• صارفین کی تعداد :
  • 3563
  • 10/8/2013
  • تاريخ :

حج کے متعلق اسرار

حج کے متعلق اسرار

حج کے اسرار ( حصّہ اوّل )

اسرار حج ( حصّہ دوّم )

ثُمَّ قَالَ:طُفْتَ بِالْبَيْتِ وَمَسَسْتَ الْاَرْکَانَ وَسَعَيْتَ؟قَالَ:نَعَمْ-

قَالَ(ع):فَحِينَ سَعَيْتَ نَوَيْتَ اَنَّکَ ھَرَبْتَ اظ•ِلَي اللّٰہِ وَعَرَفَ مِنْکَ ذٰلِکَ عَلاَّمُ الْغُيُوبِ؟قَالَ:لاٰ -

قَالَ فَمَا طُفْتَ بِالْبَيْتِ وَلاٰ مَسِسْتَ الْاَرْکَانَ وَلاٰ سَعَيْتَ-

”‌پھر امام نے پوچھا :کيا تم نے خانہ خدا کا طواف کيا ارکان کو مس کيا اور سعي انجام دي ؟شبلي :ھاں-

امام (ع):سعي کرتے وقت کيا تمھاري يہ نيت تھي کہ شيطان اور اپنے نفس سے بھاگ کر خدا کي پناہ حاصل کرتےهو اور وہ غيب سے سب سے زيادہ آگاہ ھے وہ اس بات کو جانتا ھے ؟ شبلي:نھيں-

امام (ع):پھر نہ تم نے خانہ خدا کاطواف کيا نہ ارکان مس کئے اور نہ سعي کي،

ثُمَّ قَالَ لَہُ:صَافَحْتَ الْحَجَرَوَ وَقَفْتَ بِمَقَامِ اظ•ِبْرَاہِيمَ(ع) وَصَلَّيْتَ بِہَ رَکْعَتَيْنِ؟قَالَ:نَعَمْ فَصَاحَ (ع)صَيْحَةً کَادَ يُفَارِقُ الدُّنْيَا ثُمَّ قَالَ:آہِ آہِ-

ثُمَّ قَالَ(ع):مَنْ صَافَحَ الْحَجَرَ الْاَسْوَدَ فَقَدْ صَافَحَ اللّٰہَ تَعَالَي،فَانْظُرْ يَامِسْکِينُ لاٰ تُضَيِّعْ اَجْرَ مَا عَظُمَ حُرْمَتُہُ،وَتَنْقُضِ الْمُصَافَحَةَ بِالْمُخَالَفَةِ،وَقَبْضِ الْحَرَامٍ نَظِيرَ اَہْلِ الْآثَامِ-

ثُمَّ قَالَ(ع):نَوَيْتَ حِينَ وَقَفْتَ عِنْدَ مَقَامِ اظ•ِبْرَاہِيمَ(ع)اَنَّکَ وَقَفْتَ عَلَي کُلِّ طَاعَةٍ وَتَخَلَّفْتَ عَنْ کُلِّ مَعْصِيَةٍ؟قَالَ:لاٰ-

قَالَ:فَحِينَ صَلَّيْتَ فِيہِ رَکْعَتَيْنِ نَوَيْتَ اَنَّکَ صَلَّيْتَ بِصَلاٰةِ اظ•ِبْرَاہِيمَ(ع)،وَاَرْغَمْتَ بِصَلاٰتِکَ اَنْفَ الشَّيْطَانِ؟قَالَ:لاٰ-

قَالَ لَہُ:فَمَا صَافَحْتَ الْحَجَرَ الْاَسْوَدَ وَلاٰ وَقَفْتَ عِنْدَ الْمَقَامِ وَلاٰ صَلَّيْتَ فِيہِ رَکْعَتَيْنِ-

”‌امام(ع) نے دريافت فرمايا:کيا تم نے حج اسود سے مصافحہ کيا، مقام ابراھيم (ع) کے نزديک کھڑےهوئے اور دو رکعت نماز ادا کي ؟شبلي: ھاں،

پس امام (ع):نے فرياد بلند کي ايسا لگتا تھا کہ آپ (ع) دنيا سے ھي کو چ کر جانے والے ھيں اس کے بعد فرمايا :آہ ،آہ----

پھر فرمايا :جو حجر اسود کو لمس کرے اس نے خدا سے مصافحہ کيا پس اے مسکين !ديکھ اس عظيم حرمت وعزت کو ضائع نہ کر اور مصافحہ کو مخالفت اور گناہکاروں کے مانند حرام کاري کے ذريعہ نہ توڑ اس کے بعد پوچھا : جب تم مقام ابراھيم (ع)کے نزديک گئے تو کيا تمھاري نيت يہ تھي کہ خدا کے تمام احکام وفرامين کي پابندي اور ھر معصيت و نافرماني کي مخالفت کرو گے؟شبلي :نھيں

امام (ع):جب تم نے طواف کي دور کعت نماز ادا کي تو کيا يہ نيت تھي کہ تم نے جناب ابراھيم کے ھمراہ نماز پڑھي ھے اور شيطان کي ناک کو خاک پر رگڑ ديا ھے ؟شبلي:نھيں-

امام(ع):پھر درحقيقت نہ تم نے حجر اسود کا مصافحہ کيا نہ مقام ابراھيم کے پاس کھڑےهوئے اور نہ وھاں دو رکعت نماز اداکي - ( جاري ہے )

 

کتاب کا نام : حج کي منتخب حديثيں

مصنف : سيد علي قاضي عسکر


متعلقہ تحریریں :

حج کے اسرار

نماز کي فضيلت رسول اکرم صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم کي زباني