• صارفین کی تعداد :
  • 4671
  • 5/22/2012
  • تاريخ :

نيا سال آيا

نيا سال آيا

مبارک   مبارک   نيا   سال   آيا

خوشي کا سماں ساري دنيا پہ چھايا     

 ہزاروں    اميديں    نئي   ساتھ    لايا

ہے    بے فکر‘ بے  غم   ‘ہر  اپنا  پرايا

پلٹ  سي گئي  ہے  زمانے کي کايا

نيا    سال   آيا ،  نيا    سال     آيا

چمن ميں بہاروں کا موسم پھر آيا

ہواۆ ں  نے  ہر پھو ل کو آجگايا       

 پہاڑوں پہ گھنگور بادل ہے چھايا

گھٹاۆ ں نے گلزار کا منہ دھلايا

کوئي چونک اٹھا کوئي مسکرايا

نيا    سال   آيا ،  نيا    سال     آيا

پرندوں نے جنگل ميں منگل منايا

کسي    نے    نيا    آشيانہ    بنايا       

کوئي    چہچہايا     کوئي     گنگنايا

کوئي دانے چن چن کے کھيتوں سے لايا

کسي نے مسرت سے يہ راگ گايا

نيا    سال   آيا ،  نيا    سال     آيا

کہيں  شاخ  پر بلبليں گا رہي ہيں

کہيں نہريں آئينے چمکا رہي ہيں       

 کہيں ننھي کلياں کھلي جارہي ہيں

کہيں کچھ  بطيں تيرتي  آرہي  ہيں

سروں پر ہے چھايا گھٹاۆ ں کا سايا

نيا    سال   آيا ،  نيا    سال     آيا

مگر  اے  عقل  مند،  ہشيار    بچّو

مصيبت ميں سب کے مددگار بچّو      

ہر  اپنے  پرائے  کے  غم خوار بچّو

مجھے  يہ   بتاۆ  سمجھ دار  بچّو

کہ تم کو نئے سال نے کيا سکھايا؟

نيا    سال   آيا ،  نيا    سال     آيا

يہ  کہتا  ہے  پچھلے  برس  کيا  کيا  ہے؟

برس دن ميں کيا کچھ پڑھا ہے لکھا ہے؟          

 مشقت کا کيا  کام  تم  سے  ہوا  ہے؟

يوں ہي کھيل ميں وقت کتنا گياہے؟

کمايا ہے تم نے کہ ہے کچھ گنوايا؟

نيا    سال   آيا ،  نيا    سال     آيا

يہ سوچو کہ اس سال کيا کيا ہے کرنا

مگر ہر  دم  اس  بات  پر  کان  دھر نا 

ہے کن علم کي گھاٹيوں  سے  گزرنا

کہ محنت سنورنا ہے سُستي ہے مرنا

نئے  سال  نے  يہ  سبق  ہے  پڑھايا

نيا    سال   آيا ،  نيا    سال     آيا

شاعر کا نام : اختر شيراني

پيشکش: شعبہ تحرير و پبشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

روضہ تاج محل  (چاندني رات ميں)