• صارفین کی تعداد :
  • 5117
  • 5/21/2012
  • تاريخ :

برسات کي رات

برسات کي رات

اندھيري  رات  ہے کالي گھٹائيں  چھائے جاتي  ہيں

سياہي پر سياہي مينہ  پہ  مينہ   برسائے   جاتي  ہيں

 کبھي  بجلي  چمکتي   ہے  کبھي   بادل  گرجتے   ہيں

زميں  سے آسماں  تک  موتي  ہي موتي  برستے ہيں

غضب کا شور وغل ہے اس گھڑي برپا مکانوں ميں

نکل کر لوگ اندر  سے  کھڑے  ہيں  سائبانوں  ميں

ہوا کا زور   ‘پچھلي رات‘  اور  بارش کا  طوفاں  ہے

گھنيري جھاڑياں ہيں‘ کھيت ہيں، بن ہے، بياباں ہے

گھروں ميں جوپڑے سوتے ہيں ان کو کيا خبر ہوگي!

بھلا يہ لطف کيوں کر  آئے گا  جس  دم  سحر ہو گي!

مگر پھر فائدہ کچھ بھي  نہ ہو گا  رونے دھونے  سے

اگروہ جان  بھي کھوئيں تو  حاصل جان کھونے  سے

 مہکتي   اور  مہکاتي   ہوائيں   آئے   جاتي   ہيں

بچھے جاتے ہيں پودے ٹہنياں بل کھائے جاتي ہيں

پرندے  ڈر   کے  مارے  کانپتے  ہيں  آشيانوں  ميں

کہ اب بجلي گري اے  لو  وہ  آئي  گلستانوں  ميں

زميں   پر  ابر   کي  حد   سے    زيادہ  مہرباني   ہے

جہاں ديکھو جدھر  ديکھو ادھر پاني ہي  پاني  ہے

جو پودا ہے ہوا کے تيز جھونکوں  سے  پريشاں  ہے

مگر يہ حال  ديکھے  کون  انساں ہے نہ    حيواں  ہے

اٹھيں گے جس گھڑي، جب ہوں گے فارغ اپنے سونے سے

بہت  پچھتائيں  گے آخر وہ ايسا  وقت  کھونے  سے

کہ  گزرا  وقت پھر  واپس  نہيں  آتا  زمانے  ميں!

رہو  مصروف  تم بچو!  سدا  پڑھنے  پڑھانے  ميں!

شاعر کا نام : اختر شيراني

پيشکش: شعبہ تحرير و پبشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

چندر اور بندر (کہاني)