• صارفین کی تعداد :
  • 3383
  • 5/19/2012
  • تاريخ :

اشاعت اسلام کے مرکزي ايشيا پر اثرات ( حصّہ دوازدھم )

بسم الله الرحمن ارحيم

ترازيوں کي حکومت کي اصلي سياست ہر علاقہ کے اعتبار سے الگ الگ تھي، ليکن مجموعي طور پر ان کي سياست يہ تھي کہ حاکم طبقہ جو روسي بادشاہت کا خطرنادشمن سمجھا جاتا تھا بالکل نابود ہوجائے، اس کے بعد روسيوں نے فئوڈال عمارتوں کو مسمار کرديا اور ان کو ان کے حقوق سے محروم کرديا، پھر ان کے اموال اور خراج کو ہڑپ کرليا

يہاں پر مسلمان مختلف پہلوؤ ں ميں ايک خاص علامت سے پہچانے جاتے تھے ، ترازي حکومت، ترکستان ميں اسلام کو اپنا خطرناکترين دشمن سمجھتي تھي، کيونکہ روسيوں نے مسلمانوں کي کئي شورشوں کاتجربہ کررکھا تھا کہ جن کي ہدايت، مسلمان مذہبي رہنماؤ ں کے ہاتھ ميں تھي جس طرح روسي لوگ، قوي جنگجو فوج کے ذريعہ اپني حکومت کے مضبوط کرنے ميں کامياب ہوئے اسي طرح مسلمانوں کے ايک فرقے نے اپني روايتي تعليم کي اصلاح کرنے کي طرف توجّہ دي تاکہ انساني قوّت کو روس کے ساتھ مقابلہ کے لئے آمادہ کريں اس فرقہ کا رہبر اسماعيل بيگ کا سپرينسکي تھا نئي فکروں کے ايجاد کرنے والوں کي تحريک نے، روايتي افراد کي مقاومت کے باوجود کہ جو روسي مستعمرات کے ادارہ کي ہر طرح کي اصلاحات کا مقابلہ کرتي تھي، ملي گرا نوخواہوں کي دوبارہ بيداري کے لئے اور روسي سازي کي سياست کے خلاف بہت بلند اور کامياب اقدامات کيے اور عيسائيوں کے مقابلے ميں مسلمانوں کي ديني تبليغ ميں مدد کي

اسي طرح مسلمانوں کا ايک گروہ نئے متفکرين کے پرچم کے سايہ ميں آگيا، روسي مسلمانوں کي پہلي کانگريس 15/اگست 1905 کو نيژني شہر ميں تشکيل پائي، اسماعيل بيگ کا سپرينسکي اس کانگريس کا صدر تھا-

روسي مسلمانوں کے متحدہ محاذ کا اصلي موضوع روسي مسلمانوں کو ايک پليٹ فارم پر جمع کرنا اور ايک ايسي حکومت کي مانگ تھا جس ميں تمام اقوام حصّے دار ہوں، دوسري کانگريس 13/سے 23/جولائي 1906ء کو ”‌سن پترزبورگ“ کے شہر ميں بنائي گئي يہ دونوں کانگريس غير قانوني تھيں، ليکن ان ک پورے ملک ميں پھيل جانے کي وجہ سے حکومت نے نہ فقط ان کے اوپر پابندي لگانے کا اقدام کيا بلکہ ان کي دوسري نشستوں کو برپا کرنے کي بھي اجازت ديدي-