• صارفین کی تعداد :
  • 699
  • 12/29/2011
  • تاريخ :

دور حاضر ميں  پيش آنے والي  تبديلياں

کتابیں

جيسا کہ ہم نے پہلے عرض کيا ہے کہ بہت لکھا جا رہا ہے مگر ان ميں اس دہائي کي حسّيت خال خال نظر آتي ہے مگر جن افسانوں ميں يہ Sensbilityکچھ ہے و ہ ہيں-آوارہ کتّا (ديپک کنول)، چوتھا فن کار (شبير احمد)، دہشت گرد، کج فہمي (محمدغياث الدين)، زنجير بني رہنا (جمشيد مرزا)، آس پاس(مظہر سليم)، اصليت (يٰسين احمد) کڑوے گھونٹ(محمود ايوبي) زيرِ لب (اظہا عثماني) ، موسم (طاہر نقوي)، سرحديں (امر ناتھ دھمچہ)، جنگل کہاني   ( عرفان جاويد)، اُجلي چادريں (خديجہ زبير احمد)، اعتقاد (نثار راہي)، تقسيم (حسن جمالي) ،جالے ميں پھنسي مکڑي (شاہد جميل)، ايک ذرا سي بات( مشتاق احمد نوري)، ريفليسيا (ف- س- اعجاز) ، اُدھڑا ہوا فراک (صادقہ نواب سحر)، کنيا دان (اظہر عثماني)، مہک (نکہت فاطمہ)،نغمہ آشوب (فياض رفعت)، بند کمرے ميں (شکيلہ رفيق)، نج کاري (پروين عاطف)، گھر باہر (نسيم بن آسي)، مٹھّي بھر ريت ( فريدہ زين)، جلا ديا شجر جاں (مقدر حميد)، خدا کا بندہ (رحمن عباسي)، سور ج ڈوب چکا تھا (نو شين خاں) ايک دہشت گرد کا بيان (مراق مرزا)، تم …کون (غزالہ قمر)، آٹش فشاں (عشرت ظہير) وغيرہ- عصري معنويت کے گہرے شعور کے کرب ناک نقوش بھي جن افسانوں ميں اُجاگر ہيں وہ افسانے درج ذيل ہيں- کٹے ہوئے تار (ساجد رشيد)، ايک اور سريتا( غزالہ قمر)، ايڈز (ناوک حمزہ پوري)، صليب ايک نشاني (وسيم عباس) ، واچ ڈاگ (مجيد سليم)، کنتو؟ پرنتو؟ ليکن؟ مگر…؟ (شبير احمد)، کميشن کا مشن (محمد طارق)، انٹر نيشنل (علي محمود)، تکون (امجد طفيل)، قتل گاہ (ديپک کنول)، سدھو بابا (نکہت فاطمہ)، بليک آوءٹ (ايم - مبين)-

آج کي کہاني احتجاج کي نہيں، غير مرئي احساس کي ہے جن ميں ايک طرح کا تفکر ہے اور جس تفکر کو شاہد اختر نے بڑا گھر (فروري 2010ئ، آج کل) ميں خوبي سے اجاگر کيا ہے کہ زندگي اتني آسان نہيں جتنا کہ ہم سمجھتے ہيں کيونکہ زندگي کسي ايک اصول يا نظريے کي پابند نہيں ہے-اسرار گاندھي، ساجد رشيد اور مشرف عالم ذوقي نے مذہبي دباوء، نسل کُشي،  مافيا گروپ، آنر کلنگ اور برين واشنگ جيسے موضوعات کو بھي خوبي سے احاطہء تحرير ميں لينے کي کوشش کي ہے- تناوء سے بھري، بيحد اُلجھي ہوئي زندگي ميں مفاہمت کا جذبہ کس طرح لہريں ليتا ہے، اس کا فنکارانہ اظہار بھي ان کي کہانيوں ميں موجود ہے- ’’بادشاہ ، بيگم اور غلام‘‘ (نيا ورق، جنوري 2010ئ) اس کي واضح مثال ہے- اس کہاني ميں ساجد رشيد نے ايگو پرابلم کو منفرد انداز ميں پيش کيا ہے چونکہ وہ کہاني بننے کے ہُنر سے خوب واقف ہيں لہٰذا ملازم پيشہ مياں بيوي کے ذہني اور جسماني تعلقات اور اُن کي سوچ کو جس زاويے سے خلق کيا ہے وہ آج کي Ironyکو پيش کرتے ہيں-

ترنم رياض کے افسانہ چار دن (سب رس، ستمبر 2010ء) اور غنچے (ايوان اردو، جون 2008ئ) ميں تازگي ہے-انھوں نے کلّي طور پر زندگي کا ويژن تلاش کيا ہے- بالکل اس طرح جيسے ہر بڑے فنکار کي اپني ايک ذاتي بصيرت ہوتي ہے جس کے توسط سے وہ شاہکار خلق کرتا ہے-احمد صغيرکا افسانہ چھوٹي سي ايک چنگاري (عہد نامہ رانچي اکتوبر 2010ء) شعلہ کا روپ اختيار کرتي ہوئي نظر آتي ہے-قاسم خورشيد، اندر بارش باہر بارش (ايوان اردو، نومبر 2009ء) اور باگھ دادا (ايوان اردو، اگست 2008ء) ميں نہايت باريکي سے چھوٹے چھوٹے احساسات کو بيان کرنے ميں کامياب ہوئے ہيں-

 

تحرير : پروفيسر صغير افراہيم

پيشکش : شعبۂ تحرير و پيشکش تبيان