• صارفین کی تعداد :
  • 3582
  • 2/13/2012
  • تاريخ :

حج کي تکميل

بسم الله الرحمن الرحیم

حج کي تکميل

قالَ الصادِقُ(ع):

”‌اِذاحَجَّ اَحَدُکُمْ فَلْيَخْتِمْ حَجَّہُ بِزِيارَتِنَا لِاَ نَّ ذٰلِکَ مِنْ تَمامِ الحَجِّ“-

امام جعفر صادق (ع) اسماعيل ابن مھران سے فرماتے ھيں :

”‌جب بھي تم ميں سے کوئي شخص حج انجام دے اسے چاہئے کہ اپنے حج کو ھماري زيارت پر تمام کرے کيونکہ يہ حج کے کاملهونے کي شرطوں ميں سے ھے “-

رسول خدا صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم کي زيارت

قَالَ رَسُولُ اللّٰہِ (ص):

مَنْ حَجَّ فَزٰارَ قَبْري بَعْدَ مَوْتي کَانَ کَمَنْ زٰارَني في حَيٰاتِي-

رسول خدا صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم نے فرمايا:

”‌جس نے حج کيا اور ميري موت کے بعد ميري زيارت کي وہ اس شخص کے مانند ھے جس نے ميري زندگي ميں مير ي زيارت کي ھے“-

پيغمبر (ص)کے ساتھ حج

”‌عَنْ اَبِي عَبْدِ اللّٰہِ(ع) قَالَ:

اظ•ِنَّ زِيٰارَةَ قَبْرِ رَسُولِ اللّٰہِ صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم تَعْدِلُ حَجَّةً مَعَ رَسُولِ اللّٰہِ مَبْرُورَةً-

امام محمد باقر(ع) فرماتے ھيں :

”‌بلا شبہ رسول خدا صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم کے قبر کي زيارت (کاثواب) آنحضرت(ص) کے ساتھ کئے جانے والے ايک مقبول حج کے برابر ھے “-

عاشقانہ زيارت

قَالَ رَسُولُ اللّٰہِ (ص):

مَنْ جٰاءَ ني زٰائِراً لايَعْمَلُہُ حٰاجَةً اِلاّٰ زِيٰارَتي، کَانَ حَقّاً عَلَيَّ اَنْ اَکُونَ لَہُ شَفيعاً يَوْمَ الْقِيٰامَةِ-

رسول خدا صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم نے فرمايا :

”‌جو شخص ميري زيارت کو آئے اور ميري زيارت کے علاوہ کوئي اور کا م نہ کرے تو مجھ پر يہ حق ھے کہ ميں روز قيامت اس کي شفاعت کروں“ -

فرشتو (ع) کي ماموريت

قَالَ رَسُولُ اللّٰہِ (ص):

خَلَقَ اللّٰہُ تَعَاليٰ لَيْ مَلَکَيْنِ يَرُدَّانِ السَّلاٰمَ عَلٰي مَنْ سَلَّمَ عَلَيَّ مِنْ شَرْقِ البِلاٰدِ وَغَرْبِھٰا،اِلاّٰ مَنْ سَلَّمَ  عَلَيَّ في دٰاري فَاِنّي اَرُدُّ عَلَيْہِ السَّلاٰمَ بِنَفْسي-

رسول خدا صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم نے فرمايا:

”‌خدا وند عالم نے ميرے لئے دو فرشتے خلق فرمائے ھيں کہ جو شخص بھي مشرق ومغرب ميں مجھے سلام کرتا ھے اور مجھ پر درود بھيجتا ھے وہ اس کا جواب ديتے ھيں مگر جو شخص ميرے گھر آتا ھے اور مجھے سلام کرتا ھے تو ميں خودا س کے سلام کا جواب ديتاهو ں “-