• صارفین کی تعداد :
  • 4397
  • 5/22/2012
  • تاريخ :

شالامار

شالامار

جس کو جنّت کي ديکھنا ہو بہار

لوگ باہر  سے  جو  بھي  آتے  ہيں

سبزے سے يوں پٹي پڑي ہے زميں

صبح  دم   چڑياں  چہچہاتي  ہيں

ہر  طرف  چل  رہے   ہيں   فوّارے

جب ہواğ  کے جھونکے آتے  ہيں

تختہ   تختہ   ہے   گلشن   کشمير

خُلد   کي  طرح   پرُ  بہار  ہے  يہ

ديکھ  لے  آ   کے   باغ    شالامار

ديکھنے  کو   ضرور   جاتے   ہيں

سبز مخمل بچھي ہو جيسے کہيں

حمد  کے ميٹھے گيت  گاتي  ہيں

يا  برستے  ہيں  خوش  نما  تارے

پھول خوش ہو کے مسکراتے ہيں

چپّہ  چپّہ   ہے   قاف   کي   تصوير

کيوں نہ ہو  شاہي  يادگار  ہے  يہ

شاعر کا نام : اختر شيراني

پيشکش: شعبہ تحرير و پبشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

ہماري بندريا