• صارفین کی تعداد :
  • 4666
  • 7/30/2011
  • تاريخ :

آب زمزم ھر درد کي دوا

بسم الله الرحمن الرحيم

آب زمزم ھر درد کي دوا

قَالَ رَسُولُ اللّٰہِ (ص): مَاءُ زَمْزَمَ دَوَاءٌ لِمَا شُرِبَ لَہُ-

رسول خدا صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم نے فرمايا : ”‌زمزم کا پاني ھر اس درد کي دوا ھے جس کي نيت سے وہ پيا جائے ” -

زمين کا بھترين پاني

قَالَ اَمِيرُ الْمُوْمِنِينَ (ع): مَاءُ زَمْزَمَ خَيْرُ مَاءٍ عَلَي وَجْہِ الْاَرْضِ-

حضرت علي (ع)نے فرمايا: ”‌آب زمزم روئے زمين پر بھترين پاني ھے ”-

حجر اسماعيل

عَنْ ابِي عَبْدِ اللّٰہِ (ع) قَالَ: الْحِجْرُ بَيْتُ اظ•ِسْمَاعِيلَ وَفِيہِ قَبْرُ ھَاجَرَ وَقَبْرُ اسْمَاعِيلَ-

امام جعفر صادق نے فرمايا: ”‌حجر ،جناب اسماعيل (ع) کاگھر ھے اور اس ميں آپ (ع) کي اور آپ کي والدہ جناب ھاجرہ (ع)کي قبر ھے ”-

عن ابي عبد اللہ (ع) قال: ان اسماعيل (ع) تُوُفّي وَھُوَ اِبنُ مائَةَ وَثَلاثِينَ سَنَة وَدُفِنَ بِالحِجْر مَعَ اُمِّہ-

امام جعفر صادق نے فرمايا: ”‌جناب اسماعيل (ع) نے ايک سو تيس سال کے بعد وفات پائي اور اپني والدہ کے ھمراہ حجر ميں دفن کئے گئے ”-

حطيم

معاويہ ابن عمار کھتے ھيں:ميں نے حطيم کے بارے ميں امام جعفرصادق ںسے دريافت کيا : فَقَالَ ھُوَ مَا بَيْنَ الْحَجَرِ الْاَسْوَدِ وَبَيْنَ الْبَابِ”-

”‌آپ (ع) نے فرمايا : يہ حجر اسود اوردر کعبہ کے درميان ھے” ميں نے سوال کيا کہ اسے حطيم کيوں کھتے ھيں ؟

فَقَالَ لِاَ نَّ النَّاسَ يَحْطِمُ بَعْضُھُمْ بِعْضاً ھُنَاکَ-

”‌فرمايا :اس لئے کہ لوگ اس جگہ ايک دوسرے کو (کثرت جمعيت کي وجہ سے ) دباتے ھيں ”-

ملتزم

قٰال رَسُول اللّٰہ (ص): بَيْنَ الرُّکْنِ وَالْمَقٰامِ مُلْتَزَمٌ مٰايَدْعُوا بِہِ صٰاحِبُ عٰاھَةٍ اِلاّٰ بَرِيَ-

رسول خدا صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم نے فرمايا: ”‌رکن حجر اسود اور مقام ابراھيم (ع) کے درميان ملتزم ھے کوئي بھي بيماري اور مشکل ميں مبتلا شخص وھاں دعا نھيں کرتا مگر يہ کہ اس کي حاجت پوريهوتي ھے ”-

مستجار

قَالَ الصَّادِقُ(ع): بَنيٰ اظبْراہِيمُ الْبَيْتَ---وَجَعَلَ لَہُ بَابَيْنِ بَابٌ اظلَي الْمَشْرِقِ وَ بَابٌ اظلي الْمَغْرِبِ،وَالْبَابُ الَّذِي اظلَي الْمَغْرِبِ يُسَمَّي الْمُسْتَجَارَ-

امام جعفر صادق(ع) فرماتے ھيں : ”‌جنا ب ابراھيم خليل ںنے کعبہ کي تعمير فرمائي اور اس کے لئے دو دروازے بنائے، ايک در مشرق کي طرف ،اور ايک در مغرب کي طرف،جودر مغرب کي طرف ھے اسے مستجار کھتے ھيں‘ ‘-

رکن يماني

رَاَيْنٰاکَ تُکْثِرُ اِسْتِلاٰمَ الرُّکْنِ الْمَيٰانيِّ فَقَالَ: مٰا اَتَيْتُ عَلَيْہِ قَطُّ اِلاّٰ وَجَبْرَئيلُ قٰائِمٌ عِنْدَہُ يَسْتَغْفِرُ لِمَنْ اسْتَلَمَہُ-

عطا کھتے ھيں :

”‌ لوگوں نے حضرت رسول خد ا صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم سے کھا ھم بھت ديکھتے ھيں کہ آپ(ص)رکن يماني کا بوسہ لے رھے ھيں فرمايا: ميں ھر گز رکن يماني کے پاس نھيں آيا مگر يہ کہ ميں نے ديکھاکہ جبرئيل (ع) وھاں کھڑے ھيں اور جو لوگ اسے چوم رھے ھيں ان کے لئے مغفرت کي دعا کر رھے ھيں ”-

بشکريہ : الحسنين ڈاٹ کام

متعلقہ تحريريں:

مکہ ميں نماز جماعت

حج کا نعره

حج کي منتخب حديثيں (حصّہ هفتم)

ايک حديث کي تشريح

حج کي منتخب حديثيں (حصّہ ششم)