• صارفین کی تعداد :
  • 3370
  • 11/3/2011
  • تاريخ :

تا روں بھري رات

تا روں بھری رات

تاروں  بھري  رات سو  رہي  ہے

نوراني   سمے   بکھر  رہے  ہيں

خوشبو ہے بسي ہوئي ہوا ميں

شاخوں کو ہوا  جگا  رہي   ہے

کرنيں  برسا  رہے  ہيں  تارے

پھولوں  پہ  بہار  آ رہي    ہے

ہر سمت مہک رہي ہيں کلياں

پھيلا  ہوا  نور  کا  سماں   ہے

جنت  کي  ہوائيں آرہي ہيں

پودے جو ہوا سے ہل رہے ہيں

منہ پھولوں کا اوس دھونے آئي

دنيا  خاموش  ہو  رہي   ہے

دھند لے سائے  ابھر رہے  ہيں

اور نور گھلا ہوا فضا ميں

جو چھاؤ ں ہے تھرتھرا رہي ہے

چاندي سي بہا رہے ہيں تارے

اور  چاند ني  لہلہا  رہي  ہے

خوابوںميں بہک رہي ہيں کلياں

نکھرا  ہوا  نيلا  آسماں  ہے

خوابوں کے ترانے گا رہي ہيں

ہر شا خ ميں پھول کھل رہے ہيں

اختر  چلو  صبح  ہونے  آئي

شاعر کا نام : اختر شیرانی

پيشکش : شعبۂ تحرير و پيشکش تبيان


متعلقہ تحريريں:

رات

خدا کي تعريف

بڑي بات ہے

کارنامہ

بہار آئي