• صارفین کی تعداد :
  • 1593
  • 3/17/2012
  • تاريخ :

اشاعت اسلام کے مرکزي ايشيا پر اثرات

بسم الله الرحمن الرحیم

اسلام کي آمد سے قبل اس دنيا ميں جہالت کے بادل چھاۓ ہوۓ تھے - ہر طرف ظلم و جبر کا بازار گرم تھا اور معاشرے   ميں  انسان  بہت ہي ذلت کي زندگي گزارنے پر مجبور تھا  مگر اسلا م کي آمد کے بعد انساني معاشرے کو ايک نئي زندگي نصيب ہوئي اور يوں اس عظيم مذھب نے انساني تاريخ ميں تاريخ ساز تبديلياں پيدا کيں - اسلام نے دنيا کے مذہبي و سياسي، علمي و فکري اور اخلاقي و معاشرتي حلقوں ميں نہايت پاکيزہ اور دوررس انقلاب کي قيادت کي ہے- زندگي کا کوئي ايسا گوشہ نہيں جہاں تک آفتابِ اسلامي کي کرنيں نہ پہنچي ہوں- قافلہء انسانيت، اسلام کي آمد سے پہلے ايک بھيانک اور تباہ کن رخ کي طرف محوِ سفر تھا- مجموعي طور پر پوري دنيا کي مذہبي، اخلاقي، معاشرتي، سياسي اور علمي حالت نہايت ابتر تھي- اسلام کي دل گير صداؤ ں نے اسے ايک روح پرور، حيات بخش اور امن آفريں منزل کي طرف رواں دواں کرديا- کرہء ارضي مذہبي بے راہ روي، اخلاقي انارکي، سياسي پستي، طبقاتي کشمکش، علمي و فکري تنزلي اور معاشرتي لاقانونيت کے اس آخري نقطے پر پہنچ چکا تھا جس کے آگے سراسر ہلاکت، شر و فساد اور ہمہ گير تباہي کي حکم راني تھي- اسلام نے دنيا کو اس مہيب صورتِ حال سے نکال کر سرخ روئي اور سرفرازي عطا کي-

          اسلام سے پہلے اور بعد کي عالمي تاريخ کا اگر تقابلي جائزہ ليا جائے تو بہت واضح طور پر محسوس ہوگا کہ اسلام کا ظہور تاريخ عالم کا سب سے زيادہ صالح انقلاب ثابت ہوا ہے- يہ بات بلاخوفِ ترديد کہي جا سکتي ہے کہ اس عالمِ رنگ و بو ميں بپا ہونے والا ہر انقلاب اسلامي انقلاب کا براہِ راست يا بالواسطہ نتيجہ ہے- اسلام سے پہلے اور اسلام کے بعد کي انساني دنيا بالکل مختلف ہے- زمانے کے ان دونوں ادوار کے مابين اسلام ايک واضح نشان امتياز محسوس ہوتا ہے- اسلام کے بعد کي دنيا ميں انساني زندگي کا ہر پہلو خوشگوار اسلامي انقلاب کي بادِ بہاري سے مہک اٹھا ہے- خواہ وہ مذہبي و سياسي پہلو ہو يا اخلاقي و معاشرتي ہو يا علمي و سائنسي - قرآن کريم نے اپنے بليغ اور جامع پيرائے ميں اس کو  من الظلمات الي النور (تاريکي سے روشني کي طرف سے) سے تعبير کيا ہے- (ديکھيے سورۃ البقرۃ257:1، سورۃ المائدۃ 16:5 ، سورۃ ابراہيم 1:14، سورۃ الحديد 9: 57)