• صارفین کی تعداد :
  • 1315
  • 8/13/2012
  • تاريخ :

مُطالعۂ رومي ميں  اقبال کا مقام  

مولانا روم

مطالعہ اقبال کے  سلسلے  ميں  رومي کو جو اہميت حاصل ہے  اسکا اعادہ لاحاصل ہے  کيونکہ يہ ايک ايسا موضوع ہے  جس کو اقبال کے  معمولي سے  معمولي ناقد يا شارح نے  بھي نظر انداز نہيں  کيا- مگر مطالعہ رومي کے  سلسلے  ميں  اقبال کو جو اہميت حاصل ہے  ، اس کي طرف اب تک کوئي توجہ نہيں  ہوئي - حالانکہ يہ موضوع بذاتِ خود اہم ہونے  کے  علاوہ اقبال اور رومي دونوں  کے  تقابلي مقام کو سمجھنے  کے  لئے  بھي ضروري ہے- اس خيال کے  تحت ميں  نے  اس مضمون ميں  مطالعہ رومي کي تحريک کا عہد بہ عہد مگر مختصر جائزہ لينے  کي کوشش کي ہے- اس سے  مقصد يہ بھي ہے  کہ مختلف ادوار ميں  رومي کے  اثرات و فيوض کا سراغ لگايا جائے- اور يہ بھي کہ رومي کو تاريخ افکار ميں  جو رتبہ اقبال نے  دلايا ہے  اور ان کے  معارف و اسرار کو جس طرح علوم ثابتہ کي روشني ميں  بے  نقاب کيا ہے  اس کا صحيح صحيح اعتراف کيا  جا سکے- اس لحاظ سے  يہ کہنا شايد غلط نہيں  کہ اگر رومي نے  اقبال کي فکر کو چار چاند لگائے  ہيں  تو اقبال نے  بھي رومي کے  افکارِ عاليہ کو بڑي عقيدت سے  دنيا ميں  متعارف کرايا ہے - جس سے  ان کے  رتبہ و مقام کو پہلے  سے  کہيں  زيادہ سربلندي نصيب ہوئي - يہ اقبال کي سعادت مندي ہے  کہ وہ رومي کي غائبانہ شاگردي سے  مفتخر ہوئے- مگر يہ فکر رومي کي بھي خوش نصيبي ہے  کہ اس کواقبال جيسا ہو شمند اور بالغ نظر شارح ملا - جس نے  اپنے  نامور استاد کي عظمت کے  مينار اور اونچے  کر دئيے- اور ان کي شہرت کو فلک الافلاک تک پہنچا ديا - چنانچہ مثنوي کے  زمانۂ تصنيف سے  لے  کر آج تک جتنے  علما و فضلا نے  افکار رومي کا تجزيہ کيا ہے  ان ميں  شايد اقبال ہي مثنوي کے  وہ واحد ترجمان ہيں  جن کي توجيہات نے  مثنوي کو ايک سائنسي فکر اور مثبت و پائيدار اقدارِ زندگي کا حامل ثابت کيا اور ان کي حکمتوں  کو دريافت کيا ہے  جن سے  کائنات اور حيات کے  ارتقا ء و تکميل کے  بڑے  بڑے  راز دريافت ہوئے  ہيں- مطالعۂ رومي کے  سلسلے  ميں  اقبال کي يہ اہميت جب ہي ثابت کي جا سکتي ہے  کہ ہم پہلے  مثنوي کے  تنقيد نگاروں  يا عالموں  کے  کام پر نظر ڈال کر يہ واضح کر ديں  کہ اقبال سے  پہلے  رومي کے  مطالعہ کي نوعيت جزوي اور انفرادي سي تھي - يہ اقبال ہي تھے  جن کے  طفيل رومي کے  افکار کي وہ تشريح ہوئي جس سے  وہ حياتِ اجتماعي اور ارتقائے  انساني کے  ايک بڑے  ترجمان اور محرمِ اسرار ثابت ہوئے-

مولانا روم کا انتقال 1273ء/ 672ھ ميں  ہوتا ہے- اس کے  بعد آج تک تقريباً سات سو سال کا عرصہ گزرا ہے- اس طويل مدت ميں  تقريباً ہر دور ميں  مثنوي پر کام کرنے  والے  بيسيوں  کي تعداد ميں  نظر آتے  ہيں- جو مثنوي کي مقبوليت کا ايک ناقابل ترديد ثبوت ہے- اس معاملہ ميں  اگر مثنوي کے  مقابلے  پر فارسي کي کوئي اور کتاب لائي جا سکتي ہے  تو وہ ديوان حافظ ہے - مگر ديوان حافظ کي حيثيت  محض شعر و معرفت کي کتاب کي ہے- مثنوي ان دونوں  حيثيتوں  کے  علاوہ اسرارِ دين اور علمِ کلام کي کتاب بھي ہے- اس وجہ سے  ايران و خراسان بلکہ ترکي اور پاک و ہند ميں  بھي مثنوي کو ايک مقدس اور الہامي کتاب کا درجہ حاصل رہا ہے- چنانچہ يہ مشہور مصرع  

 ہست قرآن در زبانِ پہلوي 

(فارسي زبان ميں  قرآن ہے  )

اسي حقيقت کا اعلان کر رہا ہے- غرض مثنويِ رومي ادبياتِ فارسي کي مقبول ترين کتاب ہے- جس کا ثبوت اس بات سے  بھي مہيا ہوتا ہے  کہ اس کي لا تعداد شرحيں  ،  ترجمے  اور فرہنگ لکھے  گئے  ہيں- جن ميں  سے  بعض کي اپني علمي سطح بھي اتني بلند ہے  کہ ان کو بذاتِ خود ادبياتِ عاليہ ميں  شمار کيا جا سکتا ہے-

تحرير: ڈاکٹر سيد عبداللہ

پيشکش : شعبۂ تحرير و پيشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

مولانا شعر کو ہنر مندي کاذريعہ نہيں بناتے