• صارفین کی تعداد :
  • 1541
  • 6/11/2011
  • تاريخ :

فارسي ادب غزنوي دور ميں (حصّہ دوّم)

فارسي ادب

ايراني نقاد فارسي ادبيات کي پيشرفت کے لئے سلطان محمود کي کوششوں کا اعتراف بڑي نيم دلي سے کرتے ہيں.

 ان کي نظر ميں سامانيوں کا رتبہ اس ضمن ميں غزنويوں سے بہت اونچا ہے. کيونکہ ساماني ايراني الاصل تهے. انہيں اپنے ماضي سے محبت تهي اور اس ماضي کو زنده و محفوظ رکهنے کے لئے بڑي کوششيں کيں. ايراني فضلاء کا خيال ہے کہ سامانيوں کے برعکس غزنوي ترکي النسل تهے. انہيں ايران اور اس کي روايات سے دلچسپي نہيں تهي. يہ تو صرف مدح و ستائش کے خريدار تهے. انہوں نے صرف ان شعراء کو انعام و کرام سے نوازا جو ان کے قصيدے کںتے تهے. ليکن ايراني محققين کي يہ رائے انصاف پر مبني نہيں ہے. فردوسي کے ساته محمود کي بدولت کے فرضي يا حقيقي واقعہ کي وجہ سے محمود کے بارے ميں ان کي آراء ميں حقيقت کم اور تعصب زياده ہوتا ہے. عنصري اور فرخي نے قصيده گوئي کے علاوه غزل گوئي کي طرف بهي توجہ دي. اگر چہ قطعہ گوئي رواج نہ پا سکي ليکن ترجيع بند اور ترکيب بند کے اچهے نمونے غزنوي شعرا کے ہاے مل جاتے ہيں. مسمط تو اسي دور ميں ايجاد ںوئي. دکتر محجوب نے مختلف اوزان ميں اس عہد کي 51  مثنويوں کي فہرست دي ہے. ان ميں عنصري کي "وامق و عذرا" اور فردوسي کا شاہنامہ بهي شامل ہيں. اس دور کے شعراء کے کلام ميں واقعہ نگاري اور فطرت نگاري کي عمده مثاليں اور مناظر فطرت کي فنکارانہ تصوير کشي ملتي ہے. جزئيات نگاري شاہنامہ کي ايک اہم نکتے کي نشاندہي کي ہے کہ اس دور کے عاشقوں ميں بعد کے ادوار کے عشاق جيسي خاکساري اور نيازمندي نہيں ہے. اس کي وجں شايد يں ہے کہ فتوحات و مہمات کے اس دور ميں لوگوں ميں جنگ جوئي کے جذبات غالب تهے.

پيشکش : شعبہ تحرير و پيشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

پہلا فارسي شاعر

غزنوي اور غوري دور حکومت ميں فارسي ادب

حق گو درويش

فضول خرچ فقير

فتح کي خوشخبري