• صارفین کی تعداد :
  • 949
  • 10/24/2011
  • تاريخ :

ساقي اٹھ تلوار اٹھا

ساقی اٹھ تلوار اٹھا

(يونان کے ايک رند مگر محب وطن شاعري کے نقط نظر سے)

پھر   امن   کي  رنگيں   وادي  سے  ہنگامہء  گير  و  دار  اٹھا

دنيائے   سکوں   کے   پہلو  ميں   سر   فتنہ   حشر  آثار   اٹھا

ہستي   کے   بہاريں   مطلع    پر  پھر   ابر   شرارہ   بار    اٹھا         

                بيکار  ہيں   چنگ  و   تار   اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

پھر   کار گہ  انساني  پر خونخواري  و   وحشت   پھيلي   ہے

اقصائے زميں ہے فتنوں  سے  پُر اور فتنوں کي ہيبت  پھيلي  ہے

يزداں کي حکومت مٹ سي گئي شيطاں کي حکومت پھيلي ہے            

                پھر       غلغلہ       تاتار      اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

پھر   طبل  وغا  کا  شور ہوا،  آفاق    کے  ايواں   کانپ  اٹھے

پھر باغ و گلستاں کانپ اٹھے، پھر دشت و خياباں کانپ اٹھے

صحرا  و  قہستاں   کانپ  اٹھے،  دريا  و  بياباں   کانپ  اٹھے           

                آوازہء    گير     و     دار     اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

مغرب  کي  فضائے  بحري  سے  طوفاں  کي صدائيں  آتي  ہيں

يا  جّو  ہوا  ميں   مرگ  و  ہلاکت  کي  پرياں  لہراتي  ہيں

اور برق و شرر  کے  سازوں  پر  اک  نغمہء  خونيں گاتي   ہيں        

                پھر      صلصلہ      پيکار     اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

سربازوں کے جنگي نعروں سے پھر ساحل و ميداں گونجتے ہيں

طياروں کي  آتش  بازي  سے  ہامون  و  کہستاں  گونجتے  ہيں

درياğ کي تہ ميں  موتوں کے بپھرے ہوئے طوفاں گونجتے ہيں       

                يا    ديو    شرارہ    خوار    اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

سن   وقت  کي   آواز   آتي   ہے  وہ   دورہء  غفلت  ختم   ہؤا

ساغر  کو  الٹ، بربط  کو  اٹھا،  ہنگامہ   عشرت   ختم   ہؤا

جانبازي   کي   ساعت   آپہنچي ، رويائے   محبت   ختم   ہؤا             

                ہيں   جام   و   سبو  بيکار  اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

پہلو  سے  ہٹا  دے  دستہ   گل،  ہنگام  بہاراں  رخصت   ہے!

نظروں  ميں  نقشہ  ميداں   کا   تزئين   گلستاں   رخصت   ہے

پھر  صبح  قيامت  آ پہنچي، پھر   لطف  شبستاں  رخصت ہے            

                پھر    مہر   قيامت   بار    اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

دشمن   ہے   قريب   اور   خطرے    ميں  ہے  ماہ  لقائے  آزادي

دل     ميرا    نثار     آزادي،  جاں     ميري     فدائے     آزادي

اٹھ جلد  کہ غاصب  چھين  نہ  ليں  ہاتھوں  سے  لوائے  آزادي          

                وہ        ہلہلہ       يلغار       اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

غيرت ، کہ  عدو  کے   نرغے ميں  ہے خاک وطن، بستان   وطن

ناپاک  قدم  سے   غيروں    کے    آلودہ   نہ   ہو   ميدان   وطن

يہ   عمر  جواں  گلکار    وطن ، يہ  عشق  حسيں  قربان  وطن          

                پھر      ولولہ      پيکار       اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

وہ  ديکھ، وطن  کي   سرحد  پر  دشمن کے عساکر  چھانے لگے

موجوں کي طرح بل کھانے  لگے، طوفاں  کي  طرح لہرانے لگے

دامان   افق  سے   طيارے   آگ    اور   دھواں   برسانے   لگے        

                يا     ابر    سر     کہسار     اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

ہم مست ہيں  ليکن  تيغ   بکف  ميدان ميں  جانے  والے  ہيں

اعدائے   وطن   کے  سينوں  پر  بجلي  سي  گرانے  والے   ہيں

اور اُن کے وطن ميں اُن کي   جگہ   فرياديں   بسانے  والے  ہيں       

                يہ    چنگ   ہٹا،  يہ    تار   اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

دشمن  کا  لہو  پينا  ہے  ہميں  رہنے دے    مئے گلفام   نہ  دے

تلوار  اٹھانے  والوں  کے  ہاتھوں  ميں   چھلکتا   جام   نہ  دے

صہبا  کي  جگہ رقصاں ہے لہو، مستي کا فريب خام   نہ   دے           

                يہ     جام     مئے     گلنار    اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

ناموس  وطن  کو  غيروں   کے  پنجے   سے   بچانے   جاتے  ہيں

مدت سے ہيں پياسي تلوار يں پياس ان کي  بجھانے جاتے ہيں

دشمن کي تڑپتي لاشوں  کا  کھيل  ان  کو  دکھانے  جاتے  ہيں           

                لا      برق      فنا      آثار     اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

وہ  ديکھ، اس  اونچي  چوٹي  سے  جو  دور،  دکھائي  ديتي  ہے

ليلائے   وطن   کي    درد    بھري    آواز    سنائي    ديتي    ہے

جو   اڑتے   ہوئے   پرچم   کے تلے  رو  رو  کے دہائي  ديتي  ہے  

                سن ،  حشر  سر   کہسار   اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

ميں  رک  نہيں  سکتا  جاğ گا    اور  دھوم   مچاتا  جاğ گا

بربط   کي   طرح   ان   واديوں   ميں   تلوار   بجاتا  جاğ  گا

اس   ساز   حسيں  پر  حب  وطن  کے  نغمے  سناتا  جاğ  گا           

                بربط     کو    ہٹا،   ہتيار   اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

اٹھ،نام وشرف کي موت اچھي، بے نام و شرف  کے  جينے  سے!

ہے   خون   عدو  پينے  ميں  سوا   لذت  مئے  سادہ   پينے  سے

بپھري  ہوئي  اک  مستانہ  صدا  آتي  ہے فضا  کے  سينے  سے        

                پھر     ہمہمہء    سرشار     اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

پھر  چشم   براہِ   جرات   ہے   ليلائے   شہادت   ميداں   ميں

شاداب  ہؤا   کرتي   ہے   سدا  ہر  قوم کي عظمت ميداں  ميں

تلواروں کي خونيں بارش  سے  کھل جاتي ہے جنت ميداں ميں           

                گلہائے    طرب    کا    ہار    اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

بجلي کي طرح رگ رگ ميں  رواں پھر  عشق  تپان  ملت  ہے

شيرانہ   سوئے   جنگاہ   رواں  ايک   ايک   جوان   ملت   ہے

اور قومي نشاں ميں  بال  فشاں  پھر  شوکت و شان  ملت  ہے             

                وہ   رايت    عظمت   بار   اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

خاموش کر  اپنے  بربط  کو  خوابوں  کا  اثر   ہر  تار  ميں  ہے

وہ لطف  کہاں اس ساز ميں جوتلوار کي اک  جھنکار  ميں  ہے

ہنگامہ    قتل   و   غارت   کا   ارمان   دل   سرشار   ميں   ہے         

                يہ    بربط    راحت    بار    اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

ہشيار،  کہ   ہو  جائے   نہ    کہيں  پامال   خزاں،  گلزار  وطن

گلہائے  ارم  سے  بڑھ کے  ہميں  محبوب ہے اک اک خار وطن

گہوارہ  ماہ   و   انجم     ہے    رفعت     کدہء   کہسار    وطن           

                پھر   دل   ميں   سرِ   پندار  اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

مانا    کہ    کوئي    ذرہ    بھي   يہاں ،  آزاد  غم   ايّام    نہيں

قابو ميں کسي کے صبح نہيں، قبضے  ميں کسي  کے شام  نہيں

پر  عشق  وطن  کے  ماروں کا  مرنے کے  سوا   کچھ   کام  نہيں    

                آنکھيں ہوئيں کيوں خونبار اٹھا!

اُٹھ    ساقي    اُٹھ     تلوار    اُٹھا!

شاعر: اختر شيراني

پیشکش: شعبۂ تحرير و پيشکش تبيان


 متعلقہ تحريريں :

"قديم شعراء کے کلام کے لغات، وقت کي اہم ضرورت"

جشن بہار

محاورہ، روزمرہ، ضرب المثل اور تلميح ميں فکري اور معنوي ربط (حصّہ چهارم)

محاورہ، روزمرہ، ضرب المثل اور تلميح ميں فکري اور معنوي ربط (حصّہ سوّم)

محاورہ، روزمرہ، ضرب المثل اور تلميح ميں فکري اور معنوي ربط (حصّہ دوّم)