• صارفین کی تعداد :
  • 3766
  • 8/16/2011
  • تاريخ :

آب زمزم ھر درد کي دوا

الله

سعي کي جگہ

عَنْ اَبِي بَصِيرٍ قَالَ:

سَمِعْتُ اَبَا عَبْدِ اللّٰہِ (ع) يَقُولُ: مَا مِنْ بُقْعَةٍ اَحَبَّ اظلَي اللّٰہِ مِنَ الْمَسْعَيٰ لِاَنَّہُ يُذِلُّ فِيھَا کُلَّ جَبَّارٍ-

امام جعفر صادق (ع) نے فرمايا:”‌کوئي بھي جگہ خدا وند عالم کے نزديک سعي کي جگہ سے محبوب اور پسنديدہ نھيں ھے کيونکہ وھاں ھر جبار وستم گر ذليل خوارهوتا ھے ”-

مقبول شفاعت

قَالَ عَلِيُّبْنُ الْحُسَيْنِ (ع) : السَّاعِي بَيْنَ الصَّفَا وَالْمَرْوَةِ تَشْفَعُ لَہُ الْمَلاٰئِکَةُ فَتُشَفَّعُ فِيہِ بِالاظيجَابِ-

امام زين العابدين (ع) فرماتے ھيں : ”‌فرشتہ صفا و مروہ کے درميان سعي کرنے والے کي(خدا سے) شفاعت طلب کرتے ھيں اور ان کي دعا قبول هوتي ھے ‘ ‘ -

ھرولہ

عَنْ اَبِي عَبْدِ اللّٰہِ(ع) قَالَ: صَارَ السَّعْيُ بَيْنَ الصَّفَا وَالْمَرْوَةِ لِاَنَّ اظبْرَاہِيمَ عَرَضَ لَہُ اظبْلِيسُ فَاَمَرَہُ جَبْرَئِيلُ(ع)، فَشَدَّ عَلَيْہِ فَھَرَبَ مِنْہُ،فَجَرَتْ بِہِ السُّنَّةُ - يعني بالْھَرْوَلَة -

امام جعفر صادق (ع) نے فرمايا: ”‌صفا و مروہ کے درميان سعي ميں (ھرولہ)اس لئے ھے کہ ابليس نے خود کو وھاں جناب ابراھيم (ع) پر ظاھر کيا اس وقت جبرئيل (ع)نے جناب ابراھيم (ع) کو شيطان پر حملہ کا حکم ديا آپ (ع) نے اس پر حملہ کيا تو وہ بھاگا اس وجہ سے ھرولہ سنت بن گيا ”-

صفا و مروہ کے درميان بيٹھنا

عَنْ اَبِي عَبْدِ اللّٰہِ (ع): لاٰ يَجْلِسُ بَيْنَ الصَّفَا وَالْمَرْوَةِ اظلاَّ مَنْ جَھَدَ-

امام جعفرصادق(ع) نے فرمايا: ”‌صفاو مروہ کے درميان نہ بيٹھے مگر وہ شخص جو تھک جائے ‘ ‘ -

اھل عرفات پر فخر

قال رسول اللہ (ص): ”‌اظنّ اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ يُباھي مَلائِکَتَہُ عَشِيَّةَ عَرَفَة بِاَھْلِ عَرَفَةَ فَيَقُولُ: اُنْظُرُوا اِلي عِبادي اتَوْني شُعْثاً غُبْراً”-

رسول خدا صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم نے فرمايا: ”‌بلا شبہ خدا وند عالم روز عرفہ کے عصر کے وقت اھل عرفات کے سلسلہ ميں فرشوں سے فخر ومباھات کرتا ھے اور فرماتا ھے :ميرے بندوں کو ديکھو جو پريشاں حال اور غبار آلود ميرے پاس آئے ھيں”-

مشعر الحرام

قال رسول اللہ(ص): - وَھُوَ بِمنيٰ -: ”‌لَوْ يَعْلَمُ اَہْلُ الجَمْعَ بِمَنْ حَلُّوا اَوْبِمَنْ نَزَلُوا لاَ سْتَبْشَرُوا بالفَضْلِ مِنْ رَبِّھِمْ بَعْدَ المَغْفِرَةِ”-

رسول خدا (ص)جب منيٰ ميں تشريف فرما تھے آپ (ص) نے فرمايا: ”‌اگر اھل مشعر جان ليتے کہ کس کي بارگاہ ميں آئے ھيں اور کس لئے آئے ھيں تو مغفرت اور بخشش کے بعد خدا کے فضل کي بنا پر وہ ايک دوسرے کو بشارت ديتے ”-

بشکريہ : الحسنين ڈاٹ کام


متعلقہ تحريريں:

دين اور کعبہ کا ربط

مکہ ميں نماز جماعت

حج کا نعره

حج کي منتخب حديثيں (حصّہ هفتم)

ايک حديث کي تشريح