• صارفین کی تعداد :
  • 4260
  • 4/24/2011
  • تاريخ :

مطالعہ کرنے اور گردن درد کا باہمی تعلق

گردن درد

٭  آپ کس قدر مطالعہ کرنے کے عادی ہیں ؟

٭  ہر روز کتنے گھنٹے  پڑھنے لکھنے میں مشغول رہتے ہیں ؟

٭ مطالعہ کرنے کے  صحیح اصولوں کے  متعلق آپ کس حد تک  آگاہ ہیں ؟

٭  کیا آپ کی نظر میں پڑھنے لکھنے سے ہڈیوں اور جوڑوں کے امراض لاحق ہو سکتے ہیں ؟

مندرجہ بالا  سوالات کے جوابات تلاش کرنے کے لیۓ  ہم فیزیوتھراپسٹ ڈاکٹروں اور دوسرے متعلقہ  طبی ماہرین کے تجربات سے رہنمائی لیں گے ۔

فیزیوتھراپسٹ اس بات پر تاکید کرتے ہیں کہ طالب علموں اور دوسرے  مطالعہ کرنے کے شوقین  افراد کو مطالعہ کرنے کے صحیح اصولوں سے آگاہ کرنا بےحد ضروری ہے ۔

 بعض لوگوں کو زمین پر لیٹ کر یا بیٹھ کر پڑھنے کی عادت ہوتی ہے ۔ کیا  مطالعہ کرنے کی یہ روش درست ہے ؟ اگر یہ طریقہ غلط ہے تو پھر پڑھنے لکھنے یا مطالعہ کرنے کے لیۓ  بہترین   جسمانی حالت کون سی ہونی چاہیۓ ؟

مطالعہ کرنے کے دوران سر کو 20 سے 25 درجہ سے زیادہ خم نہیں ہونا چاہیۓ ۔ گردن کے خم کرنے اور سیدھا کرنے کے میزان کو ہم بڑی آسانی کے ساتھ تشخیص دے سکتے ہیں ۔ پنسل کو سامنے والے دانتوں کے درمیان یوں  رکھیں کہ یہ زمین کے موازی ہو ۔ اب سر کو اس  حد تک خم کریں کہ  پنسل 20 سے 25 درجہ سے زیادہ خم نہ ہو ۔

مطالعہ کرتے ہوۓ گردن کے خم اور راست کرنے پر  دھیان دینا چاہیۓ ۔ سر کو بہت زیادہ خم نہیں کرنا چاہیۓ کیونکہ اگر اس غلط حالت کا مسلسل تکرار کیا جاۓ تو متعلقہ شخص گردن درد یا  پھر گردن  کے arthritis   کا شکار ہو سکتا ہے ۔

بالکل سیدھا بیٹھ کر پڑھنا یا لکھنا بےحد مشکل کام ہے اور اکثر اوقات لوگ مطالعہ کے دوران آگے کی طرف جھک جاتے ہیں ۔ اس مشکل سے نجات حاصل کرنے کے لیۓ ہمیں زاویہ دار مخصوص کرسیوں کا استعمال کرنا چاہیۓ  جن پر بیٹھ کر پڑھنے سے کتاب صورت کے تقریبا سامنے آ جاتی ہے اور سر کو خم کرنے کی ضرورت پیش نہیں آتی ۔

بعض طالب علموں کو الٹے لیٹ کر پڑھنے یا لکھنے کی عادت ہوتی ہے ۔  یہ حالت بھی نقصان اور درد کا باعث بنتی ہے ۔ اس حالت میں سر پیچھے کی طرف چلا جاتا ہے اور زیادہ  دورانیہ اس حالت میں رہنے سے گردن تھکاوٹ اور    آسیب پذیر ہو جاتی ہے ۔

بعض افراد لیٹ کر تکیہ سر کے نیچے اور کتاب سینے پر  رکھے ہوۓ مطالعہ کرنے کے عادی ہوتے ہیں ۔ مطالعہ کرنے کی اس غلط روش یا حالت کو عادت نہیں بنانا چاہیے کیونکہ لمبا عرصہ اس عادت سے جسم کو نقصان پہنچ سکتا ہے ۔

جاری ہے

تحریر : سید اسداللہ ارسلان


متعلقہ تحریریں :

سل اور دردِ شقیقہ کی بیماری کیلئے  امام رضا علیہ السلام کی دعا

ثالول کی بیماری کیلئے امام رضا علیہ السلام کی دعا

بخار کے درد کیلئے  امام رضا علیہ السلام کی دعا

گاجر کے فائدے

فالج کا نقصان کم کرنے میں ہلدی مددگار