• صارفین کی تعداد :
  • 2878
  • 9/2/2012
  • تاريخ :

فلسطين ميں اسلامي بيداري بھي اسلامي انقلاب کي مرہون منت ہے

ایران اور فلسطین کا پرچم

فلسطين ميں اسلامي بيداري بھي اسلامي انقلاب کي مرہون منت ہے - اسلامي جمہوريہ ايران کے فلسطين کے بارے ميں  اقدامات سے متاثر ہو کر فلسطين کي اسلامي بيداري ميں اسلامي انقلاب کا قابل قدر حصہ شامل ہے  - مثلا اسلامي انقلاب کي کاميابي کے ابتدائي ايام سے ہي اعلي فلسطيني قيادت کي دعوت ، اسرائيلي کانصليٹ کي فلسطيني سفارت خانہ ميں تبديلي ، ايران ميں ساف کے نمائندے کو سفير کا لقب ، ماہ رمضان کے آخري جمعتہ المبارک کو روز قدس کے عنوان سے منايا جانا ، انسان دوستي کي بنياد پر مالي امداد ،فلسطيني تحريک  کي سياسي  حمايت ،فلسطين کے خلاف مشرق وسطي کے صلح نامہ کي صورت ميں ہونے والي سازشوں کي مخالفت  اور فلسطين کے لوگوں کي حمايت کے ليۓ ايک چندہ کي جمع آوري وغيرہ  بعض ايسے اقدامات ميں شامل ہيں -

اسلامي انقلاب نے فلسطيني عوام کو مقابلہ کرنے کا حقيقي جذبہ ديا خاص طور پر غزہ کي پٹي اور درياۓ اردن کے کنارے بسنے والے فلسطينيوں کو -  اسلامي جہاد کي تحريک کے ايک معنوي رہنما جناب شيخ عبدالعزيز عودہ کہتے ہيں کہ امام خميني رح کا انقلاب اسلامي ملتوں کے اتحاد کے ليۓ اسلامي بيداري کي صورت ميں اہم ترين اور جديد  ترين کوشش تھي - اور حکومت کارٹر کے قومي سيکورٹي کے مشاور برژينسکي  لکھتا ہے کہ  شاہ کي حکومت گرنے اور  ايران کے  امام خميني کے جھٹکوں سے  پورے علاقے ميں اسلامي بنياد پرستوں کو ايک نئي زندگي ملي ہے جس کے نتيجے ميں علاقے ميں ان اہدافات کو شديد خطرات لاحق ہو گۓ ہيں جن سے مغربي دنيا کي زندگي وابستہ ہے -

 اس ليۓ اسلامي انقلاب نے اسلامي معاشرے  اور فلسطين کے سني معاشرے ميں اسلام اور قرآن کے متعلق نۓ تصورات ديۓ   جس سے راشي اور زور گو حکومتوں کي مخالفت ميں اضافہ ہوا ،  دين کي مخالفت  پر مبني تعليمات کے خلاف اعلانيہ  جنگ  کيا ، برابري اور معاشرتي انصاف کے حقائق کي کوششوں کو شدت بخشي ،مغرب کے خلاف مسلمانوں کے ردعمل ميں شدت آئي اور 50 تا 70  کي آخري دہائيوں کي مايوسيوں کا خاتمہ ہو گيا - اسرائيل کے خلاف جنگ ميں پي ايل او کي ناکامي کي ايک  اہم وجہ جديد شرائط کے بارے ميں  سمجھ بوجھ کا نہ ہونا تھا کہ جنہيں اسلامي انقلاب نے دنيا ميں متعارف کروايا  ليکن پي ايل او کي شکل ميں فلسطين کي نئي اسلامي تحريک نے  اسرائيل کے خلاف جنگ ميں اسلامي انقلاب کے طريقوں کو بروۓ کار لايا ہے - تحريک فلسطين کے رہبر جناب شيخ اسعد تميمي کہتے ہيں کہ ايران ميں انقلاب آنے تک اسرائيل کے خلاف لڑائي  کے دوران عربوں ميں اسلام غائب تھا  حتي مسلمان الفاظ کا استعمال کرتے ہوۓ بھي کوتاہي کرتے تھے مثلا جہاد کے لفظ کو استعمال ميں نہيں لاتے تھے بلکہ اس کي جگہ لڑآئي يا برسرپيکار کے الفاظ استعمال کرتے تھے  اور اسلامي انقلاب نے اس حقيقت کو فلسطيني سرزمين تک پہنچايا کہ اسلام راہ حل اور جہاد اصلي وسيلہ ہے -  فلسطين کے ايک اصول گر جناب شيخ عبداللہ شامي کہتے ہيں کہ ايران  ميں اسلامي انقلاب کي کاميابي نے فلسطيني لوگوں پر بڑے گہرے اثرات مرتب کيے ہيں اور اس کے بعد فلسطين کے لوگوں کو معلوم ہوا کہ فلسطين کي آزادي کے ليۓ قرآن اور اسلحے کي ضرورت ہے -

تحرير: سيد اسد الله ارسلان 

پيشکش : شعبۂ تحرير و پيشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

دنيا ميں ايک نئي مثال