• صارفین کی تعداد :
  • 8583
  • 4/28/2012
  • تاريخ :

کلون نوري کا جنم

کلون نوري کا جنم

منفرد کشميري نسل کي بکرياں اپنے اعليٰ ترين معيار کي اون کي بنا پر دنيا بھر ميں شہرت رکھتي ہيں-مگر ان کي گھٹتي ہوئي تعداد اس صنعت کے ليے سواليہ نشان بني ہوئي ہے- ليکن اب ماہرين کوتوقع ہے کہ حال ہي ميں کشمير کي ايک يونيورسٹي ميں کلون بکري کي پيدائش سے اس کي نسل بڑھانے ميں مدد ملے گي-

سائنس دانوں نے ليبارٹري ميں کشمير کے ہماليائي علاقے ميں پائي جانے والي ناياب نسل کي بکري کي نقل تيار کرلي ہے جس سے قيمتي نسل کي ان بھيڑوں کي بڑے پيمانے پر افزائش کي راہ ہموار ہوگئي ہے-

کشميري نسل کي بکرياں سے دنيا کي اعليٰ ترين اون حاصل کي جاتي ہے - يہ اون  دنيا بھر ميں کشمير کے نام سے پہچاني جاتي ہے- اون کي اس ورائٹي کو مقامي زبان ميں  پشمينہ بھي کہاجاتاہے-

کشمير يا پشمينہ اون، وزن ميں انتہائي ہلکي ہوتي ہے جب کہ يہ  کسي دوسري اون کے مقابلے ميں سردي سے محفوظ رکھنے کي زيادہ صلاحت رکھتي ہے- پشمينہ  سے تيارکردہ شاليں، سوئيٹر اور ملبوسات دنيا بھر کي مارکيٹوں ميں انتہائي مہنگے داموں فروخت ہوتے ہيں جس کا اندازہ صرف اس سے لگايا جاسکتا ہے کہ کشمير وول کا ايک عام مردانہ سويٹر امريکي مارکيٹ ميں ڈيڑھ سو سے دو سو ڈالر ميں بيچا جاتا ہے-

کلون نوري کا جنم

پشمينہ يا کشمير وول ، مخصوص نسل کي بھيڑوں کے سينے کے بالوں سے حاصل ہوتي ہے- مگر اعليٰ اور منفرد اون مہيا کرنے والي اس نسل کي بکرياں کي تعداد انتہائي کم ہے-اور ان کي نسل ميں بڑھوتري کي رفتار بھي بہت سست ہے- جس کي بنا پر پشمينہ کي رسد اس کي طلب کے مقابلے ميں بہت کم ہے- اون کي اس ورائٹي کے مہنگا ہونے کا يہ ايک اہم سبب ہے-

حال ہي بھارتي سائنس دانوں نے جينياتي طريقے سے کشميري نسل کي کم ياب بھيڑ کي نقل يا کلون بنانے  ميں کاميابي کا دعويٰ کرتے ہوئے کہاہے  کہ انہوں نے اپني  پہلي کلون بھيٹر کا نام نوري رکھا ہے-

بھارتي زير اہتمام کشمير ميں واقع شير کشمير يونيورسٹي کے  شعبہ حيوانات کے بائيو ٹيکنالوجي سينٹر کے سائنس دان ڈاکٹر رياض احمد شاہ کا کہنا ہے کہ کلون بکري 9 مارچ کو پيدا ہوئي  ہے جس نے  ناياب کشميري بکريوں کي نسل ميں تيز رفتار اضافے کا راستہ کھول ديا ہے-

کشمیری شال

وادي کشمير کے دستکار پشمينہ کو زيادہ تر شاليں بنانے کے ليے استعمال کرتے ہيں جو مقامي طور پربہت مہنگے داموں، يعني تقريباً 200 ڈالر في شال کي قيمت پر فروخت ہوتي ہيں- جب کہ بيروني ممالک ميں اس کے دام کہيں زيادہ ہيں-

ايک اندازے کے مطابق بھارتي زير انتظام کشمير ميں سالانہ 8 کروڑ ڈالر ماليت کي پشمينہ اون حاصل ہوتي ہے-

وادي کشمير ميں اعليٰ معيار کي اون فراہم کرنے والي بکريوں کي کئي نسليں موجود ہيں، جن ميں تبتي اور منگوليا نسل کي بکرياں خاص طورپر شہرت رکھتي ہيں- ان بکريوں کو چھوٹے چھوٹے ريوڑوں کي شکل برف پوش بالائي پہاڑي علاقوں ميں پالا جاتا ہے-اگرچہ ان کي اون بہت گرم ہوتي ہے ليکن اس ميں پشمينہ جيسي نرمي اور ملائمت نہيں ہوتي -

پشمينہ پيدا کرنے والي بکرياں زيادہ تر لداخ کے دورافتادہ  علاقوں ميں پائي جاتي ہيں- ان کي تعداد بہت کم ہے  اور حاليہ اعداد و شمار ظاہر کرتے ہيں  کہ يہ مخصوص نسل مسلسل گھٹ رہي ہے- جب کہ سرحد کي دوسري جانب چين اپنے علاقے ميں اون فراہم کرنے والي کشميري نسل کي بکريوں کي افزائش پر خاصي  توجہ دے رہاہے-

اقتصادي ماہرين کا کہناہے کہ کشمير کے تاجر بيروني منڈيوں ميں کشميري شالوں کي مانگ پوري کرنے کے ليےپشمينہ اون کا ايک بڑا حصہ اب  چين سے درآمد کررہے ہيں-

کلون نوري کا جنم

کشميري نسل کي پہلي کلون بھيٹر پيدا کرنے کے پراجيکٹ ميں چھ اور سائنس دان بھي  ڈاکٹررياض احمدشاہ کے ساتھ شامل  تھے- انہوں نے ايک نئي ٹيکنيک کے ذريعے نوري نامي  کلون بھيٹر پيدا کي - اس پراجيکٹ کي تکميل ميں انہيں دو سال کا عرصہ لگا-

ميڈيا  رپورٹس کے مطابق ڈاکٹر شاہ کا کہنا ہے کہ انہوں نے کلون بکرياں پيدا کرنے کا ايک نيا اور معياري طريقہ دريافت کيا ہے، جس سے اب  انہيں  دوسري کلون بکري پيدا کرنے ميں  صرف چھ ماہ لگيں گے-

ڈاکٹر شاہ کا کہناہے کہ ان کا طريقہ انتہائي کم قيمت  اور سادہ ہے اور اس ميں وقت بھي کم لگتا ہے-  انہوں نے کہا کہ پشمينہ اون دينے والي پہلي کلون بکري نوري ، کلوننگ کے مروجہ طريقوں کے تحت پيدا نہيں کي گئي، کيونکہ اس کےليے انتہائي مہنگے ہائي ٹيک آلات اور کيميکلز کي ضرورت پڑتي ہے- چنانچہ اس کي بجائے  مقامي وسائل اور سادہ ٹيکنالوجي استعمال کرتے ہوئے ايک نيا طريقہ اختيار کيا گيا-

ڈاکٹر شاہ نے بتايا کہ وہ  اس سے قبل کلون بھينس  بھي پيدا کرچکے ہيں-

کلون نوري کا جنم

ان کا کہناہے کہ وہ کشميري نسل کي بکريوں کي تيز تر افزائش کے ليے کلوننگ کي اپني ٹيکنالوجي سے اس شعبے سے وابستہ افراد کي مدد کريں گے تاکہ ان کي آمدنياں بڑھيں اور ان کي زندگي کامعيار بہتر ہو-

ڈاکٹرشاہ کشميري نسل کے سرخ ہرن کي بھي  کلوننگ کرنا چاہتے ہيں، جس کي تعداد تيزي سے گھٹ رہي ہے اور اس کي نسل دنيا سے مٹنے کا خطرہ پيدا ہوگيا ہے-


متعلقہ تحريريں:

فيس بک کا زيادہ استعمال اداسي کا موجب، تحقيق