• صارفین کی تعداد :
  • 1924
  • 3/17/2012
  • تاريخ :

اشاعت اسلام کے مرکزي ايشيا پر اثرات ( حصّہ دوّم )

بسم الله الرحمن الرحیم

 آج ہم جس تاريخ کو پڑھتے ہيں وہ عموماً مغربي موءرخوں اور مصنفوں کے خيالات اور اصطلاحات پر مشتمل ہوتي ہے- يورپ جس کي ذہني ترقي اور علمي و فکري بلندي کي تاريخ مسلمانوں کے زير اثر چند سو سال پہلے شروع ہوئي اور جس کا نقطہء آغاز انقلابِ فرانس يا اقتصادي انقلاب کہا جا سکتا ہے- اس سے قبل کي تاريخ کو اہل يورپ تاريک دور (Dark Age)  يا  ازمنہء وسطي (Middle Ages) سے ياد کرتے ہيں جب کہ حقيقت يہ ہے کہ اسلام کي آمد سے قبل يہ تاريکي عالم گير تھي، ليکن ساتويں صدي کي ابتداء ميں جب جزيرہ نمائے عرب ميں آفتابِ اسلام طلوع ہوا ، اس کي روشني (صرف ساتويں صدي) کے اخير تک ايشيا و افريقہ کے ايک بڑے حصے کو منور کرچکي تھي- يہ تاريکي صرف يورپ ميں چھائي ہوئي تھي اور مسلم اسپين و قبرص و سسلي کے استثناء کے ساتھ يہ تاريکي وہاں مسلسل بعد کي کئي صديوں تک چھائي رہي - عين اس وقت جب يورپ تاريک دور کي اندھيريوں ميں گم تھا، اسلامي تہذيب و تمدن کا آفتاب نصف النہار پر تھا اور وہ زمانہ تاريخِ عالم کي مذہبي، سياسي، علمي و فکري تاريخ کا روشن ترين زمانہ تھا- مشہور مغربي مفکر برٹرينڈ رسل (Bertrand Russel) نے لکھا ہے کہ 699عيسوي سے 1000عيسوي تک کے زمانے کو تاريک دور کہنے کي ہماري اصطلاح مغربي يورپ پر ناجائز ترکيز کي علامت ہے- اس وقت ہندوستان سے اسپين تک اسلام کي شاندار تہذيب پھيلي ہوئي تھي- اس وقت عالمِ عيسائيت کو جو کچھ دستياب نہيں تھا وہ اس تہذيب کو دستياب تھا- ہميں محسوس ہوتا ہے کہ مغربي يورپ کي تہذيب ہي تہذيب ہے، ليکن يہ ايک تنگ خيال ہے- (History of Western Philosophy,’ London, 1948, p. 419)

اسلام کا مذہبي وروحاني انقلاب

  ظہورِ اسلام سے قبل دنيا کي مذہبي حالت نہايت خستہ تھي- عرب اس وقت کي آباد دنيا کے وسط ميں واقع تھا- وہاں کفر و شرک اور جہالت و لاقانونيت کا دور دورہ تھا- قتل و غارت گري، ظلم و ناانصافي کا راج تھا - عرب ميں ايک دو نہيں، ہزاروں بت تھے- صرف خانہء کعبہ ميں 360 بت تھے اور ہر ہر گھر کا بت الگ تھا، يہي نہيں؛ بلکہ معبودوں کي فہرست ميں جنوں، فرشتوں اور ستاروں کا بھي نام تھا- کہيں کہيں آفتاب پرستي بھي رائج تھي-