتاب کا نام : حج کي منتخب حديثيں

مصنف : سيد علي قاضي عسکر


متعلقہ تحریریں:

حج کے اسرار

اسرار حج