• صارفین کی تعداد :
  • 2878
  • 9/15/2012
  • تاريخ :

بي بي معصومہ س  اھل بيت عليم السلام کي نظر ميں

 حضرت فاطمہ معصومہ قم (ع)

اهل بيت عليهم السلام  کے کلام ميں  بي بي معصومہ س 

حضرت معصومہ عليہا السلام  کا مدينہ سے قم تک کا سفر

حضرت فاطمہ معصومہ سلام اللہ عليہا  کے بلند اوصاف

حضرت فاطمہ معصومہ سلام اللہ عليہا  کي عظيم شخصيت

حضرت معصومہ سلام اللہ عليہا کو خود ان کے رۆف بھائي حضرت امام رضا عليہ السلام نے معصومہ کہہ کر پکارا اور ان کي زيارت کي فضيلت اس طرح سے بيان فرمائي:

قال الامام الرضا عليہ السلام‘‘مَن زارا المعصومہ بقم کمن زارني’’

يعني جو شخص بھي قم ميں حضرت معصومہ کي زيارت کا شرف حاصل کرلے تو اُس نے ميري زيارت کر لي ہے-

اسي طرح حضرت امام محمد تقي عليہ السلام فرماتے ہيں:

‘‘من زار قبر عمّتي بقم فلہ الجنۃ’’

يعني جو بھي قم ميں ميري پھوپھي کي زيارت کرے گا اُس پر جنت واجب ہوجاتي ہے-

گو کہ يہ ساري احاديث حضرت معصومہ سلام اللہ عليہا کي عظمت کي دليل ہيں مگر اين روايات ميں بعض نکات قابل تشريح ہيں:

جيسے: جنت کا واجب ہونا، جنت کے برابر ہونا، بہشت کا مالک ہوجانا، جو لفظ "له" سے سمجها جاتا ہے اور ان کي زيارت کا حضرت رضا عليہ السلام کي زيارت کے برابر ہونا اور حضرت رضا عليہ السلام کا اس شيعہ بهائي سے بازخواست کرنا جس نے حضرت معصومہ سلام الله عليہا کي زيارت نہيں کي تهي-

حضرت معصومہ عليہا السلام کي زيارت کي سفارش صرف ايک امام نے نہيں فرمائي ہے بلکہ تين اماموں (عليہم السلام) نے ان کي زيارت کي سفارش فرمائي ہے: امام صادق، امام رضا و امام جواد عليہم السلام- اور دلچسپ امر يہ کہ امام صارف عليہ السلام نے حضرت معصومه کي ولادت با سعادت سے بہت پہلے بلکہ آپ سلام اللہ عليہا کے والد امام کاظم عليہ السلام کي ولادت سے بهي پہلے ان کي زيارت کي سفارش فرمائي ہے-

دوسرا دلچسپ نکتہ پانچويں روايت ہے جس ميں حضرت معصومہ کي زيارت امام رضا عليہ السلام کے ہم پلہ قرار ديا گيا ہے- زيد شحّام نے امام صادق عليہ السلام سے سوال کيا کہ :"يا بن رسول الله جس شخص نے آپ ميں سے کسي ايک کي زيارت کي اس کي جزا کيا ہے؟ امام عليہ السلام نے فرمايا: "جس نے ہم ميں سے کسي ايک کي زيارت کي "کمن زار رسول الله صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم؛ اس شخص کي طرح ہے جس نے رسول خدا صلي الله و عليہ و آلہ و سلم کي زيارت کي ہو" چنانچہ جس نے سيده معصومہ سلام اللہ عليہا کي زيارت کي در حقيقت اس نے رسول خدا کي زيارت کي ہے- اور پهر حضرت رضا عليہ السلام – جو سيدہ معصومہ کي زيارت کو اپني زيارت کے برابر قرارديتے ہيں – فرماتے ہيں کہ :"الا فمن زارني و هو علي غسل، خرج من ذنوبه کيوم ولدته امّه؛ آگاه رہو کہ جس نے غسل زيارت کرکے ميري زيارت کي وه گناہوں سے اس طرح پاک ہوجاتا ہے جس طرح کہ وه ماں سے متولد ہوتے وقت گناہوں سے پاک تها"- ان احاديث سے يہي ثابت ہوتا ہے کہ سيده معصومه سلام الله کي زيارت گناہوں کا کفاره بهي ہے اور جنت کي ضمانت بهي ہے بشرطيکہ انسان زيارت کے بعد گناہوں سے پرہيز کرے-

دو حديثوں ميں امام صادق اور امام رضا عليہما السلام نے زيارت کي قبوليت اور وجوب جنت کے لئے آپ سلام اللہ عليہا کے حق کي معرفت کو شرط قرار ديا ہے- اور ہم آپ سلام اللہ عليہا کي زيارت ميں پڑهتے ہيں کہ "يا فاطِمَة ا ِشْفَعي لي فِي الْجَنَّة ِ، فَا ِنَّ لَكَ عِنْدَاللّْہ ِشَأْناً مِنَ الشَّأْن = اے فاطمہ جنت ميں ميري شفاعت فرما کيونکہ آپ کے لئے خدا کے نزديک ايک خاص شأن و منزلت ہے" امام صادق عليہ السلام کے ارشاد گرامي کے مطابق تمام شيعيان اہل بيت عليہ السلام حضرت سيده معصومہ سلام الله کي شفاعت سے جنت ميں داخل ہونگے اور زيارتنامے ميں ہے کہ آپ ہماري شفاعت فرمائيں کيوں کہ آپ کے لئے ايک خاص شأن و منزلت ہے- علماء کہتے ہيں کہ يہ شأن، شأنِ ولايت ہے جو سيده سلام اللہ عليہا کو حاصل ہے اور اسي منزلت کي بنا پر وه مۆمنين کي شفاعت فرمائيں گي اور اگر کوئي اس شأن کي معرفت رکهتا ہو اور آپ کي زيارت کرے تو اس پر جنت واجب ہے-

شعبہ تحرير و پيشکش تبيان