• صارفین کی تعداد :
  • 1809
  • 8/30/2011
  • تاريخ :

عالمي پيمانے پر اسلامي تبليغ (حصّہ سوّم)

الله

يہ معاشرہ ايک جال(net) کے مانند ھے جو چاروں طرف سے ايک دوسرے سے مربوط ھے اگرمعاشرے کاايک فرد خراب ھوگا تو اسکا اثردوسروں پربھي پڑے گا-اسي طرح سے اس دنيا کے دوسوممالک ميں اگرايک ملک بھي خراب ھوگيا تو لازمي طور پر اسکا اثر(impact)دوسروں پربھي ھوگاھم يہ نھيں کھہ سکتے کہ امريکہ (America) خراب ھے تو ھو ھم تويھاں ٹھيک ھيں- ايسا نھيں ھے ،يھاں قم ميں ديکھئے کتنے( net cafe)کھلے ھوئے ھيں اورجوان مشغول ھيں -قم جو مرکز تعليم اھلبيت (ع) ھے ،مرکزپرھيزگاري ھے، جسکو آل محمد کا آشيانہ کھا گيا ”‌ھٰذاعش آل محمد(ع)”ليکن اسکے اثرات يھاں پر بھي موجود ھيں کيوں کہ کوئي معاشرہ دوسروں سے کٹ کر بالکل تنھا ترقي (progress) نھيں کرسکتا ، فلاح (growth)) نھيں پا سکتا- اسي لئے دين اسلام پورے انساني معاشرے (social society) کو ٹھيک کرنے کيلئے آيا ھے- اسلام کوئي خانداني يارن گوں اور نسلوں والا دين نھيںھے- اسلام نے ابتداء سے انتھا تک اس فکرکو توڑا ھے -جب اذان کي بات آئي تو عرب کے مقابلے ميں حبش کارھنے والاايک کالااور بدصورت انسان اذان کھہ رھا ھے، جو شين بھي نھيںکھہ سکتا”‌اَسْھَدُاَنْ لاٰاِلٰہ اِلاَّاللّٰہ ”کھہ رھا ھے - ليکن رسول ا للہ فکر عرب کو توڑنے کي کوشش کررھے ھيںکيوں کہ جب تک عربيت نھيں ٹوٹے گي اسوقت تک ميرا مشن عالمي سطح پرموثر نھيں ھو گا-

بھت سے لوگ سوال کرتے ھيں کہ ھم لوگ مغرب ميں رھتے ھيں، ھم يھاں کيا کريں ؟ يھاںسے بھاگ جائيں ؟کيونکہ يھاں کے حالات بھت خراب ھيں يھاں ھمارے بچوں کے مستقبل (future) کا کيا ھوگا، ھم اس کا جواب يھي ديتے ھيں”‌ھُوَالَّذِيْ بَعَثَ فيِ الاُ مِّيِّيْنَ رَسُوْلاً مِّنْھُمْ” اسلام سے قبل کي تاريخ (pre islamic history)پڑھئے ،اسلام سے قبل خانہ کعبہ کے چاروں طرف برھنہ (nude) عورتيں پھرتي تھيں، آج دنيا ميں نيوڈ کالونياں ھيں اگر آپ وھاں جائيں گے تو آپ کو ان کا مخصوص انداز اپنانا پڑے گا، ليکن عبادت گاھوں ميں اس طرح سے نھيں ھوتا-

عرب کے اس ماحول ميں خدا نے پاک پيغمبر کو بھيجا تاکہ اس گندگي کے ماحول کو challenge  کرے، تاکہ اس ماحول کوchange کرے اور پھر سب کچھ change ھوگيا، ماحول سے گھبرا کر بھاگ جانا کمال نھيں ھے ، ماحول کو تبديل (change) کرنا کمال ھے - ماحول کوتبديل کرنے کيلئے فکري کام کي ضرورت ھے اور اس ميں بھت وقت لگتا ھے- 40 سال بعداعلان رسالت ھوا، پھر 13 سال مکہ اور 10سال مدينے کي تبليغ کے بعدحکم ھو رھا ھے”‌ حَيَّ عَلٰي خَيْرِالْعَمَلِ” اب فکر کي تصحيح ھو چکي ھے لھذا اب عمل خير ھوگا-

عالمي سطح پر تبليغ کرنے کيلئے ھم لوگوں کو فکري طور پر دين کو عالمي سطح پر متعارف کرانا ھے، دين کي عالمي وسعت اور جامعيت کو بيان کرنا ھے ،نہ يہ کہ دين کو ايک خانداني حيثيت سے متعارف کرايا جائے -

پورے پاکستان ميں قريب دو ھزار مومنين شھيد ھوچکے ھيں ، 95 ڈاکٹرصرف کراچي ميں شھيد ھوئے، اگرايک بار تمام مومنين، تمام عورتيں اور سبھي بچے گھر سے باھر آکر کچھ نہ کرتے صرف جنازے ميں شريک ھوجاتے تو پھر دوسرے کو مارنے کيلئے سوچتے ، ھم عالمي سطح کي بات کر رھے ھيں ليکن ابھي ھم شيعي سطح تک نھيں پھونچ پائے ھيں ابھي ھم اپنے محلوں کے کپڑے سے باھر نھيں آئے ھيں،اپنے خاندان کے ابريشم سے باھر نھيں نکلے ھيں - وہ موذن کھہ رھا ھے ”‌اَسْھَدُاَنْ لاٰاِلٰہ اِلاَّاللّٰہ ” عرب آئے اور کھنے لگے يا رسول اللہ يہ موذن”‌ شين” کو”‌ سين” کھہ رھا ھے آيا ھميں اذان کھنے کا حق ھے- سرکار رسالت مآب نے فرمايا کہ بلال #کي”‌سين ” اللہ کے نزديک ”‌شين ميں بدل گئي ھے- بلال”‌اَسْھَدُاَنْ لاٰاِلٰہ اِلاَّاللّٰہ ” ضرور کھہ رھا ھے ليکن پروردگار اسکو”‌اَشْھَدُاَنْ لاٰاِلٰہ اِلاَّاللّٰہ ” سن رھاھے اس لئے کہ زبان سے نکلنے والي آواز کا نام اذان نھيں ھے بلکہ دل کي گھرائيوں کي آواز کا نام اذان ھے -

تحرير : مولانا زکي باقري صاحب


متعلقہ تحريريں:

مشہور و معروف ماڈل اور سنگر ماشا کا قبول اسلام (حصّہ دوّم)

مشہور و معروف ماڈل اور سنگر ماشا کا قبول اسلام

مسجد کے نور نے ميري زندگي کو منور کر ديا

اسلام قبول کرنے والي ناورے کي ايک خاتون کي ياديں

شيعہ ہونے والي ٹوني بلئير کي سالي لاورن بوتھ