• صارفین کی تعداد :
  • 11173
  • 12/8/2011
  • تاريخ :

بھول

مسکراہٹ

راہ گير :(بچے سے) ”‌ تم نے اپني انگلي پر يہ دھاگا کيوں باندھا ہوا ہے؟“

بچہ: ”‌ يہ دھاگا امي نے باندھا ہے تاکہ ميں خط ڈالنا نہ بھول جا ؤ ں-“

راہ گير :”‌ تو کيا تم نے خط ڈال ديا ؟“

بچہ: ”‌ نہيں امي مجھے خط دينا بھول گئي ہيں-“

 

بشکريہ ؛ بزم ساتهي

پيشکش : شعبۂ تحرير و پيشکش تبيان