• صارفین کی تعداد :
  • 807
  • 2/15/2012
  • تاريخ :

ضرب المِثل اشعار

کتاب

*آ عندليب مِل کے کريں آہ و زارياں

تُو ہائے گُل پُکار ميں چِلّاؤ ں  ہائے دِل

شاعر: سيّد محمد خان رِند

 *’اب کے ہم بچھڑے تو شايد کبھي خوابوں ميں مِليں‘

جس طرح سوکھے ہوئے پھول کتابوں ميں مليں

شاعر: احمد فراز

 *’ايک معمّہ ہے سمجھنے کا نہ سمجھانے کا‘

زندگي کاہے کو ہے خواب ہے ديوانے کا

شاعر: فاني بدايوني

 *’پھرتے ہيں مير خوار کوئي پُوچھتا نہيں

اِس عاشقي ميں عِزّتِ سادات بھي گئي‘

شاعر: مير تقي مير

* ’تھا جو ناخوب بتدريج وہي خوب ہوا‘

کہ غلامي ميں بدل جاتا ہے قوموں کا ضمير

شاعر: علّامہ اقبال

بشکریہ : شاعری ڈاٹ کلان ٹیم  ڈاٹ کام

پيشکش : شعبۂ تحرير و پيشکش تبيان