• صارفین کی تعداد :
  • 3421
  • 10/10/2013
  • تاريخ :

حج کے متعلق آگاہي

حج کے متعلق آگاہی

امام (ع)نے فرمايا:آيا عرفات ميں وقوف کے وقت تمھيں معارف و علوم کے ذريعہ اللہ کي معرفت هوئي اور کيا تم نے جانا کہ اللہ تمھارے نامہ عمل کولے گا اور وہ تمھاري فکر و خيال سے آگاھي رکھتا ھے ؟شبلي:نھيں

امام :کيا جبل رحمت کے اوپر جاتے وقت تمھاري يہ نيت تھي کہ خداوند عالم ھر  با ايمان مرد وزن پر رحمت نازل کرتا ھے اور ھر مسلمان مردوزن کي سرپرستي کرتا ھے ؟شبلي:نھيں

امام :آيا وادي نمرہ ميں تم نے يہ خيال کيا کہ کوئي حکم نہ دو جب تک خود فرمانبردار نہ هو جاو اور نھي نہ کرو جب تک خود کو نہ روکو؟ شبلي:نھيں

جب تم نشان اور نمرہ کے نزديک ٹھھرے تو کيا تمھاري يہ نيت تھي کہ وہ تمھاري عبادات اور طاعت پر گوا ہهوں اور خداوندعالم کے نگھبانوں کے ھمراہ اس کے حکم سے تيري حفاظت کريں؟ شبلي:نھيں

حضرت نے فرمايا:پھر نہ تم عرفات ميں ٹھھرے نہ جبل رحمت کے اوپر گئے نہ نمرہ کو پہچانا نہ دعا کي اور نہ نمرہ کے نزديک وقوف کيا ھے-

ثُمَّ قَالَ:مَرَرْتَ بَيْنَ الْعَلَمَيْنِ،وَصَلَّيْتَ قَبْلَ مُرُورِکَ رَکْعَتَيْنِ،وَمَشَيْتَ بِمُزْدَلِفَةَ، وَل َقَطْتَ فِيھَا الْحَصَي،وَمَرَرْتَ بِالْمَشْعَرِ الْحَرَامِ؟ قَالَ: نَعَمْ، قَالَ: فَحِينَ صَلَّيْتَ رِکْعَتَيْنِ،نَوَيْتَ اَنَّھَا صَلاٰةُ شُکْرٍ فِي لَيْلَةِ عَشْرٍ،تَنْفِي کُلَّ عُسْرٍ، وَتُيَسِّرُ کُلَّ يُسْرٍ؟ قَالَ: لاٰ،قَالَ:فَعِنْدَ مَامَشَيْتَ بَيْنَ الْعَلَمَيْنِ،وَلَمْ تَعْدِلْ عَنْھُمَا يَمِيناً وَشِمَالاً،نَوَيْتَ اَنْ لاٰ تَعْدِلَ عَنْ دِينِ الْحَقِّ يَمِيناً وَشِمَالاً،لاٰ بِقَلْبِکَ،وَلاٰ بِلِسَانِکَ،وَلاٰبِجَوَارِحِکَ، قَالَ:لاٰ، قَالَ:فَعِنْدَ مَا مَشَيْتَ بِمُزْدَلِفَةَ وَلَقَطْتَ مِنْھَا الْحَصَي،نَوَيْتَ اَنَّکَ رَفَعْتَ عَنْکَ کُلَّ مَعْصِيَةٍ،وَ جَھْلٍ،وَثَبَّتَّ کُلَّ عِلْمٍ وَعَمَلٍ؟قَالَ:لاٰ،قَالَ:فَعِنْدَ مَا مَرَرْتَ بِالْمَشْعَرِ الْحَرَامِ،نَوَيْتَ اَنَّکَ اَشْعَرْتَ قَلْبَکَ اظ•ِشْعَارَ اَہْلِ التَّقْويٰ وَالْخَوْفَ لِلّٰہِ عَزَّوَجَلَّ؟ قَالَ:لاٰ،قَالَ:فَمَا مَرَرْتَ بِالْعَلَمَيْنِ،وَلاٰ صَلَّيْتَ رِکْعَتَيْنِ،وَلاٰ مَشَيْتَ بِالْمُزْدَلِفَةِ،وَلاٰ رَفَعْتَ مِنْھَا الْحَصَي،وَلاٰ مَرَرْتَ بِالْمَشْعَرِ الْحَرَامِ-

پھرامام نے پوچھا کہ کيا تم دونشانوں کے درميان سے گذرے اور وھاں سے گذرنے سے پھلے دورکعت نماز ادا کي اور پيدل مذدلفہ گئے اور وھاں کنکرياں چنيں اور مشعر الحرام سے گذرے؟شبلي:ھاں

امام نے فرمايا:جب دورکعت نماز اداکي تو کيا يہ نيت کي تھي کہ يہ نماز شب دھم کي نماز شکر ھے جو ھر سختي کو دور اور کاموں کو آسان کرتي ھے ؟ شبلي:نھيں

امام :جب تم دو نشانوں کے درميان سے گذرے اور دائيں اور بائيں منحرف نھيں هوئے تو کيا يہ نيت کي تھي کہ دين حق سے دائيں اور بائيں نہ دل سے نہ زبان سے اور نہ اپنے اعضاء بدن سے منحرف نھيں هوئے هو؟شبلي:نھيں

امام :جب تم مذدلفہ گئے اور وھاں سنگريزے جمع کئے تو کيا يہ نيت کي تھي کہ ھر گناہ اور جھالت کو خود سے دور کيا ھے اور ھر علم و نيک عمل کو اپنے آپ ميں پائےدار کيا ھے؟شبلي:نھيں - ( جاري ہے )

 

کتاب کا نام : حج کي منتخب حديثيں

مصنف : سيد علي قاضي عسکر


متعلقہ تحریریں:

وہابيت کا مختصر جائزہ

امام زمان(عج) اسلام کے آئينے ميں