• صارفین کی تعداد :
  • 2267
  • 9/9/2012
  • تاريخ :

حضرت علي عليہ السلام نے سب سے پہلے نبوّت کي گواہي دي

حضرت علی مرتضی

دعوت ذوالعشيرہ کي مشہور و معروف روايات ميں بيان ہوا ہے کہ پيغمبر اکرم (ص) نے کھانا تيار کرايا اورقريش ميں سے اپنے رشتہ داروں کي دعوت کي اور ان کو اسلام کا پيغام سنايا، فرمايا: جو شخص سب سے پہلے اسلام کے پيغام ميں ميري نصرت و مدد کرے گا وہ ميرا بھائي، وصي اور جانشين ہوگا، اس موقع پر حضرت علي بن ابي طالب عليہ السلام کے علاوہ کسي نے رسول اسلام کي دعوت پر لبيک نہيں کہي، آپ نے فرمايا: يا رسول اللہ ! ميں آپ کي نصرت و مدد کروں گا، اور آپ کے ہاتھوں پر بيعت کرتا ہوں، اس موقع پر پيغمبر اکرم (ص) نے فرمايا: يا علي! تم ميرے بھائي، ميرے وصي اور ميرے جانشين ہو-

عَنْ انس ابن مالک قَالَ: قَالَ رَسُوْل اللّٰہِ:صَلّٰي عَليَّ الْمَلٰا ئِکَۃُ وَعَلٰي عَلِيِّ سَبْعَ سِنِيْنَ وَلَمْ يَصْعُدْ اَوْلَمْ يَرْتَفِعْ-بِشَھٰادَةِ اَنْ لَااِلٰہَ اِلَّااللّٰہُ مِنَ الْاَرْضِ اِلَي السَّمَاءِ اِلَّا مِنِّي وَمِنْ علي ابنِ ابي طالب-

”‌انس بن مالک روايت کرتے ہيں کہ پيغمبر اکرم صلي اللہ عليہ وآلہ وسلم نے فرمايا کہ فرشتے سات سال تک مجھ پر اور علي عليہ السلام پر درود بھيجتے رہے(يہ اس واسطے کہ ان سات سالوں ميں) خدا کي وحدانيت کي گواہي زمين سے آسمان کي طرف سوائے ميرے اور علي کے علاوہ کسي نے نہ دي“-

يہ بات قابلِ توجہ ہے کہ حضرت علي عليہ السلام کے اسلام لانے کے بارے ميں اہلِ سنت اور شيعہ کتب سے کافي روايات ملتي ہيں- جيسے زيد بن ارقم کہتے ہيں ”‌اَوَّلُ مَنْ اَسْلَمَ عَلِي1“سب سے پہلے جو اسلام لائے وہ علي تھے- اس کے کچھ حوالہ جات نيچے بھي درج کئے گئے ہيں- اسي طرح انس بن مالک کہتے ہيں: 2

”‌بُعِثَ النَّبِيُّ يَوْمَ الْاِثْنَيْنِ وَاَسْلَمَ عَلِيٌّ يَوْمَ الثلا ثا“

يعني پيغمبر اکرم صلي اللہ عليہ وآلہ وسلم پير کے روز مبعوث برسالت ہوئے اور علي عليہ السلام نے منگل کے روز اسلام قبول کيا-

حوالہ جاتِ روايت اہلِ سنت کي کتب سے

1-       ابن عساکر تاريخ دمشق ،باب شرح حالِ امام علي ،جلد1،ص70،حديث116-

2-       ابن مغازلي کتاب مناقب ِ اميرالمومنين ،حديث 19،ص8،اشاعت اوّل،ص14پر

3-       شيخ سليمان قندوزي حنفي، کتاب ينابيع المودة، باب12،صفحہ68-

4-       حافظ الحسکاني، کتاب شواہد التنزيل ميں، حديث 786اور 819-

5-       سيوطي، کتاب اللئالي المصنوعہ،ج1،ص169و(صفحہ166اشاعت بولاق)

6-       متقي ہندي، کنزالعمال،ج11،ص616(موسسۃ الرسالہ بيروت،اشاعت پنجم)-

حوالہ جاتِ روايت زيد بن ارقم 1

1-       ابن کثير کتاب البدايہ والنہايہ،جلد7،صفحہ335(باب فضائلِ علي عليہ السلام)-

2-       گنجي شافعي کتاب کفاية الطالب،باب25،صفحہ125-

3-       سيوطي ،کتاب تاريخ الخلفاء، صفحہ166(بابِ ذکر علي ابن ابي طالب عليہ السلام)-

حوالہ جاتِ روايت انس بن مالک 2

1-       خطيب،تاريخ بغداد ميں،جلد1،صفحہ134(حالِ علي عليہ السلام،شمارہ1)-

2-       حاکم ،المستدرک ميں، جلد3،صفحہ112(بابِ فضائلِ علي عليہ السلام)-

3-       ابن کثير، کتاب البدايہ والنہايہ،جلد3،صفحہ26-

4-       سيوطي، کتاب تاريخ الخلفاء،صفحہ166(بابِ ذکر علي ابن ابي طالب عليہ السلام)-

5-       شيخ سليمان قندوزي حنفي، ينابيع المودة، باب12،صفحہ68اورباب59،ص335-

6-       ابن عساکر تاريخ دمشق ، حالِ امير المومنين امام علي ،جلد1،ص41،حديث76-

تحرير: سيّد اسد الله ارسلان

شعبہ تحرير و پيشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

امام علي عليہ السلام اور سادہ زندگي