• صارفین کی تعداد :
  • 1682
  • 11/18/2011
  • تاريخ :

اثبات نبوت پر ايک نظر

بسم الله الرحمن الرحیم

نبوت ايک ايسا عظيم و مقدس مقام و منصب ھے جس پر فائز ھونے والا شخص لوگوں کے درميان مومن ھوجاتا ھے، ان کے لئے محبوب و مقدس بن جاتا ھے اور اس کي اطاعت و پيروي لوگوں کے لئے شرعي اور ديني وظيفہ اور ذمہ داري ھوجاتي ھے- يھي وجہ ھے کہ تاريخ ميں اکثر ايسا ھوا ھے کہ بعض قدرت پرست اور دوسروں سے سوئے استفادہ کرنے والے افراد نبوت کا کاذب اور بے بنياد دعويٰ کربيٹھے ھيں تاکہ نبوت کے ظاھري فوائد سے مستفيد ھوتے ھوئے لوگوں کو اپنا گرويدہ بنا ليں اور ان پر غلبہ حاصل کرليں- يھي امر اس بات کا موجب ھوجاتا ھے کہ ھم ان راھوں اور دلائل کو پھچانيں جو نبوت کا دعويٰ کرنے والے کے دعويٰ کي صداقت وحقيقت کو اضح اور بيان کرسکيں- نوبت کا دعوي ٰکرنے والے شخص کي صداقت تين راھوں سے ثابت ھو سکتي ھے:

(1) قرائن و شواھد

نبوت کا ادعا کرنے والے شخص کي صداقت کو سمجھنے کا ايک راستہ يہ ھے کہ اس کي گذشتہ زندگي، اخلاقي صفات وخصوصيات، اس کے پيغام، وہ معاشرہ جس ميں دعوت دي جائے اور اس سے مربوط دوسرے تمام امور کا عميق تجزيہ اور پھر ان تمام نکات کو يکجا کرکے اس کي صداقت پر غوروفکر کيا جائے-

(2) گذشتہ نبي کي تائيد

ايسا شخص جس کي نبوت، دلائل کے ذريعہ ھمارے نزديک ثابت اور مسلم ھے، اگر يہ خبر دے گيا ھو کہ ميرے بعد فلاں فلاں خصوصيات وصفات کے ساتھ خدا کے طرف سے ايک نبي مبعوث ھوگا اور يہ تمام خصوصيات وصفات اس شخص پر منطبق ھوتي ھوں جو نبوت کا دعويٰ کررھا ھے تو ان تمام افراد کے لئے جو گذشتہ نبي پر ايمان رکھتے ھيں اور اس کي طرف سے دي گئي بشارت سے آگاہ بھي ھيں ، شک وشبہ کي کوئي گنجائش باقي نھيں رہ جاتي کہ يہ شخص نبي خدا ھے-

(3) معجزہ

انبياء کرام عام طور پر معجزے کے ذريعہ اپني نبوت کوثابت کيا کرتے تھے- قرآن مجيد کي آيتوں سے واضح ھوتا ھے کہ امتيں اپنے نبي سے معجزے کي درخواست کيا کرتي تھيں اور جب بھي اس طرح کي کوئي درخواست حق وحقيقت کي جستجو کي خاطر ھوتي تھي، انبياء معجزہ پيش بھي کرتے تھے البتہ اکثر ايسا بھي ھوتا تھا کہ نبي خدا کي طرف سے اتمام حجت اور حق کے روشن ھوجانے کے باوجود بھي مشرکين تمسخر، استھزاء اوردوسرے غلط افکار کي بنا پر دوبارہ معجزے کي خواھش کرتے تھے- فطري بات ھے کہ ايسے موقعوں پر ان افراد کي خواھش کو کوئي اھميت نھيں دي جاتي تھي اور کوئي دوسرا نيا معجزہ وقوع پذير نھيںھوتا تھا-

تعريف معجزہ

معجزہ فاعل اعجاز ھے جس کے معني لغت ميں”‌عاجز کرنے“ يا ”‌عاجز پانے“ کے ھيں- اور اصطلاحاً معجزہ ايک ايسا غير عادي اور خارق العادہ امر ھے جو خدا کے ارادے اور مرضي سے اس شخص سے صادر ھوتاھے جونبوت کا دعويدار ھو-

خواجہ نصير الدين طوسيغ؛، کشف المراد ميں فرماتے ھيں : معجزہ يعني ثبوت امر غير عادي يا نفي امر عادي ،خارق العادةاور مطابقت دعويٰ کے ساتھ - ( البتہ اس تعريف ميں ”‌خارق العادت کے ساتھ “ والي عبارت زائد ھے کيونکہ ”‌ غير عادي ھونا اسي معنيٰ ميں ھے -

اس کائنات ميں رونما ھونے والے تمام امور کي دو قسميں کي جاسکتي ھيں:

(الف) اموري عادي

يعني ايسے امور جو اسباب وعلل کي بنا پر وقوع پذير اور مختلف تجربات وآزمايشات کے ذريعے قابل شناخت ھوتے ھيں-

(ب) امور غير عادي

يعني ايسے امور کہ آزمايشات وتجربات حسي کے باوجود جن کے تمام علل و اسباب کي شناخت نھيں کي جاسکتي - يہ ايسے امور ھوتے ھيں جن کي پيدائش ميں تجربات حسي سے ماوراء ايک دوسري نوع کے اسباب وعلل کارفرما ھوتے ھيں- معجزہ اسي قسم سے ھے-

امور غير عادي يا خارق العادہ بھي دو طرح کے ھوتے ھيں:

(الف) ايسے امور کہ جن کے اسباب و علل اگرچہ عادي نھيں ھوتے ليکن ان امور کو اسباب غير عادي کے ذريعہ بھي کم و بيش حاصل کيا جا سکتا ھے يعني مخصوص تعليم و رياضت کے ذريعہ ان تک دسترسي پيدا کي جاسکتي ھے مثلاً جادوگري يا ساحري وغيرہ-

(ب) ايسے امور کہ جن کا وقوع پذير ھونا صرف خدا کے مخصوص ارادے اور اذن سے مربوط ھوتا ھے ان کا اختيار کسي بھي ايسے شخص کے پاس نھيں ھوتا ھے جو ھدايت الٰھي کے تحت زندگي نھيں گزارتا- يھي وجہ ھے کہ يہ امور دو بنيادي خصوصيات کے حامل ھوتے ھيں:

اول: قابل تعليم و تعلّم نھيں ھوتے-

دوم: کوئي طاقت ان کو مغلوب نھيں کرسکتي-

جب کبھي بھي ايسا فعل کسي ايسے شخص سے صادر ھوتا ھے جونبوت کا دعويٰ کرتا ھے تو اسي کو معجزہ کھا جاتاھے اور يھي اس کے دعوے کي صداقت پردليل ھوتا ھے-

صدق ادعائے نبوت پر معجزے کے ذريعے استدلال واثبات دوسري ھر چيز سے زيادہ اثبات وجود خدا اور اس کي بعض صفات پر موقوف ھے- اس استدلال کو مندرجہ ذيل طريقے سے بيان کيا جاسکتا ھے:

1) خدا حکيم ھے-

2) حکيم نقص غرض وغايت نھيں کرتا يعني ايسا کام نھيں کرتا جو اس کے ھدف کي نفي کرتا يا اس کے ھدف کے خلاف نتيجہ پيش کرتا ھويا پھر اس کو اس کے ھدف سے دور کرديتا ھو-

3) خدا ئے حکيم کا ارادہ يہ ھے کہ لوگ ھدايت حاصل کر ليں ،يعني خدا چاھتا ھے کہ بني آدم ھدايت يافتہ ھوں نہ کہ گمراہ-

4) معجزے کو ايسے شخص کے اختيار ميں دينا جو نبوت کا کاذب دعويٰ کرتا ھواور لوگوں کي گمراھي کا باعث بنتا ھو ارادہ خدا اور غرض ھدايت کے خلاف ھے-

مذکورہ نکات سے يہ نتيجہ حاصل ھوتا ھے کہ ھرگز ايسے شخص کے ذريعہ معجزہ صادر نھيں ھوتا جو نبوت کا جھوٹا دعويٰ کرتا ھو-

 منبع : اھل البيت پورٹل ڈاٹ کام

پيشکش : شعبۂ تحرير و پيشکش تبيان