• صارفین کی تعداد :
  • 3554
  • 3/4/2012
  • تاريخ :

آساني سے دولت مند بن جائيں ( حصّہ چہارم )

رقم

قناعت کي فضيلت

عَنْ اَبِيْ ھَاشِمِ الْجَعْفَرِيْ قَالَ اَصَابَتْنِيْ ضَيْقَةً شَدِيْدَةً فَسِرْتُ اِلٰي اَبِيْ الْحَسَنِ عَلِيِّ بْنِ مُحَمَّدٍ عَلَيْہُمَا السَّلااَامُ فَاسْتَاْذَنْتُ عَلَيْہِ فَاَذِنَ لِيْ فَلَمَّا جَلَسْتُ قَالَ يَا اَبَا ھَاشِمٍ اَيُّ نِعَمِ اللّٰہِ عَلَيْکَ تُرِيْدُ اَنْ تُوَدِّيْ شُکْرَھَا قَالَ اَبُوْ ھَاشِمٍ فَوَجَمْتُ فَلَمْ اَدْرِ مَا اَقُوْلُ فَابْتَدِئَنِيْ عَلَيْہِ السَّلامُ فقَالَ رِزْقُکَ الْاِيْمَانَ فَحَرَّ مَ بَدَنَکَ عَلَي النَّارِ وَ رَزَقَکَ الْعَافِيَّةِ فَاَعَانَتَکَ عَلَي الطَّاعَةِ وَ رَزَقَکَ الْقُنُوْعَِ فَصَنَکَ عَنِ التَّبَذُّلِ يَا اَبَا ھَاشِمٍ اِنَّمَا اِبْتَدَئْتُکَ بِھٰذَا لِاَنِّيْ ظَنَنْتُ اَنَّکَ تُرِيْدُ اَنْ تَشْکُوَ اِلٰي مَنْ فَعَلَ بِکَ ھٰذَا وَ قَدْ اَمَرْتُ لَکَ بِمِائَةِ دِيْنَارٍفَخُذْھَا-

(الدمعة اساکبة جلد8 صفحہ 137،

امالي شيخ صدوقصفحہ 336 حديث11)

ترجمہ:-

شيخ صدوق نے ابو ہاشم جعفري سے روايت نقل کي ہے جس وقت مجھ پر فقر و فاقہ (غربت و تنگدستي) نے سختي کي توامام علي نقي- کي خدمت ميں حاضر ہوا حضرت نے فرمايا: اے ابو ہاشم تو خدا کي عطا کي ہوئي کون سي نعمت کا شکر ادا کر سکتا ہے؟

ابو ہاشم کہتا ہے کہ مجھے سمجھ ميں نہ آيا کہ کيا جواب دوں؟ پس خود حضرت نے ابتدا فرمائي اور فرمايا کہ اس نے تجھے ايمان نصيب کيا جس کي وجہ سے اس نے تيرے بدن کوآگ پر حرام کيا اور تجھے عافيت عطا کي جس نے اطاعت کرنے ميں تيري مدد کي اور تجھے قناعت عطا کي جس کي وجہ سے تيري عزت آبرو محفوظ رکھي-اے ہاشم اس لئے ميں نے ابتدا کرتے ہوئے تجھے يہ کہا ہے ميرا گمان تھا کہ تو ايسي ذات کي ميرے سامنے شکايت کرنا چاہتا ہے جس نے تجھے يہ سب نعمتيں دي ہيں اور ميں نے حکم ديا ہے کہ ايک سو سرخ دينار تجھے ديئے جائيں اور انہيں لے لے-

مرحوم مصنف (شيخ عباس قمي) فرماتے ہيں اس حديث سے پتہ چلتا ہے کہ ايمان خدا کي نعمتوں سے عظيم نعمت ہے اورہے بھي اسي طرح کيونکہ تمام اعمال کي قبوليت کا دارومدار ايمان پر ہے اور اس کے بعد عافيت ہے- روايت ميں ہے کہ پيغمبر اکرم (صلي اللہ عليہ و آلہ وسلم) سے کسي نے پوچھا اگر ميں شب قدر کوپا لوں تو خدا سے اس رات کيا مانگوں تو حضرت(صلي اللہ عليہ و آلہ وسلم) نے فرمايا کہ:

عافيت مانگو اور عافيت کے بعد قناعت کي نعمت -

تحرير و ترتيب :  سيد اسداللہ  ارسلان