• صارفین کی تعداد :
  • 2116
  • 8/17/2011
  • تاريخ :

اقبال کي اُردو غزلوں ميں رديف کا استعمال کي اہميت (حصّہ دوّم)

علامہ اقبال

بانگ درا کي غزلوں کے جائزہ سے اس کي وضاحت کي جاتي ہے-

يک لفظي رديف

گلزار ہست وبود نہ بيگانہ وار ديکھ

ہے ديکھنے کي چيز اسے بار بار ديکھ

*

يک لفظي رديف / ديکھ

دو لفظي رديف                 نہ آتے ہيں ہميں اس ميں تکرار کيا تھي

مگر وعدہ کرتے ہوئے عار کيا تھي

*

دو لفظي رديف / کيا تھي

سہ لفظي رديف                 کيا کہوں اپنے چمن سے ميں جدا کيوں کر ہوا

اور اسير حلقہ و دام ہوا کيوں کر ہوا

*

سہ لفظي رديف / کيوں کر ہوا

يہ مثاليں بانگ درا کي غزليات حصہ اول کي ہيں ان کے علاوہ اس حصہ کي دوسري غزليں بھي يک لفظي دو لفظي اور سہ لفظي رديفوں پر مشتمل ہيں نمونتاً ايک ايک مصرع ديکھيے

                                    عداوت ہے اسے سارے جہاں سے

*

رديف: سے

انوکھي وضع ہے سارے زمانے سے نرالے ہيں

*

جنہيں ميں ڈھونڈتا تھا آسمانوں ميں زمينوں ميں

*

رديف: ميں

کشادہ دستِ کرم جب وہ بے نياز کرے

*

رديف: کرے

            دو لفظي رديف کي حامل غزلوں کے مصرعے

لاوں وہ تنکے کہيں سے آشيانے کے ليے

*

رديف: کے ليے

ظاہر کي آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئي

*

رديف: کرے کوئي

                                    کہوں کيا آرزوئے بے دل مجھ کو کہاں تک ہے

*

رديف: تک ہے

ترے عشق کي انتہا چاہتا ہوں

*

رديف: چاہتا ہوں

سختياں کرتا ہوں دل پر غير سے غافل ہوں ميں

*

رديف: ہوں ميں

سہ لفظي رديف کي حامل ايک غزل کا مصرع

مجنوں نے شہر چھوڑا تو صحرا بھي چھوڑدے

*

رديف: بھي چھوڑ دے

حصہ اول "بانگِ درا" کي غزليات کا رديفوں کے حوالے سے گوشوارہ بنائيں تو درج ذيل نتائج برآمد ہوتے ہيں

يک لفظي رديفيں               :           5

دو لفظي رديفيں                 :           6

سہ لفظي رديفيں                :           2

ہر شعر ميں رديف کو قرينے کے ساتھ نبھايا اور کہيں بھي اس کا استعمال بوجھل يا رديف برائے رديف معلوم نہيں ہوا- اقبال کے ہاں اس غزل ميں رديف شعري انداز ميں غزل کا حصہ بنتي نظر آتي ہے اور کسي شعر ميں اس کے استعمال پر تضع يا بناوٹ کا گمان نہيں گزرتا اگرچہ يہ بھي ايک حقيقت ہے کہ طويل رديف ہر جگہ اپنا فطري پن برقرار نہيں رکھ سکتي اور بڑے سے بڑے شاعروں کے ہاں  بھي کہيں کہيں تکلف اور تضع کي حامل نظر آتي ہيں- اقبال کي غزل مختصر ہے- صرف چار شعروں کي- شايد اسي ليے اقبال نے اسے مہارت کے سات نبھايا ہے اور ہر شعر ميں اس رديف کا استعمال تخليقي انداز ميں ہوا ہے-

مطلع کے علاوہ باقي شعر ديکھيے-

گل   تبسم   کہہ   رہا   تھا   زندگاني   کو   مگر

شمع  بولي،  گريہ  غم  کے سوا کچھ بھي نہيں

راز  ہستي  راز ہے  جب تک کوئي محرم نہ ہو

کھل گيا جس دم تو محرم کے سوا کچھ بھي نہيں

زائرانِ   کعبہ   سے   اقبال   يہ   پوچھے کوئي

کيا  حرم  کا تحفہ  زمزم کے سوا کچھ بھي نہيں

*

حصہ دوم کي غزليات ميں رديفوں کي تفصيل يوں ہے

يک لفظي

زمانہ ديکھے گا جب مرے دل سے محشر اٹھے گا گفتگو کا

*

رديف: کا

چمک تيري عياں بجلي ميں، آتش ميں، شرارے ميں

*

رديف: ميں

دو لفظي

اک ذرا افسردگي تيرے تماشاوں ميں تھي

*

رديف: ميں تھي

مثالِ پر توِ مے طوفِ جام کرتے ہيں

*

رديف: کرتے ہيں

اسے ہے سودائے بخيہ کاري، مجھے سرِ پيرہن نہيں ہے

*

رديف: نہيں ہے

زمانہ آيا ہے بے حجابي کا، عام ديدار يار ہوگا

رديف: ہوگا

پنج لفظي

زندگي انساں کي اِک دم کے سوا کچھ بھي نہيں

*

رديف: کے سوا کچھ بھي نہيں

جاری ہے

تحریر: رابعہ سرفراز


 متعلقہ تحريريں :

ستارہ

پيار کا پہلا شہر (حصّہ ششم) 

منير نيازي

تلفظ اور املا

پيار کا پہلا شہر (حصّہ پنجم)