• صارفین کی تعداد :
  • 3116
  • 2/8/2012
  • تاريخ :

چڑيوں کي شکايت

چڑیوں کی شکایت

چڑيوں  نے  بے طرح ستايا  ہے

چھت پہ ان کو جہاں ملي ہے جگہ

عين   ميرے   پلنگ   کے   اوپر

تار بجلي کا ہے جو چھت پہ لگا

کوئي کھونٹي ہو، طاق ہو، در ہو

سر پہ  بيٹوں  کا  مينہ  برستا  ہے

تکيہ پر‘   ميز  پر‘    کتا بوں   پر

حصہ مجھ کو بھي کچھ ملا ہے ضرور

ان کي چوں چوں کا راگ سن کر دل

سب کے سر پر خدا کا ہے سايہ

اس قدر بيٰٹ کر تي ہيں کم بخت

صبح سے لڑ رہي ھيں آپس ميں

پڑھ نہيں سکتا لکھ نہيں سکتا

ايسا معلوم  ہو تا ہے  گويا

ميرے کمرے کو گھر بنا يا ہے

اک نہ اک گھونسلہ بنايا ہے

ہے جو حصہ وہ ان کو بھايا  ہے

وہ تو ميراث ہي ميں پايا  ہے

ان کي  جاگير ميں وہ آيا  ہے

بے ڈھب ايسا يہ ابر چھايا ہے

مہر کا  سا  نشاں  بنايا   ہے

جب چڑا تنکے لے  کر آيا  ہے

گانا سننے  سے تنگ  آيا  ہے

مجھ پر ان کے پروں کا سايہ ہے

ناک ميں دم ہر اک کا آيا ہے

سر پہ  سارا  مکاں اٹھايا  ہے

اس قدر  شور وغل مچايا  ہے

ميرا  کمرہ  نہيں  پرايا  ہے

شاعر کا نام : اختر شيراني

پيشکش: شعبہ تحرير و پبشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

شملے کي ريل گاڑي