• صارفین کی تعداد :
  • 1749
  • 11/19/2011
  • تاريخ :

ز حالِ مسکيں مکن تغافل دُرائے نيناں بنائے بتياں

اداس چہره

ز حالِ مسکيں مکن تغافل دُرائے نيناں بنائے بتياں

کہ تابِ ہجراں ندارم اے جاں نہ لے ہو کاہے لگائے چھتياں

شبانِ ہجراں دراز چوں زلف و روزِ وصلت چوں عمرِ کوتاہ

سکھي! پيا کو جو ميں نہ ديکھوں تو کيسے کاٹوں اندھيري رتياں

يکايک از دل دو چشم جادو بصد فريبم ببردِ تسکيں

کسے پڑي ہے جو جا سناوے پيارے پي کو ہماري بتياں

چوں شمعِ سوزاں، چوں ذرہ حيراں، ہميشہ گرياں، بہ عشق آں ما

نہ نيند نيناں، نہ انگ چيناں، نہ آپ آويں، نہ بھيجيں پتياں

بحقّ ِروزِ وصالِ دلبر کہ دادِ ما را غريب خسرو

سپيت من کے ورائے راکھوں جو جائے پاۆ ں پيا کي کھتياں

شاعر کا نام :امير خسرو دہلوي


متعلقہ تحريريں:

قوميت کي تعمير ميں زبان کي اہميت (حصّہ چهارم)