• انقلاب اسلامی کے لیۓ جدوجہد
    • آیت الله العظمی مرعشی نے حضرت امام خمینی کی حمایت میں ایران و عراق میں مقیم مراجع تقلید کے پاس خطوط اور ٹیلیگرام بھی بھیجے هیں۔
    • امام خمینی کی تحریک کے مددگار
    • آیت الله مرعشی نجفی کے حکم سے اصفهان میں علامه مجلسی کے مرقد کی مرمت کی گئی، شیعه فقهاء کی کتابوں کو شیعه، سنی اور عیسائی علماء نیز دنیا کی یونیورسٹیوں کو هدیه دینا٬ موصوف کی ایک ثقافتی کارکردگی هے۔
    • آیت اللہ مرعشی نجفی کی تصانیف
    • سن 1366 هجری قمری میں موصوف کے سب سے پهلے « نخبه الاحكام » و « سبيل النجاه » نامی رسالے شائع هوئے هیں اور اُسی زمانه سے موصوف مرجع تقلید بن گئے
    • کتاب حاصل کرنے کی کوشش
    • اُسی موقع کاظم دجیلی آپهنچا جو کتاب خریدنے میں برطانویوں کا دلال تھا، وه قدیمی کمیاب اور نادر کتابوں کو هر طریقه سے حاصل کرتا تھا
    • باقی رهنے والا خزانه
    • جب سے هم قم میں ساکن هیں، حضرت معصومه قم کے حرم میں صبح میں نماز جماعت نهیں هوتی تھی،هم نے اِس کو سنت وهاں قائم کیا، اور تقریبا 60 سال سے اِس وقت تک صبح سویرے حرم مطهر کے دروازه کهلنے سے پهلے
    • تدریس کے فرائض
    • آیت الله مرعشی نجفی، حضرت آیت الله حائری کے حکم سے تدریس میں مشغول هوئے، اور جوان طلاب کے لئے ادبیات عرب، منطق اور اصول و فقه کی تدریس فرمائی
    • آيت الله العظمى سید شهاب الدین مرعشى نجفى
    • موصوف سن 1315 هجری قمری میں شهر نجف میں پیدا هوئے، آپ کا نام شهاب الدین رکھا گیا، موصوف کے والد گرامی آیت الله سید شمس الدین محمود مرعشی (متولد 1279 و متوفی 1338 هجری قمری) نجف اشرف میں علوم اسلامی کے مدرس اور فقیه تھے
    • مدرس کے حالات زندگی
    • آیت اللہ سید حسن مدرس 1287ھ ق میں صوبہ اصفہان کے ضلع اردستان میں پیدا ہو‏ئے۔ چھ سال کی عمر میں تھے اپنے دادا (میر عبدالباقی) کے ساتھ جو ایک مولوی تھے قشمہ میں چلے گئے اور 8 سال وہیں رہے۔ ان کی ابتدائی تعلیم وہیں ہوئی۔ اس کے بعد تعلیم کےلیے اصفہان چلے گئے
    • شیخ فضل اللہ نوری کی زندگی پر ایک مختصر نظر
    • شیخ فضل اللہ ایرانی تاریخ کے ایک عظیم مذھبی رہنما تھے جو ایران کے صوبہ مازندران کے ضلع نور میں سن 1259 ہجری میں پیدا ہوۓ ۔ ان کے والد، ملا عباس کحوری، اپنے دور کے مشہور علماء میں سے تھے۔ بچپن کا زمانہ گزرنے کے بعد شیخ نے دینی تعلیم کی طرف متوجہ ہوئے۔
    • آيت اللہ احمد جنّتي کي عظيم شخصيت
    • تحصیل علم کے دوران آیت اللہ جنتی اپنے دور کے فضلا مثلا شهيد سعيدي‌، شيخ‌ محسن‌ حرم‌پناهي‌، شهيد مفتح‌، سيد كرامت‌الله‌ ملك‌ حسينی، شيخ‌ ابوالقاسم‌ خزعلی‌ و شيخ‌ محمد علي‌ موحدي‌ كرماني‌ کے ساتھ مذھبی بحث کیا کرتے
    • آيت اللہ احمد جنّتي
    • آیت اللہ احمد جنّتی 3 اسفند ( ایرانی مہینہ ) سن 1305 ہجری شمسی کو اصفہان سے تین کلومیٹر مغرب میں واقع ایک گاؤں لادان میں پیدا ہوۓ ۔
    • شيخ مفيد کا وظيفہ انجام دينا
    • شیخ مفید نے خود کو مباحثہ و مناظرہ کے لئے وقف کر رکھا تھا اور مختلف مناظرے دوسرے تمام ادیان و مذاہب کے علماء سے انجام دیتے تھے
    • امير المۆمنين حضرت علي (ع) شيخ مفيد کے مقتديٰ
    • شیخ مفید اس صفت کے مالک تھے کہ لوگوں کے اعتماد کو اپنے اعمال و اخلاق سے متاٴثر کرلیں ، یہاں تک کہ دوست و دشمن سبھی آپ کی تعریف و تحسین کرتے تھے ، یہ فضیلت آپ کو معصومین علیہم السلام کی اقتدا سے حاصل ہوئی تھی ۔
    • شيخ مفيد کون ہيں ؟
    • شیخ مفید ایک عام جوان تھے کہ آپ کے والد بزرگوار تل عکبری میں ( جو کہ بغداد سے دس فرسخ کے فاصلہ پر واقع ہے ) درس دیتے ، اور اسی وجہ سے آپ کو لوگ ” ابن المعلم “ کہتے تھے
    • شيخ مفيد کا مرتبہ
    • حضرت امام زمانہ (عج) نے غیبت صغریٰ کے زمانے میں اسی طرح غیبت کبریٰ میں بھی بہت سے خطوط و توقیعات شیعوں اور بزرگان شیعہ کے لئے تحریر فرمائی ہیں ، اسی طرح حضرت (عج) اپنے نمائندوں کو خطوط تحریر فرماتے تھے
    • شيخ مفيد کا سچا خواب
    • شیخ مفید نے خواب دیکھا کہ آپ بغداد کی مسجدِ کرخ میں بیٹھے ہیں کہ اتنے میں سیدہ فاطمةالزھراء سلام اللہ علیہا امام حسن اور امام حسین علیہما السلام کے ہاتھ پکڑ کر مسجد میں تشریف فرما ہوئیں
    • شيخ مفيد کي جلاوطني اور گرفتاري
    • مختصر طور پر ہم یہ کہہ سکتے ہیں کہ اس دور میں شیعوں کو حاصل ہونے والی آزادی زیادہ پائیدار نہ تھی کیونکہ عضدالدولہ کے دور میں اور اس کے دور حکومت کے بعد شیعہ و سنی فسادات کی وجہ سے متعدد بار شیخ مفید کو گرفتار کیا گیا اور بعد میں جلاوطن کر دیا گیا ۔
    • حضرت شيخ مفيد کے اساتذہ اور شاگرد
    • ایک بڑے محدث جناب حاجی مرزا حسین نوری نے اپنی ایک کتاب خاتمه مستدرك الوسایل میں شیخ مفید کے تقریبا پچاس اساتذہ کا ذکر کیا ہے اور نئی چھپنے والی کتاب کے مقدمہ میں یہ تعداد 59 تک پہنچی ہے ۔
    • شيخ مفيد کي تأليفات
    • حضرت شیخ مفید اپنے زمانے کے ایک ذہین ، فطین اور قابل عالم تھے اور ان کی قابلیت کے چرچے خاص و عام کی زبان سے سنے جا سکتے تھے ۔
    • شيخ مفيد شيعہ دانشمندوں کي نظر ميں
    • شیخ الطایفه نے اپنی تصانیف میں شیخ مفید کی عظمت کا ذکر کیا ہے ۔ اپنی ایک تصنیف میں لکھتے ہیں کہ محمد بن محمد بن نعمان ایک عظیم اور قابل اعتبار دانشمند ہیں
    • شيخ مفيد سے پہلے شيعوں کي حالت
    • اس عظیم شخصیت کو بہتر طور پر جاننے کے لیۓ ضروری ہے کہ ہم پہلے یہ جاننے کی کوشش کریں کہ شیخ مفید کا دور شروع ہونے سے پہلے اھل تشیع لوگوں کی عام حالت کیا تھی
    • شيعوں کا ايک عظيم ستارہ
    • ہمارے شیعہ معاشرے میں بہت سارے عظیم مفکر اور صاحب علم لوگ گزرے ہیں جو آج بھی ہمارے لیۓ سرمایۂ افتخار ہیں
    • انيس المختار بن الحسن بن عبدون بن سعدون بن بطلان
    • ان کا پورا نام انیس المختار بن الحسن بن عبدون بن سعدون بن بطلان ہے، اہلِ بغداد کے مشہور طبیب گزرے ہیں، ابی الفرج بن الطیب کے شاگرد تھے اور مشہور طبیب ابا الحسن ثابت بن ابراہیم بن زہرون الحرانی کے ساتھ رہے
    • اھل معنويت و معرفت
    • وہ دوران جوانی سے ہی تقوی کرنے والے انسان تھے اور اھل معرفت افراد کی نشستوں میں شرکت کیا کرتے تھے ۔
    • قائد شہید علامہ عارف حسین الحسینی (دوسرا حصّہ)
    • امام اور امّت کے درمیان عشق و محبّت کا یہ سفر ہزاروں شہیدوں کے لہو کی روشنی میں کئی زینے طے کر چکا تھا کہ 7جون 1989 ء کا وہ تاریخی دن آ گیا جس دن چشمِ ہستی نے عشق و محبت کے ایسے مناظر دیکھے جو پہلے کبھی نہ دیکھے تھے۔
    • بصیرت قائد شھید علامہ عارف حُسین الحسینی
    • شہید قائد نے ضیاء الحق کی آمریکی جی حضوری کی بناء پر آخری دم تک اسکی بار بار کی ملاقات کی خواہش کے باوجود اس سے ملاقات نہ کی اور کھلم کھلا اس کی اسلام دوستی کی مکارانہ سازش سے لوگوں کو آگاہ کرتے رہے آخر کار حکومت نے اعلان کر دیا ہے
    • علامہ طبرسی فقاہت كی منزل میں
    • علم فقہ جو كتاب و سنت، اجماع و عقل جیسے مدارك سے احكام كے استنباط كے فن كا نام ھے شیخ كے ان ایسے دقیق علوم میں سے تھے جن میں آپ صاحب نظر تھے ۔
    • علامہ طبرسی کی ثمر بخش ھجرت (حصّہ دوّم)
    • علامہ طبرسی نے تفسیر كبیر كے نام سے مشہور مجمع البیان كی تاٴلیف كے بعد جار اللہ زمخشری كی كتاب تفسیر كشاف كو ملاحظہ كیا اور اس كی جذابیت اور فنكاریوں كو دیكھتے ھوئے اس كی تلخیص كا تہیّہ كرلیا
    • علامہ طبرسی کی ثمر بخش ھجرت
    • امین الاسلام طبرسی تقریباً ۵۴ سال تك مشہد مقدس میں مقیم رھے اور اس كے بعد سبزوار كے عمائدین كی دعوت اور اس شہر میں ایسے وسائل كی فراوانی كی بنا پر جو اس شہر میں موجود تھے
    • علامہ طبرسی
    • علامہ بزرگوار امین الاسلام ابو الفضل بن حسن طبرسی ایسے نادر علماء میں سے ہیں جو اگرچہ تمام رائج الوقت علوم میں ماہر تھے لیكن علم تفسیر میں آپ كے مقام و مرتبہ نے آپ كے تمام علمی گوشوں كو تحت الشعاع میں پہونچاتے ہوئے
    • غروب خورشید
    • آخر كار شیخ صدوق رحمة اللہ علیہ نے اسلامی علوم اور ثقافت كے سلسلہ میں انتھك محنت اور تحقیق و تفحص پر اپنی عمر نثار كركے ۷۵ برس كی زندگی كے ساتھ 381 میں اپنے پروردگار كی دعوت پر لبیك كھتے ھوئے اس كی لامحدود رحمت كے سائے میں آرام فرما ھوگئے ۔
    • شیخ صدوق كے شاگرد
    • شیخ صدوق نے یہ بات اچھی طرح درك كرلی تھی كہ اقوال معصومین علیھم السلام كہ جو كسی بھی زمانے میں خائنوں كی تحریف و خراب كاری كی زد میں ا ٓسكتے ھیں
    • شیخ صدوق دوسروں كی نظر میں
    • شیخ صدوق كی عظمت كا یہ عالم ھے كہ شیعہ اور سنی دونوں فرقہ كے علماء جب بھی آپ كے نام تك پھونچے تو آپ كی مدح و ثناء كرنے لگے اور آپ كی عظمت كا كلمہ پڑھا اور بلند و طویل القاب اور پرمعنیٰ عبارتوں كے ساتھ آپ كا نام لیا ھے