• صارفین کی تعداد :
  • 4953
  • 5/22/2012
  • تاريخ :

روضہ تاج محل  (چاندني رات ميں)

تاج محل

کيا چاندني  رات کا  سماں  ہے

جنگل کے نظارے سو رہے  ہيں

موجيں بھي خموش ہو گئي ہيں

دنيا   ساري   نکھر   رہي   ہے

کھيتوں پہ بنوں پہ جنگلوں   پر

پھولوں سے فضا مہک رہي ہے

پيڑوں کے گھنير ے دامنوں ميں

اک   نور  سا  جگمگا  رہا   ہے

گويا  کوئي شمع جل  رہي  ہے

يا  جيسے  چمک  رہا ہو  موتي

سبزے   پہ  پڑا  ہوا   ہے  موتي

موتي  ہيروں  ميں  مل  رہا  ہے

يہ  تاج  ہے  تاج  کا  مکاں  ہے

نکھرا  ہوا  سارا  آسماں   ہے

جمنا  کے  کنارے  سو  رہے  ہيں

گہرائي ميں جا کے سو گئي ہيں

فطرت   کچھ  غور  کر  رہي  ہے

چاندي کي بچھي ہو ئي ہے چادر

خوشبو سے ہوا  بہک  رہي  ہے

ويران   حسين   گلشنوں    ميں

اک   تارہ  سا  جھلملا   رہا  ہے

اور نور ہي نور   اُگل   رہي   ہے

کرنوں سے  جھلک  رہا  ہو  موتي

ہيروں  ميں  جڑا  ہوا  ہے  موتي

يا  نور  کا  پھول  کھل  رہا   ہے

يہ   تاج  محل   کا   آستاں  ہے

شاعر کا نام : اختر شيراني

پيشکش: شعبہ تحرير و پبشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

برسات کي رات