• صارفین کی تعداد :
  • 1461
  • 6/11/2011
  • تاريخ :

فارسي ادب غزنوي دور ميں

فارسي ادب

غزنويوں کي حکومت کا زمانہ زياده طويل نہيں ہے حقيقت ميں سلطان محمود کا دور ہي اس ميں زياده اہميت کا حامل ہے.

اس کے عہد ميں غزني عالم اسلام ميں ايک نئے مرکز علم و ادب کي حيثيت سے ابهرا. محمود کو جہان کہيں علماء کا پتہ چلتا وه انہيں اپنے دربار ميں لانے کي کوشش کرتا. پروفيسر براؤن نے سلطان کو اغواء کننده علماء لکها ہے. سلطان کو شعر و شاعري سے بهي بڑي دلچسپي تهي. دربار ميں چار سو شعراء موجود تهے. فوجي مہمات ميہ اکثر شعراء سلطان کے ہم رکاب رہتے تهے اور شعراء نے محمود کے جنگي کارناموں کو شعر کے قالب ميں ڈهال کر ابدي بنا ليا. سلطان کي داد و دہش کا سن کر شعراء دربار محمودي ميں پہنچنے کي آرزو کيا کرتے تهے. اس کے ملک الشعراء عنصري کے بارے ميں لکها گيا ہے کہ اس کے ہاں کهانا چاندي کے ديگچوں ميں پکتا تها اور سونے کے برتنوں ميں کهايا جاتا تها. سلطان کي سرپرستي کي وجہ سے فارسي شاعري نے سے بڑا لگاؤ رکهتے تهے. انہوں نے شعرا کي بہت قدر افزائي کي. سلطان کي ساري زندگي جنگ و جہاد ميں گزري. لوگوں کو اس مقصد کے لئے ذبني طور پر تيار کرنے کي ضرورت تهي اور سلطان کے شعراء نے اس فرض بخوبي انجام ديا. محمود اس وجہ سے بهي شعراء کي قدر کرتا تها.

غزنوي عہد کو فارسي کا زريں دور کہا جا سکتا ہے . شاہنامہ فردوسي، فارسي شاعري کا اتنا بڑا شاہکار ہے کہ اس دور کو فردوسي کے نام سے منسوب کيا جا سکتا ہے.

 عنصري اور فرخي کے قصائد ، فارسي شاعري کي تاريخ ميں بڑي اہميت کے حامل ہيں . اس عہد ميں فارسي شاعري کي ترقي کا ايک اور سبب يہ ہے کہ ساماني دور ميں اس ترقي کے لئے زمين ہموار ںوچکي تهي. نثر و نظم ميں شاہنامہ نويسي کي ابتدا ہو چکي تهي. بلخي نے اس کي ابتدا کي اور دقيقي نے اسے آگے بڑهايا. اور فردوسي نے اسے کمال تک پہنچايا. عنصري و فرخي کي قصيده گوئي کے لئے راستہ ، رودکي نے صاف کرديا تها.

پيشکش : شعبہ تحرير و پيشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

غزنوي اور غوري دور حکومت ميں فارسي ادب

حق گو درويش

فضول خرچ فقير

فتح کي خوشخبري

بزدل غلام