• صارفین کی تعداد :
  • 3676
  • 8/30/2011
  • تاريخ :

شيطا ن کو کنکرياں مارنا

بسم الله

قالَ الصَّادِقُ(ع): ”‌اظَّ عِلَّةَ رَمْيِ الْجَمَراٰتِ اَنَّ اظ•ِبْراہِيم (ع) تَراء يٰ لَہُ اظلِيسُ عِنْدھٰا فَامَرہُ جَبْرائيلُ بِرَمْيِہ بِسَبعِ حَصَياتٍ وَاَنْ يُکَبِّر مَعَ کُلِّ حَصَاةٍ فَفَعَلَ وَجَرَتْ بِذلِکَ السُّنَةِ”-

امام جعفر صادق(ع) فرماتے ھيں : ”‌ان جمرات کوکنکرياں مارنے کي وجہ يہ ھے کہ ابليس وھاں پر حضرت ابراھيم (ع) کے سامنے ظاھرهوا اس وقت جبرئيل (ع) نے جناب ابراھيم (ع) کو حکم ديا کے سات کنکريوں سے شيطا ن کو ماريں اور ھر کنکري پر تکبير بھي کھيں جناب ابراھيم (ع) نے ايسا ھي کيا اور اس کے بعد سے يہ سنت بن گئي”-

قرباني

عن ابي جعفر (ع) قال: قَالَ رَسُولُ اللّٰہِ (ص): اظ•ِنَّمَا جَعَلَ اللّٰہُ ھَذَا الْاَضْحَي لِتَشْبَعَ مَسَاکِينُھُمْ مِنَ اللَّحْمِ فَاَطْعِمُوھُمْ”-

امام محمد باقر (ع) فرماتے ھيں :

”‌کہ رسو ل خدا (ص) نے فرمايا :خدا وند عالم نے اس قرباني کو واجب قرار ديا ھے تاکہ بے نوا اور مسکين لوگ گوشت سے استفادہ کريں اور سيرهوں پس انھيں کھلاو ”-

مغفرت طلب کرنا

قال الصادق(ع): ”‌اِسْتَغْفَرَ رَسُولُ اللّٰہِ لِلْمُحَلِّقِينَ ثَلاٰثَ مَرَّاتٍ”-

امام جعفر صادق(ع) فرماتے ھيں :

”‌کہ رسول خدا صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم نے منيٰ ميں سر مڈانے والوں کے لئے تين مرتبہ استغفار کيا (اور خدا سے ان کے لئے بخشش طلب کي) ھے”-

حج کے اسرار

عالم جليل سيد عبد اللہ مرحوم محدث جزائري کے پوتوں سے نقل کرتےهوئے کتاب شرح نخبہ ميں تحرير کرتے ھيں :

متعدد ما خذ ميں جن پر ميري تائيد ھے بعض بزرگوں کي تحرير ميں يہ حديث مرسل اس طرح نقلهوئي ھے کہ شبلي حج انجام دينے کے بعد امام زين العابدين ںکي زيارت کو آئے تو حضرت (ع) نے ان سے فرمايا:

حَجَجْتَ يَا شَبْلِيُّ؟

قَالَ:نَعَمْ يَا ابْنَ رَسُولِ اللّٰہِ فَقَالَ(ع):اَنَزَلْتَ الْمِيقَاتَ وَ تَجَرَّدْتَ عَنْ مَخِيطِ الثِّيَابِ وَاغْتَسَلْتَ؟ قَالَ:نَعَمْ،

قَالَ:فَحِينَ نَزَلْتَ الْمِيقَاتَ نَوَيْتَ اَنَّکَ خَلَعْتَ ثَوْبَ الْمَعْصِيَةِ وَلَبِسْتَ ثَوْبَ الطَّاعَةِ؟ قَالَ:لاٰ،

قَالَ:فَحِينَ تَجَرَّدْتَ عَنْ مَخِيطِ ثِيَابِکَ نَوَيْتَ اَنَّکَ تَجَرَّدْتَ مِنَ الرِّيَاءِ وَالنِّفَاقِ وَالدُّخُولِ فِي الشُّبُھَاتِ؟قَالَ:لاٰ،

قَالَ:فَحِينَ اغْتَسَلْتَ نَوَيْتَ اَنَّکَ اغْتَسَلْتَ مِنَ الْخَطَايَا وَالذُّنُوبِ؟قَالَ:لاٰ،

قَالَ:فَمَا نَزَلْتَ الْمِيقَاتَ وَلاٰ تَجَرَّدْتَ عَنْ مَخِيطِ الثِّيَابِ وَلاٰ اغْتَسَلْتَ،

اے شبلي! کيا تم نے حج کر ليا؟ عرض کيا ھاں اے فرزند رسول خدا! فرمايا:کيا تم ميقات ميں ٹھھرے اور اپنے سلے هوئے لباس کو جسم سے اتار کر غسل کيا؟ شبلي نے جواب ديا، ھاں-امام نے پوچھا جب تم ميقات ميںداخلهوئے تو کيا يہ نيت کي کہ ميں نے گناہ اور نافرماني کا لباس اتار ديا ھے اور خدا کي اطاعت و فرمانبرداري کا لباس پہن ليا ھے ؟

شبلي: نھيں-امام نے پوچھا: جب تم نے اپنا سلاهوا لباس اتارا تو کيا يہ نيت کي تھي کہ خود کو ريا ،دوروئي اور شبھات وغيرہ سے دور کر رھےهو ؟شبلي نھيں:

امام (ع): غسل کرتے وقت کيا تم نے يہ نيت کي تھي کہ خود کو خطاوں اور گناہوں سے پاک کر رھےهو؟شبلي نھيں :

امام (ع):(پس در حقيقت تم ) نہ ميقات ميں واردهوئے اور نہ تم نے سلاهوا لباس اتارا اور نہ غسل کيا ھے ”-

ثُمَّ قَالَ:تَنَظَّفْتَ وَاَحْرَمْتَ وَعَقَدْتَ بِالْحَجِّ، قَالَ:نعم-قَالَ: فَحِينَ تَنَظَّفْتَ وَاَحْرَمْتَ وَ عَقَدْتَ الْحَجَّ نَوَيْتَ اَنَّکَ تَنَظَّفْتَ بِنُورَةِ التَّوْبَةِ الْخَالِصَةِ لِلَّہٰ تَعَاليَ؟قَالَ لاٰ،قَالَ:فَحِينَ اَحْرَمْتَ نَوَيْتَ اَنَّکَ حَرَّمْتَ عَلَي نَفْسِکَ کُلَّ مُحَرَّمٍ حَرَّمَہُ اللّٰہُ عَزَّوَجَلَّ؟قَالَ:لاٰ،

قَالَ:فَحِينَ عَقَدْتَ الْحَجَّ نَوَيْتَ اَنَّکَ قَدْ حَلَلْتَ کُلَّ عَقْدٍ لِغَيْرِ اللّٰہِ؟قَالَ:لاٰ،

قَالَ لَہُ(ع):مَا تَنَظَّفْتَ وَلاٰاَحْرَمْتَ وَلاٰ عَقَدْتَ الْحَجَّ ،

”‌اس کے بعد امام(ع) اس سے پوچھتے ھيں، کيا تم نے خودکو پاک صاف کيا اور احرام پہنا اور حج کا عھد وپيمان کيا (يعني حج کي نيت کي) شبلي: ھاں

امام (ع): کيا تم يہ نيت کي تھي کہ خود کو خالص توبہ کے نور ہ سے پاکيزہ کر رھےهو؟ شبلي : نھيں

امام (ع): احرام باندھتے وقت کيا تم نے يہ نيت کي تھي کہ جو کچھ خدا نے تمھيں کرنے سے روکا ھے اسے اپنے آپ پر حرام سمجھو؟شبلي:نھيں- امام: حج کا عھد کرتے وقت کيا تم نے يہ نيت کي تھي کہ تم نے ھر غير الٰھي عھد وپيمان سے خودکو رھا کر ليا ھے؟ شبلي: نھيں-

امام(ع) :پھرتم نے احرام نھيں باندھا پاکيزہ نھيںهوئے اور حج کي نيت نھيںکي ”-

قَالَ لَہُ: اَدَخَلْتَ الْمِيقَاتَ وَصَلَّيْتَ رَکْعَتَيِ الْاظ•ِحْرَامِ وَلَبَّيْتَ؟ قَالَ:نَعَمْ،

قَالَ:فَحِينَ دَخَلْتَ الْمِيقَاتَ نَوَيْتَ اَنَّکَ بِنِيَّةِ الزِّيَارَةِ؟قَالَ:لاٰ-

قَالَ:فَحِينَ صَلَّيْتَ الرَّکْعَتَيْنِ نَوَيْتَ اَنَّکَ تَقَرَّبْتَ اظ•ِلَي اللّٰہِ بِخَيْرِ الْاَعْمَالِ مِنَ الصَّلاٰةِ وَاَکْبَرِ حَسَنَاتِ الْعِبَادِ؟ قَالَ:لا،

قَالَ:فَحِينَ لَبَّيْتَ نَوَيْتَ اَنَّکَ نَطَقْتَ لِلّٰہِ سُبْحَانَہُ بِکُلِّ طَاعَةٍ وَصُمْتَ عَنْ کُلِّ مَعْصِيَةٍ؟ قَالَ:لاٰ ،

قَالَ لَہُ(ع): مَا دَخَلْتَ الْمِيقَاتَ وَلاٰ صَلَّيْتَ وَلاٰ لَبَّيْتَ،

”‌اس کے بعد امام (ع) نے پوچھا :کيا تم ميقات ميں داخلهوئے اور دو رکعت نماز احرام ادا کي اور لبيک کھي ؟ شبلي:ھاں-

امام (ع): ميقات ميں داخلهوتے وقت کيا تم نے زيارت کي نيت کي؟ شبلي: نھيں-

امام (ع):کيا دو رکعت نماز پڑھتے وقت تم نے يہ نيت کي تھي کہ تم بھترين اعمال اور بندوں کے بھترين حسنات يعني نماز کے ذريعہ خدا سے قريبهو رھےهو؟شبلي: نھيں-

امام (ع): پس لبيک کھتے وقت کيا تم نے يہ نيت کي تھي کہ خدا کي خالص فرمانبر داري کي بات کر رھےهواور ھر معصيت سے خاموشي اختيار کر رھےهو؟ شبلي: نھيں -

امام (ع)نے فرمايا:پھر نہ تم ميقات ميں داخلهوئے نہ نماز پڑھي اور نہ لبيک کھي ”-

ثُمَّ قَالَ لَہُ:اَدَخَلْتَ الْحَرَمَ وَرَاَيْتَ الْکَعْبَةَ وَصَلَّيُتَ؟ قَالَ:نَعَمْ،

قَالَ :فَحِينَ دَخَلْتَ الْحَرَمَ نَوَيْتَ اَنَّکَ حَرَّمْتَ عَلَي نَفْسِکَ کُلَّ غَيْبَةٍ تَسْتَغِيبُھَا الْمُسْلِمِينَ مِنْ اَہْلِ مِلَّةِ الْاظ•ِسْلاٰمِ؟قَالَ:لاٰ-

قَالَ فَحِينَ وَصَلْتَ مَکَّةَ نَوَيْتَ بِقَلْبِکَ اَنَّکَ قَصَدْتَ اللّٰہَ؟ قَالَ:لاٰ-

قَالَ(ع):فَمَا دَخَلْتَ الْحَرَمَ وَلاٰ رَاَيْتَ الْکَعْبَةَوَلاٰ صَلَّيْتَ،

”‌امام (ع) نے پھر پوچھا :کيا تم حرم ميں داخلهوئے، کعبہ کو ديکھا اور نماز ادا کي ؟ شبلي :ھاں-

امام(ع) :حرم ميں داخلهوتے وقت کيا تم نے يہ نيت کي تھي کہ اسلامي معاشرہ کے مسلمانوں کي غيبت کو اپنے اوپر حرام کرتےهو ؟ شبلي: نھيں-

امام (ع):مکہ پہنچتے وقت کيا تم نے يہ نيت کي کہ صرف خدا کو چاھتےهو ؟شبلي:نھيں-

امام (ع):پھر نہ تم حرم ميں واردهوئے اور نہ کعبہ کا ديدار کيا اور نہ نماز ادا کي ”-

ثُمَّ قَالَ:طُفْتَ بِالْبَيْتِ وَمَسَسْتَ الْاَرْکَانَ وَسَعَيْتَ؟قَالَ:نَعَمْ-

قَالَ(ع):فَحِينَ سَعَيْتَ نَوَيْتَ اَنَّکَ ھَرَبْتَ اظ•ِلَي اللّٰہِ وَعَرَفَ مِنْکَ ذٰلِکَ عَلاَّمُ الْغُيُوبِ؟قَالَ:لاٰ -

قَالَ فَمَا طُفْتَ بِالْبَيْتِ وَلاٰ مَسِسْتَ الْاَرْکَانَ وَلاٰ سَعَيْتَ-

”‌پھر امام نے پوچھا :کيا تم نے خانہ خدا کا طواف کيا ارکان کو مس کيا اور سعي انجام دي ؟شبلي :ھاں-

امام (ع):سعي کرتے وقت کيا تمھاري يہ نيت تھي کہ شيطان اور اپنے نفس سے بھاگ کر خدا کي پناہ حاصل کرتےهواور وہ غيب سے سب سے زيادہ آگاہ ھے وہ اس بات کو جانتا ھے ؟ شبلي:نھيں-

امام (ع):پھر نہ تم نے خانہ خدا کاطواف کيا نہ ارکان مس کئے اور نہ سعي کي،

ثُمَّ قَالَ لَہُ:صَافَحْتَ الْحَجَرَوَ وَقَفْتَ بِمَقَامِ اظ•ِبْرَاہِيمَ(ع) وَصَلَّيْتَ بِہَ رَکْعَتَيْنِ؟قَالَ:نَعَمْ فَصَاحَ (ع)صَيْحَةً کَادَ يُفَارِقُ الدُّنْيَا ثُمَّ قَالَ:آہِ آہِ-

ثُمَّ قَالَ(ع):مَنْ صَافَحَ الْحَجَرَ الْاَسْوَدَ فَقَدْ صَافَحَ اللّٰہَ تَعَالَي،فَانْظُرْ يَامِسْکِينُ لاٰ تُضَيِّعْ اَجْرَ مَا عَظُمَ حُرْمَتُہُ،وَتَنْقُضِ الْمُصَافَحَةَ بِالْمُخَالَفَةِ،وَقَبْضِ الْحَرَامٍ نَظِيرَ اَہْلِ الْآثَامِ-

ثُمَّ قَالَ(ع):نَوَيْتَ حِينَ وَقَفْتَ عِنْدَ مَقَامِ اظ•ِبْرَاہِيمَ(ع)اَنَّکَ وَقَفْتَ عَلَي کُلِّ طَاعَةٍ وَتَخَلَّفْتَ عَنْ کُلِّ مَعْصِيَةٍ؟قَالَ:لاٰ-

قَالَ:فَحِينَ صَلَّيْتَ فِيہِ رَکْعَتَيْنِ نَوَيْتَ اَنَّکَ صَلَّيْتَ بِصَلاٰةِ اظ•ِبْرَاہِيمَ(ع)،وَاَرْغَمْتَ بِصَلاٰتِکَ اَنْفَ الشَّيْطَانِ؟قَالَ:لاٰ-

قَالَ لَہُ:فَمَا صَافَحْتَ الْحَجَرَ الْاَسْوَدَ وَلاٰ وَقَفْتَ عِنْدَ الْمَقَامِ وَلاٰ صَلَّيْتَ فِيہِ رَکْعَتَيْنِ-

”‌امام(ع) نے دريافت فرمايا:کيا تم نے حج اسود سے مصافحہ کيا، مقام ابراھيم (ع) کے نزديک کھڑےهوئے اوردو رکعت نماز ادا کي ؟شبلي: ھاں،

پس امام (ع):نے فريا د بلند کي ايسا لگتا تھا کہ آپ (ع) دنيا سے ھي کو چ کرجانے والے ھيں اس کے بعد فرمايا :آہ ،آہ----

پھر فرمايا :جو حجر اسود کو لمس کرے اس نے خدا سے مصافحہ کيا پس اے مسکين !ديکھ اس عظيم حرمت وعزت کو ضائع نہ کر اور مصافحہ کو مخالفت اور گناہکاروں کے مانند حرام کاري کے ذريعہ نہ توڑ اس کے بعد پوچھا : جب تم مقام ابراھيم (ع)کے نزديک گئے تو کيا تمھاري نيت يہ تھي کہ خدا کے تمام احکام وفرامين کي پابندي اور ھر معصيت ونافرماني کي مخالفت کرو گے؟شبلي :نھيں

امام (ع):جب تم نے طواف کي دور کعت نماز ادا کي تو کيا يہ نيت تھي کہ تم نے جناب ابراھيم کے ھمراہ نماز پڑھي ھے اور شيطان کي ناک کو خاک پر رگڑدياھے ؟شبلي:نھيں-

امام(ع):پھر درحقيقت نہ تم نے حجر اسود کا مصافحہ کيا نہ مقام ابراھيم کے پاس کھڑےهوئے اور نہ وھاں دو رکعت نماز ادا کي -

ثُمَّ قَالَ(ع):لَہُ اَشْرَفْتَ عَلَي بِئْرِ زَمْزَمَ وَ شَرِبْتَ مِنْ مَائِھَا؟ قَالَ:نَعَمْ-

قَالَ نَوَيْتَ اَنَّکَ اَشْرَفْتَ عَلَي الطَّاعَةِ، وَغَضَضْتَ طَرْفَکَ عَنِ الْمَعْصِيَةِقَالَ:لاٰ-

قَالَ(ع):فَمَا اَشْرَفْتَ عَلَيْھَا وَلاٰ شَرِبْتَ مِنْ مَائِھَا-

پھرامام(ع) نے پوچھا :کيا تم چاہ زمزم پر گئے اور اس کا پاني پيا؟ شبلي: ھاں

امام (ع)نے فرمايا :کيا تم نے يہ نيت کي تھي کہ تم نے خدا کي فرماں برداري حاصل کر لي اور اس کے گناہوں اور معصيت سے آنکھيں بند کر لي ھيں؟شبلي:

نھيں

امام (ع)نے فرمايا :پھر درحقيقت نہ تم چاہ زمزم پر گئے اور نہ اس کا پاني پيا ھے ”-

ثُمَّ قَالَ لَہُ(ع):اَسَعَيْتَ بَيْنَ الصَّفَاوَالْمَرْوَةِ وَمَشَيْتَ وَتَرَدَّدْتَ بَيْنَھُمَا؟قَالَ:نَعَمْ-

قَالَ لَہُ:نَوَيْتَ اَنَّکَ بَيْنَ الرَّجَاءِ وَالْخَوْفِ؟ قَالَ:لاٰ-

قَالَ:فَمَاسَعَيْتَ وَلاٰمَشَيْتَ وَلاٰتَرَدَّدْتَ بَيْنَ الصَّفَا وَالْمَرْوَةِ- ثُمَّ قَالَ:اَخْرَجْتَ اظ•ِلٰي مِنيٰ؟ قَالَ: نَعَمْ،قَالَ: نَوَيْتَ اَنَّکَ آمَنْتَ النَّاسَ مِنْ لِسَانِکَ وَقَلْبِکَ وَيَدِکَ؟قَالَ:لاٰ،قَالَ:فَمَا خَرَجْتَ اظ•ِلٰي مِنًي-

ثُمَّ قَالَ:لَہُ اَوَقَفْتَ الْوَقْفَةَ بِعَرَفَةَ،وَطَلَعْتَ جَبَلَ الرَّحْمَةِ، وَعَرَفْتَ وَادِيَ نَمِرَةَ،وَدَعَوْتَ اللّٰہَ سُبْحَانَہُ عِنْدَالْمِيْلِ وَالْجَمَرَاتِ؟قَالَ:نَعَمْ،قَالَ:ھَلْ عَرَفْتَ بِمَوْقِفِکَ بِعَرَفَةَمَعْرِفَةَ اللّٰہِ سُبْحَانَہُ اَمْرَ الْمَعَارِف وَالْعُلُومِ وَعَرَفْتَ قَبْضَ اللّٰہِ عَلٰي صَحِيفَتِکَ وَ اطِّلاٰعَہُ عَلَي سَرِيرَ تِکَ وَقَلْبِکَ؟قَالَ:لاٰ،قَالَ نَوَيْتَ بِطُلُوعِکَ جَبَلَ الرَّحْمَةِ اَنَّ اللّٰہَ يَرْحَمُ کُلَّ مُوْمِنٍ وَ مُوْمِنَةٍ وَيَتَوَلَّي کُلَّ مُسْلِمٍ وَمُسْلِمَةٍ؟ قَالَ: لاٰ، قَالَ: فَنَوَيْتَ عِنْدَ نَمِرَةَ اَنَّکَ لاٰ تَاْمُرُ حَتَّي تَاْتَمِرَ،وَلاٰ تَزْجُرُ حَتَّي تَنْزَجِرَ؟ قَالَ: لاٰ، قَالَ:فَعِنْدَمَا وَقَفْتَ عِنْدَ الْعَلَمِ وَالنَّمِرَاتِ، نَوَيْتَ اَنَّھَا شَاھِدَةٌ لَکَ عَلَي الطَّاعَاتِ حَافِظَةٌ لَکَ مَعَ الْحَفَظَةِبِاَمْرِ رَبِّ السَّمَاوَاتِ؟قَالَ:لاٰ،قَالَ:فَمَا وَقَفْتَ بِعَرَفَةَ،وَلاٰ طَلَعْتَ جَبَلَ الرَّحْمَةِ،وَلاٰ عَرَفْتَ نَمِرَةَ، وَلاٰدَعَوْتَ، وَلاٰ وَقَفْتَ عِنْدَ النَّمِرَاتِ-

”‌پھرامام (ع) نے کيا تم نے دريافت کيا، صفاو مروہ کے درميان سعي انجام دي اور پيد ل ان دو پھاڑوں کے درميان راہ طے کي ھے ؟ شبلي :ھاں

امام (ع): کيا تم نے يہ نيت کي تھي کہ خوف ورجاء کے درميان راہ طے کر رھےهو؟شبلي:نھيں

امام (ع):پس تم نے صفاو مروہ کے درميان سعي نھيں کي پھر فرمايا کيا تم منيٰ کي طرف گئے ؟شبلي:ھاں

امام (ع):کيا تمھاري يہ نيت تھي کہ لوگوں کو اپني زبان اپنے دل اور اپنے ھاتھوں سے امان ميں رکھو؟شبلي :نھيں

امام (ع):پھر تم منيٰ نھيں گئےهو- اس کے بعد پوچھا :کيا تم نے عرفات ميں وقوف کيا اور جبل رحمت کے اوپر گئے اور وادي نمرہ کو پہچانااور جمرات کے کنارے خدا سے دعاکي ؟شبلي:ھاں

امام (ع)نے فرمايا:آيا عرفات ميں وقوف کے وقت تمھيں معارف و علوم کے ذريعہ اللہ کي معرفتهوئي اور کيا تم نے جانا کہ اللہ تمھارے نامہ عمل کولے گا اور وہ تمھاري فکر و خيال سے آگاھي رکھتا ھے ؟شبلي:نھيں

امام :کيا جبل رحمت کے اوپر جاتے وقت تمھاري يہ نيت تھي کہ خداوند عالم ھر با ايمان مرد وزن پر رحمت نازل کرتا ھے اور ھر مسلمان مردوزن کي سرپرستي کرتا ھے ؟شبلي:نھيں

امام :آيا وادي نمرہ ميں تم نے يہ خيال کيا کہ کوئي حکم نہ دو جب تک خود فرمانبردار نہهوجاواور نھي نہ کرو جب تک خود کو نہ روکو؟ شبلي:نھيں

جب تم نشان اور نمرہ کے نزديک ٹھھرے تو کيا تمھاري يہ نيت تھي کہ وہ تمھاري عبادات اور طاعت پر گوا ہهوں اور خداوندعالم کے نگھبانوں کے ھمراہ اس کے حکم سے تيري حفاظت کريں؟ شبلي:نھيں

حضرت نے فرمايا:پھر نہ تم عرفات ميں ٹھھرے نہ جبل رحمت کے اوپر گئے نہ نمرہ کو پہچانا نہ دعا کي اور نہ نمرہ کے نزديک وقوف کياھے-

ثُمَّ قَالَ:مَرَرْتَ بَيْنَ الْعَلَمَيْنِ،وَصَلَّيْتَ قَبْلَ مُرُورِکَ رَکْعَتَيْنِ،وَمَشَيْتَ بِمُزْدَلِفَةَ، وَل َقَطْتَ فِيھَا الْحَصَي،وَمَرَرْتَ بِالْمَشْعَرِ الْحَرَامِ؟ قَالَ: نَعَمْ، قَالَ: فَحِينَ صَلَّيْتَ رِکْعَتَيْنِ،نَوَيْتَ اَنَّھَا صَلاٰةُ شُکْرٍ فِي لَيْلَةِ عَشْرٍ،تَنْفِي کُلَّ عُسْرٍ، وَتُيَسِّرُ کُلَّ يُسْرٍ؟ قَالَ: لاٰ،قَالَ:فَعِنْدَ مَامَشَيْتَ بَيْنَ الْعَلَمَيْنِ،وَلَمْ تَعْدِلْ عَنْھُمَا يَمِيناً وَشِمَالاً،نَوَيْتَ اَنْ لاٰ تَعْدِلَ عَنْ دِينِ الْحَقِّ يَمِيناً وَشِمَالاً،لاٰ بِقَلْبِکَ،وَلاٰ بِلِسَانِکَ،وَلاٰبِجَوَارِحِکَ، قَالَ:لاٰ، قَالَ:فَعِنْدَ مَا مَشَيْتَ بِمُزْدَلِفَةَ وَلَقَطْتَ مِنْھَا الْحَصَي،نَوَيْتَ اَنَّکَ رَفَعْتَ عَنْکَ کُلَّ مَعْصِيَةٍ،وَ جَھْلٍ،وَثَبَّتَّ کُلَّ عِلْمٍ وَعَمَلٍ؟قَالَ:لاٰ،قَالَ:فَعِنْدَ مَا مَرَرْتَ بِالْمَشْعَرِ الْحَرَامِ،نَوَيْتَ اَنَّکَ اَشْعَرْتَ قَلْبَکَ اظ•ِشْعَارَ اَہْلِ التَّقْويٰ وَالْخَوْفَ لِلّٰہِ عَزَّوَجَلَّ؟ قَالَ:لاٰ،قَالَ:فَمَا مَرَرْتَ بِالْعَلَمَيْنِ،وَلاٰ صَلَّيْتَ رِکْعَتَيْنِ،وَلاٰ مَشَيْتَ بِالْمُزْدَلِفَةِ،وَلاٰ رَفَعْتَ مِنْھَا الْحَصَي،وَلاٰ مَرَرْتَ بِالْمَشْعَرِ الْحَرَامِ-

پھرامام نے پوچھا کہ کيا تم دونشانوں کے درميان سے گذرے اور وھاں سے گذرنے سے پھلے دورکعت نماز اداکي اور پيدل مذدلفہ گئے اور وھاں کنکرياں چنيں اور مشعر الحرام سے گذرے؟شبلي:ھاں

امام نے فرمايا:جب دورکعت نماز اداکي تو کيا يہ نيت کي تھي کہ يہ نماز شب دھم کي نماز شکر ھے جو ھر سختي کو دور اور کاموں کو آسان کرتي ھے ؟ شبلي:نھيں

امام :جب تم دو نشانوں کے درميان سے گذرے اور دائيں اور بائيں منحرف نھيںهوئے تو کيا يہ نيت کي تھي کہ دين حق سے دائيں اور بائيں نہ دل سے نہ زبان سے اور نہ اپنے اعضاء بدن سے منحرف نھيںهوئےهو؟شبلي:نھيں

امام :جب تم مذدلفہ گئے اور وھاں سنگريزے جمع کئے تو کيا يہ نيت کي تھي کہ ھر گناہ اور جھالت کو خود سے دور کياھے اور ھر علم و نيک عمل کو اپنے آپ ميں پائےدار کيا ھے؟شبلي:نھيں

امام :جب تم مشعر الحرام سے گذرے تو کيا يہ نيت کي تھي کہ اپنے دل کو اھل خدا کے تصور اور خدا کے خوف سے آراستہ کرو؟شبلي:نھيں

امام :پھر نہ تم دو پھاڑوں کے درميان سے گذرےهو، نہ دورکعت نماز ادا کي ھے ،نہ مذدلفہ گئےهو ،نہ سنگريزے چنے ھيںاور نہ مشعر الحرام سے گذرےهو”-

ثُمَّ قَالَ لَہُ:وَصَلَّتَ مِنٰي،وَرَمَيْتَ الْجَمْرَةَ، وَحَلَقْتَ رَاْسَکَ، وَذَبَحْتَ ھَدْيَکَ،وَصَلَّيْتَ فِي مَسْجِدِ الْخَيْفِ،وَرَجَعْتَ اظ•ِلَي مَکَّةَ،وَطُفْتَ طَوَافَ الْاظ•ِفَاضَةِ؟قَالَ:نَعَمْ،قَالَ:فَنَوَيْتَ عِنْدَ مَا وصَلْتَ مِنًي وَرَمَيْتَ الْجِمَارَ،اَنَّکَ بَلَغْتَ اظ•لَي مَطْلَبِکَ،وَقَدْ قَضَي رَبُّکَ لَکَ کُلَّ حَاجَتِکَ؟قَالَ:لاٰ، قَالَ:فَعِنْدَ مَا رَمَيْتَ الْجِمَارَنَوَيْتَ اَنَّکَ رَمَيْتَ عَدُوَّکَ اظ•ِبْلِيسَ وَغَضِبْتَہُ بِتَمَامِ حَجِّکَ النَّفِيسِ؟قَالَ:لاٰ،قَالَ:فَعِنْدَ مَا حَلَقْتَ رَاْسَکَ نَوَيْتَ اَنَّکَ تَطَھَّرْتَ مِنَ الْاَدْنَاسِ، وَمِنْ تَبِعَةِ بَنْي آدمَ،وَخَرَجْتَ مِنَ الذَّنُوبِ کَمَا وَلَدَتْکَ اُمُّکَ؟ قَالَ: لاٰ،قَالَ:فَعِنْدَ مَا صَلِّيْتَ فِي مَسْجِدِ الْخَيْفِ نَوَيْتَ اَنَّکَ لاٰ تَخَافُ اظ•ِلاَّ اللّٰہَ عَزَّوَجَلَّ وَذَنْبَکَ،وَلاٰ تَرْجُو اظ•ِلاَّ رَحْمَةَ اللّٰہِ تَعَاليَ؟ قَالَ:لاٰ،قَالَ:فَعِنْدَ مَا ذَبَحْتَ ھَدْيَکَ نَوَيْتَ اَنَّکَ ذَبَحْتَ حَنْجَرَةَ الطَّمَع بِمَا تَمَسَّکْتَ بِہِ مِنْ حَقِِيقَةِالْوَرَعِ،وَاَنَّکَ اتَّبَعْتَ سُنَّةَ اظ•ِبرَاہِيمَ بِذَبْحِ وَلَدِہِ،وَثَمَرَةِ فُوَادِہِ وَرَيْحَانِ قَلْبِہِ،وَحاَجَّہُ سُنَّتُہُ لِمَنْ بَعْدَہُ، وَقَرَّبَہُ اظ•ِلَي اللّٰہِ تَعَاليٰ؟لِمَنْ خَلْفَہُ قَالَ:لاٰ، قَالَ: فَعِنْدَمَا رَجَعْتَ اظ•ِلَي مَکَّةَ وَطُفْتَ طَوَافَ الْاظ•ِ فَاضَةِ نَوَيْتَ اَنَّکَ اَفِضْتَ مِنْ رَحْمَةِ1للّٰہِ تَعَالَي،وَرَجَعْتَ اظ•ِلَي طَاعَتِہِ وَتَمَسَّکْتَ بِوُدِّہِ وَاَدَّيْتَ فَرَائِضہ،وَتَقَرَّبَتَ اظ•ِلَي اللّٰہِ تَعَاليٰ؟قَالَ:لاٰ،قَالَ: لَہُ زَيْنُ العابدين(ع) فَمَا وَصَلْتَ مِنًي وَلاٰرَمْيَتَ الْجِمَارَ،وَلاٰحَلَقْتَ رَاْسَکَ، وَلاٰ اَدَّيْتَ نُسُکَکَ،وَلاٰ صَلَّيْتَ فِي مَسْجِدِ الْخَيْفِ، وَلاٰ طُفْتَ طَوَافَ الْاظ•ِ فَاضَةِ،وَلاٰ تَقَرَّبْتَ-اْرجِعْ فَاظ•ِنَّکَ لَمْ تَحُجَّ-

”‌پھر امام (ع) نے پوچھا کيا تم منيٰ پہنچے اور جمرہ کو کنکرياں ماري ،سر کے بال اتارے،اور اپني قرباني انجام دي؟ نيز مسجد خيف ميں نماز ادا کي ، اور مکہ واپس آکر ”‌طواف افاضہ انجام ديا ”؟شبلي:ھاں

امام (ع)نے فرمايا:جب تم منيٰ پہنچے اور رمي جمرات انجام دي تو کيا يہ محسوس کيا کہ تمھاري تمنا پوريهو گئي اور خدا وند عالم نے تمھاري تمام حاجتيں پوري کرديں ؟شبلي:نھيں

امام (ع): جب جمرات کو کنکرياں ماريں تو کيا يہ نيت تھي کہ اپنے دشمن ابليس کو کنکري مار رھے هو اور اپنے قيمتي حج کو مکمل کرنے کے ساتھ تم نے اسے غضب ناک کر ديا ھے؟ شبلي: نھيں

امام (ع): جب تم نے اپنے سر کے بال اتارے تو کيا يہ نيت کي تھي کہ بني آدم کے گناہوں اور آلودگيوں سے پاک هو گئے اور اپنے گناہوں سے يوں باھر آگئے جيسے تمھيں تمھاري ماں نے ابھي پيدا کيا ھے؟ شبلي:نھيں

امام (ع): جب تم نے مسجد خيف ميں نماز ادا کي تو کيا تمھاري يہ نيت تھي کہ خدا ئے متعال اور گناہوں کے علاوہ کسي چيز سے نھيں ڈرتے اور خدا کي رحمت کے علاوہ کسي اور سے اميدوار نھيں هو؟ شبلي: نھيں

امام (ع): جب تم نے اپني قرباني کو ذبح کيا تو کيا يہ نيت تھي کہ حقيقي تقويٰ و پرھيز گاري کے ذريعہ تم نے اپني لالچ کا گلا کاٹ ديا ھے اور جناب ابراھيم (ع) کہ جنھوں نے اپنے ميوہ دل اور لخت جگر بيٹے کو قربان گاہ ميں لا کر خدا سے قرب حاصل کرنے کا ايک وسيلہ اپنے بعد کي نسلوں کے لئے سنت کے طور پر قائم کيا تھا، ان کي پيروي کر رھے هو؟ شبلي: نھيں

امام (ع) : جب تم مکہ واپس هوئے اور ”‌طواف افاضہ” انجام ديا تو کيا يہ نيت کي تھي کہ خدا کي رحمت سے کوچ کر کے اس کي اطاعت کي طرف پلٹ رھے هو، اس کي محبت حاصل کر لي ھے الٰھي واجبات ادا کئے ھيں اور خدا سے نزديک هو گئے هو؟ شبلي: نھيں

امام : پھر نہ تم منيٰ پہنچے ، نہ شيطانوں کو سنگريزے مارے ھيں، نہ اپنے سر کے بال اتارے ھيں، نہ اپنے حج کے اعمال انجام ديئے ھيں، نہ مسجد خيف ميں نماز ادا کي ھے، نہ طواف بجا لائے هو اور نہ خدا کے قرب ميں پہنچے هو واپس جاو کہ تم نے حج انجام نھيں ديا ھے -

فَطَفِقَ الشِّبْلِيُّ يَبْکِي عَلَي مَافَرَّطَہُ فِي حَجِّہِ،وَمٰا زَالَ يَتَعَلَّمُ حَتَّي حَجَّ مِنْ قَابِلٍ بِمَعْرِفَةٍ وَيَقينٍ-

”‌جنا ب شبلي اس با ت پر بُري طرح رونے لگے کہ جيسا حج کرناچاہئے تھا انجام نھيں ديا اور مناسک حج آگاھي کے ساتھ ادا نھيں کئے آپ اپني حالت پر شدت سے غم زدہ تھے اور اس کے بعد سے حج کے اسرار و معارف ياد کرنے ميں مشغول هو ئے تاکہ اگلے سال پوري شناخت اور يقين کے ساتھ حج بجالائیں” -

بشکريہ : الحسنين ڈاٹ کام


متعلقہ تحريريں:

حرم ميں ايثار و فدا کاري

دين اور کعبہ کا ربط

مکہ ميں نماز جماعت

حج کا نعره

حج کي منتخب حديثيں (حصّہ هفتم)