• صارفین کی تعداد :
  • 727
  • 8/5/2011
  • تاريخ :

ستارہ

ستاره

قمر  کا  خوف  کہ  ہے  خطرۂ  سحر  تجھ کو

مآل  حسن  کي  کيا  مل  گئي  خبر  تجھ  کو؟

متاع  نور  کے  لٹ  جانے  کا ہے ڈر تجھ کو

ہے  کيا  ہراس  فنا  صورت  شرر  تجھ  کو؟

زميں  سے  دور  ديا  آسماں  نے گھر تجھ کو

مثال    ماہ    اڑھائي   قبائے   زر   تجھ   کو

غضب ہے پھر تري ننھي سي جان ڈرتي ہے!

تمام    رات    تري    کانپتے    گزرتي    ہے

چمکنے  والے  مسافر!  عجب  يہ  بستي  ہے

جو  اوج  ايک کا ہے ، دوسرے کي پستي ہے

اجل  ہے  لاکھوں ستاروں کي اک ولادت مہر

فنا   کي   نيند   مے   زندگي  کي  مستي  ہے

وداع   غنچہ   ميں   ہے   راز   آفرينش   گل

عدم   ،   عدم  ہے  کہ  آئينہ  دار  ہستي  ہے!

سکوں  محال  ہے  قدرت  کے  کارخانے ميں

ثبات    ايک   تغير   کو   ہے   زمانے   ميں

 

شاعر کا  نام : علامہ محمد اقبال ( iqbal )

کتاب کا نام : بانگ درا  ( bang e dara )


 متعلقہ تحريريں :

پيار کا پہلا شہر (حصّہ پنجم)

پيار کا پہلا شہر (حصّہ چهارم)

بے قراري سي بے قراري ہے

پيار کا پہلا شہر (حصّہ سوّم)

مولانا محمد علي جوہر