• صارفین کی تعداد :
  • 735
  • 11/28/2011
  • تاريخ :

بيسويں صدي کي آخر دو دہائيوں ميں اُردو ناول کے موضوعات و رجحانات (چھٹا حصّہ)

کتاب

"قصور لوگوں کا نہيں ان کا ہے جنہوں نے انہيں بے بس کرديا- ايک صدي سے ملک خانہ جنگي کا شکار ہے- کھبي مغلوں کے شہزادے آپس ميں لڑتے مرتے رہے پھر مرہٹے، سکھ، گورے عام آدمي نےسب دکھ اٹھايا ہے وہ کس طرح دہلي کے بادشہ کے لئے کچھ قربان کرسکتے ہيں جس کا چہرہ کھبي رعايا نے نہيں ديکھا-"

قرۃ العين حيدر نے "گردش رنگ چمن" (1984ء) اور "چاندني بيگم" (1989ء) ميں پلاٹ کي بنياد دستاويزي مطالعہ کے بعد اٹھائي- ان دونوں ناولوں ميں مخصوص جاگيرداري نظام کي توڑ پھوڑ، تقسيم کو قبول کرتے ہوئے برصغير کے لوگوں اور حکمرانوں کے ذہن کو سمجھتے ہوئے انگريزي کي حکمراني کو صحيح قرار دينے والے نوجوان نسل ہے- جو ماضي کي غلطيوں سے سيکھ رہي ہے اور حقيقت پسند رويئے کي حامل ہے-

جميلہ ہاشمي نے "دشتِ سوس" (1983ء) ميں حقيقت پسند کرداروں کي نفسياتي تحليل کي ہے اور اپنے ناولوں ميں عورت کي داخلي کيفيات کي تصوير کشي کي ہے-

فہميدہ رياض کے کراچي (1996ء) کا موضوع شہر کراچي کي سياسي صورتحال، دہشت گردي، قتل و غارت اور بدامني ہے- مجموعي طور پر بيسويں صدي کي آخري دو دہائيوں کے دوران منظر عام پر آنے والے ناولوں کے موضوعات و رجحانات فرد کي تنہائي، ناآسودگي، خطے کي بدلتي ہوئي صورتحال، افغان مہاجرين کي وجہ سے پاکستان ميں پيدا ہونے والے مسائل، تاريخ کے تناظر ميں حال کا جائزہ، سقوط ڈھاکہ، سياسي جبر، سرمايہ دارنہ نظام کي قباحتي، تيسري دينا کے ممالک کا استحصال، اپني تہذيب و ثقافت سے بے زاري اور مغربي تہذيب کي تقليد، تيز رفتاري اور مادہ پرستي پر مبني زندگي، بزرگوں سے بيزاري، عورتوں کي سماج ميں حيثيت، اپني جڑوں کي تلاش زير بحث لائے گئے- يہ رجحانات اس امر کي عکاسي کرتے ہيں کہ جبر کي فضا ميں سانس ليتا ہوا ناول نگار اپنے سماج کي تصوير کشي ناول کے فن کي صورت ميں پيش کرنے سے نہيں ہچکچاتا اور يہ حقيقي رويئے کسي بھي صنف کو استناد کا درجہ بخشے ہيں-

تحرير: ڈاکٹر عقيلہ جاويد

پيشکش : شعبۂ تحرير و پيشکش تبيان