• صارفین کی تعداد :
  • 3007
  • 2/8/2012
  • تاريخ :

جگنو

جگنو

کنارے جھيل کے پھر تا ہے جگنو

ہوا کي گود ميں اک روشني ہے

ستارہ  سا چمکتا  ہے  فضا  ميں

کوئي مہتا ب سي چھوٹي ہے گويا

اندھيرے  ميں سنہري تيتري  ہے

ہري شاخوں پہ جگنو چھا گئے ہيں

منور سارے باغ اور بن ہيں ان سے

نہيں  آرام  سے  سوتے  مگر  يہ !

کبھي اڑتا کبھي گرتا ہے جگنو

کہ ننھي شمع کوئي اڑ رہي  ہے

شرارہ  اڑتا پھرتا ہے ہوا  ميں

ستارے کي کرن ٹوٹي ہے گويا

کہ سونے کي کوئي ننھي پري ہے

زميں  پر يا ستارے  آ گئے   ہيں

اندھيري ڈالياں روشن ہيں ان سے

کہ اڑتے پھرتے ہيں يوں رات بھر يہ!

شاعر کا نام : اختر شيراني

پيشکش: شعبہ تحرير و پبشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

دريا کنارے چاندني