• صارفین کی تعداد :
  • 3772
  • 10/10/2011
  • تاريخ :

تمباکو نوشي سے تپ دق ميں اضافے کا خطرہ

تمباکو نوشی
محققين کا کہنا ہے کہ 2050ء تک تمباکو نوشي کے باعث تپ دق کا مرض چار کروڑ افراد کي موت کا سبب بن سکتا ہے-

’برٹش ميڈيکل جرنل‘ ميں شائع ہونے والي تحقيق ميں کہا گيا ہے کہ تمباکو نوشي کي وجہ سے پھيپھڑوں کو ناکارہ بنا دينے والي متعدي بيماري تپ دق يا ٹي بي ميں مبتلا ہونے کے امکانات ميں اضافہ ہو جاتا ہے-

تحقيق کے مطابق بيشتر ممکنہ کيسز افريقہ، مشرقي مڈيٹرينيئن اور جنوب مشرقي ايشيا ميں سامنے آئيں گے-

ليکن محققين کا کہنا ہے کہ تمباکو نوشي کے خلاف موثر مہم چلا کر اور سگريٹ کي خريد و فروخت پر قابو پا کر 2050ء تک دو کروڑ 70 لاکھ اموات سے بچا جا سکتا ہے-

يہ تحقيق يونيورسٹي اور کيلي فورنيا کي ايک ٹيم نے کي ہے-


متعلقہ تحريريں :

موبائل فون سے دماغ کے سرطان کا خطرہ :عالمي ادارہ صحت کي رپورٹ

وائرس سے کينسر کے علاج کي اميد

مٹاپے سے نمٹنے کے ليے سخت اقدامات ضروري

وٹامن اے بچوں کي اموات روکنے ميں مددگار

خون کے روايتي ٹيسٹ سے ٹي بي کي درست تشخيص ممکن نہيں