• صارفین کی تعداد :
  • 2510
  • 7/31/2011
  • تاريخ :

صفات ثبوتي و صفات سلبي

الله

صفات ثبوتي

صفات ثبوتي وہ صفات ھيں جو ذات خدا کے کمالات کو بيان کرتي ھيں- قابل غور ھے کہ خدا کي صفات ثبوتي ميں ذرہ برابر نقص وکمي کا شائبہ نھيں پايا جاسکتا اور اگر کوئي ايسا مفھوم پيدا بھي ھوگيا جو کمال پردلالت کرنے کے باوجود کسي طرح کا نقص بھي رکھتا ھو تو اس کو خدا کي صفات ثبوتي کا جز قرار نھيں ديا جاسکتا مثلاً صفت ”‌شجاعت”کہ جس کے معني کسي ايسي شيء سے روبرو ھوتے وقت خوف نہ کھانے اور نہ ڈرنے کے ھيں جس سے کسي طرح کے نقصان ياخطرے کا انديشہ ھو- اگر چہ ايک جھت سے يہ صفت کمال ھے کيونکہ موجود شجاع، موجود غير شجاع سے افضل اور کامل تر ھے- ليکن صفت شجاعت، اس بات پر بھي دلالت کرتي ھے کہ شخص شجاع کو کسي نہ کسي طرح کا نقصان پھونچ سکتا ھے اور کائنات ميں ايسي کوئي شے نھيں ھے جو خدا کو نقصان پھونچا سکے لھٰذا خدا کو ”‌شجاع” نھيں کھا جا سکتا- اس طرح کے موارد ميں خدا سے يہ دونوں صفتيں، شجاعت اور بزدلي سلب ھوجاتي ھيں- 

المختصر يہ کہ صفات ثبوتي وہ صفات ھيں جوايسے کمال پر دلالت کرتي ھيں جس ميں نقص کي قطعاً کوئي گنجائش نھيں ھوتي- 

صفات سلبي

يہ وہ صفات ھيں جو ذات خدا سے کسي بھي طرح کے نقص کي نفي کرتي ھيں جيسے جسماني نا ھونا، عاجز نہ ھونا، بے مکاني وبے زماني ھونا- 

صفات سلبي، ديگر موجودات سے خدا کي غيريت کوبيان کرنے کے ساتھ ساتھ خدا کي ذات کے اِن نقائص سے مبرہ ھونے پر بھي دلالت کرتي ھيں- ليکن صفات ثبوتي، خدا کے ان کمالات پر دلالت کرتي ھيں جن کا خدا حامل و واجد ھے- 

تھوڑي توجہ دينے پر واضح ھوجاتا ھے کہ صفات سلبي کي بازگشت بھي صفات ثبوتي کي طرف ھے کيونکہ جو کچھ صفات سلبي کے ذريعے خدا سے نفي يا سلب ھوتا ھے، نقص ھے اور نقص خود بذاتہ امرعدمي وسلبي ھے اور سلبِ سلب، ايجاب و اثبات ھوتا ھے- جب ھم يہ کھتے ھيں کہ ”‌خدا عاجز نھيں ھے” تو درحقيقت ھم يہ کھتے ھيں کہ ”‌ خدا فاقد قدرت نھيں ھے” اور ”‌ عاجز نہ ھونا ” مساوي ھے ”‌قادر ھونے” کے- 

صفات ثبوتي کو صفات جماليہ اور صفات سلبي کو صفات جلاليہ بھي کھا جاتا ھے- 

علم

خدا ھر شئے سے آگاہ ھے اور کوئي بھي چيز اس کے علم سے ماوراء اور خارج نھيں ھے- چھوٹا يا بڑا، اھم يا غير اھم جو کچھ ماضي ميں اب تک گذر چکا ھے يا آئندہ آنے والا ھے، سب کچھ خدا کے علم ميں ھے - اور کيا يہ ممکن ھے کہ وہ خدا جس نے ساري کائنات کو خلق کيا ھے، وہ کائنات جس کا ذرہ ذرہ اپني ھستي ميں وجود خدا کا محتاج ھے، اپني مخلوق سے بے خبر ھو؟ 

قرآني مثاليں

عقلي دلائل سے ھٹ کر قرآن کريم کي نہ جانے کتني آيتيں ھيں جو علم خدا کے لامتناھي ھونے پر دلالت کرتي ھيں: 

(واعلموا ان الله بکل شي عليم) 

اور جان لو کہ خدا کو ھر چيز کا علم ھے-

(الا يعلم من خلق وھو اللطيف الخبير) 

کيا پيدا کرنے والا نھيں جانتا ھے جب کہ وہ لطيف بھي اور خبير بھي ھے-

(وھو الله في السمٰوات وفي الارض يعلم سرکم وجھرکم ويعلم ماتکسبون) وہ آسمانوں اور زمين ھر جگہ کا خدا ھے وہ تمھارے باطن اور ظاھر اور جو تم کاروبار کرتے ھو، سب کو جانتا ھے-

(ويعلم مافي السمٰوات ومافي الارض) 

اور وہ زمين و آسمان کي ھر چيز کوجانتا ھے-

(وعندہ مفاتح الغيب لا يعلمھا الا ھو ويعلم مافي البر والبحر وما تسقط من ورقة الايعلمھا ولا حبة في ظلمات الارض ولا رطب ولا يابس الا في کتاب مبين) 

اور اس کے پاس غيب کے خزانے ھيں جنھيں اس کے علاوہ کوئي نھيں جانتا ھے اور وہ خشک و تر سب کا جاننے والا ھے- کوئي پتہ بھي گرتا ھے تو اسے اس کا علم ھے- زمين کي تاريکيوں ميں کوئي دانہ يا کوئي خشک و تر ايسا نھيں ھے جو کتاب مبين کے اندر محفوظ نہ ھو-

بشکريہ : الحسنين ڈاٹ کام

متعلقہ تحريريں:

نظريہ فطرت، اجمالي طور پر

فطرت اور خدا

عصر بعثت اور الله پر ايمان و اعتقاد

ديگر آسماني کتابوں ميں بداھت وجود خدا

وجود خدا بديھي ھے قرآن ميں بداھت وجود خدا