• صارفین کی تعداد :
  • 1567
  • 5/11/2011
  • تاريخ :

شعر  حضرت زهرا (عليهاالسلام) کی شان میں

حضرت زهرا (عليهاالسلام)

جنّت     بغیر     الفت     زھرا   (س) سراب    ہے

کیا    عیش    اسکا    جس کا    عقیدہ    خراب   ہے

کوثر    دیا    ہے   ہم   نے   اکیلے   نہیں   ہو   تم

خالق   کا   مصطفی   سے   یہ   پیارا   خطاب  ہے

آئے    ہیں    درد    دل    لئے    اس   بارگاہ   میں

یہ   محفل  شفیعہ یوم  الحساب  ہے

کوثر   کی   بات   بات   پہ   دختر   کی   بات  ہے

یہ  دیکھ  کے عدو کا  کلیجہ  کباب    ہے

آئے  نبی (ص)  کے  پاس  تھے  زھرا (س) کے خواستگار

بولے    نبی  (ص) کہ    کفو   فقط   بو   تراب   ہے

جن کی   زمین   خراب  تھی  اک  گل  نہ  کھل  سکا

زھرا   (س) بہار     باغ     رسالت     مآب     ہے

ہے    فرق   بیویوں   میں   و   بنت   رسول   میں

پتھر   ہے   ان   میں  بعض  تو  یہ  لعل  ناب  ہے

ابتر   جو   کہہ   رہے   تھے   پیغمبر کو   بار   بار

کوثر    کا    یہ    عطیہ    انہی    کا    جواب   ہے

میخانہ   جب   کھلا   ہے   تو   پیتے  رہیںگے  ہم

تطہیر     کی    ردا    میں    چھایہ    شراب    ہے

مریم   کے   ہاں   کھلی   تھی   فقط  ایک  ہی  کلی

زھرا  بہار  باغ  رسالت مآب  ہے

لینے     کو     انتقام     وہ    آئے    اے    صابری

لیکر    علی    کی   تیغ   جو   پشت   حجاب   ہے

بشکریہ : الحسنین ڈاٹ کام


متعلقہ تحریریں :

صوبہ سرحد میں بچوں کا ادب (تیسرا حصّہ)

صوبہ سرحد میں بچوں کا ادب (دوسرا حصّہ)

صوبہ سرحد میں بچوں کا ادب

بلاد اسلامیہ

بانگ درا کے حصّہ دوم کی غزل نمبر (7)